پولیس وردیوں میں ملبوس 5 ڈاکوﺅں کا گروہ لوگوں کو لوٹنے میں مصروف

پولیس وردیوں میں ملبوس 5 ڈاکوﺅں کا گروہ لوگوں کو لوٹنے میں مصروف

                            لاہور(شعیب بھٹی )شہر لاہور میں 5افراد پر مشتمل "پولیس وردیوں میں ملبوس ڈاکوﺅں" کا گروہ سرگرم ہوگیا ہے جو مختلف جگہوں پر ناکے لگا کر شہریوں سے زندگی بھر کی جمع پونجی لوٹنے میں مصروف ہے لیکن پولیس نے رواےتی بے حسی کا مظاہرہ کرتے ہوئے متاثرین کا مقدمہ درج کرنے کی بجائے ٹال مٹول سے کام لینا معمول بنا لیا ہے جس کے باعث شہری مقدمات کے اندارج کے لئے تھانوں کے دھکے کھانے پر مجبور ہیں۔تفصےلا ت کے مطا بق صوبائی دارالحکومت میں مختلف تھا نو ں کی حدو د میں پولیس کی وردی میں ملبوس گروہ گاڑیوں کو روکتا ہے جس کے فوری بعد قریب کھڑے ان کے دیگر ڈاکو ساتھی بھی پہنچ جاتے ہیں، ان میں سے 3باہر کھڑے رہتے ہیں جبکہ ایک ساتھی گاڑی میں سوار ہو کر گن پوائنٹ پر لوٹ مار کرنے میں مصروف ہوجاتا ہے ۔واضح رہے کہ 3 رو ز قبل ا یئر پو رٹ کے قر ےب بھی مذکورہ گروہ کے ارکان نے سعودی پلٹ 2افراد اشرف اور عمران سے 85ہزار ریال لوٹ لیے تھے، اسکے علاوہ ڈاکوﺅں نے 2بریف کیس ،5تولے سونا و دیگر قیمتی اشیاءلوٹ لی تھیں تاہم پولیس نے صرف 10لاکھ کی نقدی و دیگر اشیاءلوٹنے کا مقدمہ درج کرلیا،اسکے ساتھ ساتھ مذکورہ گروہ کے ارکان نے شہر بھر میں متعدد شہریوں سے لوٹ مار کا سلسلہ شروع کررکھا ہے ۔اس حوالے سے متاثرہ افراد کا کہنا ہے کہ پولیس ڈاکوﺅں کوپکڑنے کی بجائے لٹنے والے شہریوں کو تھانوں کے چکر لگوانے میں مصروف عمل ہے اور مقدمات درج کرنے میں بھی لیت ولعل سے کام لے رہی ہے۔مذکورہ ڈاکوﺅں کا گروہ ا چھر ہ پےر غا زی رو ڈ ، سمن آ با د دو سر ا گو ل چکر ، شما لی چھا ﺅنی، مر غی خا نہ چو ک ، نو اں کو ٹ ےتےم خا نہ چو ک ، دا تا در با ر ، لو ئر ما ل ، بھا ٹی ، مو چی گےٹ ، شا ہد ر ہ ، لٹن رو ڈ ، انا ر کلی ہنجروا ل ، چو ہنگ ،و غےر ہ میں واردتیں کرنے میں مصروف ہے لیکن پولیس ان کے خلاف کارروائی کرنے کی بجائے خاموش تماشائی بنی ہوئی ہے ۔اس حو الے سے تر جما ن ڈ ی آ ئی جی آپریشنزنے بتا ےا کہ ر نگ رو ڈ پو لےس سمےت تما م ڈوےژنوں کے اےس پیز کو ہدایات جاری کر دی ہیں کہ گشت کو یقینی بناتے ہوئے ناکوں پر سختی کی جائے اور تمام مشکوک افراد پر نظر رکھی جائے اورپولیس کی وردی میں ملبوس ڈاکوو¿ں کو پکڑ کر کٹہرے میں لایا جائے تا کہ شہر ےو ں کی جا ن وما ل کو تحفظ کو ےقےنی بنا ےا جا ئے ۔

 

مزید : علاقائی