سروسیز ہسپتال گارڈوں نے نوجوان کو تشدد کا نشانہ بنا ڈالا ہاتھ کی نسیں اور پٹھے کاٹ ڈالے

سروسیز ہسپتال گارڈوں نے نوجوان کو تشدد کا نشانہ بنا ڈالا ہاتھ کی نسیں اور ...
سروسیز ہسپتال گارڈوں نے نوجوان کو تشدد کا نشانہ بنا ڈالا ہاتھ کی نسیں اور پٹھے کاٹ ڈالے

  

                                   لاہور(بلال چودھری)سروسز ہسپتال میں خواتین کا چیک اپ کروانے کےلئے آئے ہوئے نوجوان کو ہسپتال گارڈز نے شدید تشدد کا نشانہ بنا ڈالا،شیشے کے وار کر کے نوجوان کے دائیں ہاتھ کی نسیں اور پٹھے مکمل طور پر کاٹ دیئے گئے۔۔ذرائع کے مطابق ایف سی کالج کرسچین کالونی کا رہائشی نعیم گل اپنی والدہ ارشاد بیگم اور بہن انیلہ کے ہمراہ سروسز ہسپتال گائنی وارڈ میں ان کا چیک اپ کروانے کے لئے آیاکہ وہاں پر اس کا سیکیورٹی گارڈز کے ساتھ جھگڑا ہو گیا۔نعیم گل نے "پاکستان "سے گفتگو کرتے ہوئے بتایا کہ وہ اپنی ماں اور بہن کے ساتھ پارکنگ میںگاڑی کھڑی کر رہا تھا کہ اس کی بہن کے ساتھ وہاں کے ایک سکیورٹی گارڈ نے بدتمیزی کی، جب میں انے اس کو روکا تو اس نے مجھ سے بیہودہ زبان میں گفتگو کرنا شروع کردی اور اپنے دیگر ساتھیوں کو بلا کر مار پیٹ پر اتر آیا۔نعیم کے والد عاشق گل اور بھائی انیس گل نے بتایا کہ نعیم سیلز مین ہے اور اپنی والدہ اور بہن کا چیک اپ کروانے آیا تھا،جہاں 6 گارڈز نے اس کو شدید تشدد کا نشانہ بنا ڈالا۔ لڑائی کے دوران سیکیورٹی گارڈز نے ٹوٹے ہوئے شیشے کے ٹکڑوں کے وار کر کے اس کے دائیں ہاتھ کو بری طرح زخمی کر دیا،ہاتھ کی نسیں اور پٹھے کٹ جانے کی وجہ سے ڈاکٹروں نے اس کا آپریشن کرنے کا فیصلہ کیا ہے ،ا گرآپریشن کامیاب نہ ہوسکا تو وہ اپنے ہاتھ کو ہلانے سے قاصر ہو جائے گا۔متاثرہ نوجوان کے دوست خرم،شان اور جمیل نے کہا کہ نعیم ایک ہنس مکھ نوجوان ہے لیکن اپنی ماں اور بہن کی عزت کی حفاظت کرنا اس کا جرم بن گیا ہے۔اعلیٰ حکام سے اپیل ہے کہ وہ اس واقعہ کا نوٹس لیں کیونکہ ہسپتال انتظامیہ سیکیورٹی گارڈز کا ساتھ دے رہی ہے۔اس کے علاوہ آپریشن کا خرچہ بھی ہمیں کرنا پڑ رہا ہے جو کہ ہم جیسے غریبوں کے لیئے نہایت مشکل ہے۔

 

مزید : علاقائی