اے ایس ایف کے تینوں شہید اہلکار آبائی علاقوں میں اعزاز کیساتھ سپرد خاک

اے ایس ایف کے تینوں شہید اہلکار آبائی علاقوں میں اعزاز کیساتھ سپرد خاک

ملتان، میاں چنوں، صادق آباد (نمائندہ پاکستان، نمائندہ خصوصی ، تحصیل رپورٹر) کراچی ائیرپورٹ پر دہشت گردوں کے حملہ میں شہید ہو نیوالے ائیر پورٹ سیکورٹی فورس کے تینوں ملازمین کوانکے آبائی علاقوں میں پورے اعزاز کے ساتھ سپرد خاک کردیا گیا۔دہشت گردوں کے ہاتھوں شہید ہونیوالے ملتان کے رہائشی اے ایس ایف کے اے ایس آئی رانا اسلام الدین کی نمازجنازہ گزشتہ روز جی پی او ملتان میں ادا کی گئی۔ جس میں اے ایس ایف کے اعلیٰ افسران سمیت عمائدین شہر نے شرکت کی۔ نمازجنازہ کے بعد گارڈ آف آنرپیش کیاگیا۔ مرحوم کو حسن پروانہ قبرستان میں دفن کیاگیا ہے۔ رانا اسلام الدین کی عمر55سال تھی جبکہ7ماہ قبل ترقی دیکر اسے ایس آئی کے عہدہ پر ترقی دی گئی۔5سال قبل کراچی ایئرپورٹ پر تعینات کیا گیا۔ ریٹائرمنٹ میں5سال رہ گئے تھے ۔ مرحوم نے سوگواران میں بیوہ ، ایک بیٹا اور ایک بیٹی چھوڑے ہیں۔ مرحوم اسلام الدین اپنے خاندان کے آخری چشم وچراغ رہ گئے تھے۔ دوبڑے بھائی امام دین اور اکرم دین کچھ عرصہ قبل انتقال کرگئے تھے۔ اکلوتی بہن کے خاوند فیصل نے کہاکہ رانا اسلام الدین پرفخرہے ۔ شہید اسلام الدین کے بیٹے ارسلان نے کہاکہ ہمیں عید کی چھٹیوں کا بڑا بے چینی سے انتظار تھاکیونکہ عید پر ابو ہمارے لئے نئے کپڑے، جوتے اور چھٹیوں میں ہماری فرمائشیں پوری کرتے تھے اور والد کی شہادت سے ناقابل بیان نقصان ہوا۔علاوہ ازیں محسن وال کے رہائشی ائیرپورٹ سیکیورٹی فورس کے ڈرائیور محمد حیات کی نماز جنازہ گزشتہ روز محسن وال ہائی سکول میں ادا کی گئی ۔جس میں اسسٹنٹ ڈائریکٹر اے ایف ایس ملتان محمد یسٰین کھیڑاسمیت معزین علاقہ کی کثیر تعداد نے شرکت کی اور ڈائریکٹرجنرل اے ایف ایس اعظم ٹوانہ کی طرف سے مرحوم کی قبر پر پھولوں کی چادر چڑھائی اور اے ایس ایف اہلکاروں کی طرف سے مرحوم کو سلامی پیش کی گئی، جنازے میں ہزاروں کی تعداد میں لوگوں نے شرکت مگر سیاسی شخصیات کی جانب سے کسی مقامی ایم این اے یا ایم پی اے نے شرکت نہ کی، شہیدنے پسما ند گان میں ایک بیوہ اور 2سالہ بیٹا اجمل سو گوار چھوڑے ہیں۔ شہید کو محسن وال 134 سولہ ایل کے آ بائی قبرستان میں سپرد خاک کر دیا گیا شہید محمد حیات کے والد رمضان گگڑانہ سیال اور بھائی عمر حیات نے کہا کہ محمد حیات کی شہادت پر فخر ہے۔دریں اثناء صادق آباد کے رہائشی ائیرپورٹ سیکورٹی فورس کے اے ایس آئی عبدالمالک شہید کی نماز جنازہ گزشتہ روز جناح سپورٹس کمپلیکس صادق آبا دکے گراؤنڈ میں ادا کی گئی‘ جس میں نماز جنازہ میں ضلع رحیم یارخان سے تعلق رکھنے والے کسی رکن قومی و صوبائی اسمبلی ‘ڈی سی اورحیم یارخان‘ ڈی پی اورحیم یارخان او ر اہم شخصیات میں کسی نے بھی شرکت نہیں کی جس پر صادق آباد کے شہریوں نے تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہاکہ پاک وطن کیلئے اپنی جان کا نذرانہ پیش کرنیوالے شہید عبدالمالک کی نماز جنازہ میں اہم شخصیات نے شرکت نہ کر کے بے حسی کا ثبوت دیا ہے جس سے ورثاء اور شہریوں میں غم و غصہ پایاجارہا ہے ۔نماز جنازہ میں اسسٹنٹ کمشنر صادق آباد چوہدری فاروق قمر کمبوہ‘ ائیرپور ٹ سیکورٹی سکھر کے ڈپٹی ڈائریکٹر ملک عشرت جاوید‘ اے ایس ایف کے آفیسران قمبر علی ‘ علی رضا شاہ‘ محمد تنویر‘ ڈاکٹرطالوت سلیم باجوہ، فاروق احمد سندھو، خاور باجوہ سمیت ہر مکتبہ فکر سے تعلق رکھنے والے ہزاروں افراد نے شرکت کی، نماز جنازہ مفتی ابراہیم نے پڑھائی ‘عبدالمالک شہید کے جسد خاکی کو انکے آبائی گاؤں چک نمبر 156پی کے قبرستان میں سپرد خاک کر دیا گیا ۔ عبدالمالک شہید کی چند ماہ قبل ہی اے ایس آئی کے عہدہ پر ترقی ہوئی تھی، شہید نے پسماندگان میں ایک بیوہ ‘دو بیٹے اور دو بیٹیاں چھوڑی ہیں، ایک بیٹا حافظ قرآن ہے جبکہ عبدالمالک شہید کے پانچ بھائی اور ایک بہن ہے، بڑابھائی محمد فاضل بھی لاہور ائیرپورٹ پر اے ایس ایف میں اپنے فرائض سر انجام دے رہا ہے ۔

مزید : صفحہ آخر