ملک میں ہائی الرٹ،سویلین حساس ادارے کے چیف افسران کے ہمراہ موسیقی سے لطف اندوز ہوتے رہے

ملک میں ہائی الرٹ،سویلین حساس ادارے کے چیف افسران کے ہمراہ موسیقی سے لطف ...

اسلام آباد(خصوصی رپورٹ)آپ نے اکثر ایک محاورہ سنا ہوگا کہ روم جل رہا تھا اور ’نیرو‘ چین کی بانسری بجا رہا تھا۔ تاریخ کا یہ محاورہ اور کسی پر ٹھیک بیٹھے یا نہ بیٹھے لیکن پاکستان کے سویلین حساس ادارے کے اعلیٰ عہدیداران پر مکمل فٹ بیٹھتا ہے۔ گذشتہ دو روز سے ملک میں ہائی الرٹ ہے۔ وزیر اعظم، آرمی چیف اور تمام ادارے اس وقت سر جوڑ کر بیٹھے ہیں اور اس بات پر توجہ دی جارہی ہے کہ کس طرح آنے والے دنوں میں بہتر حکمت عملی کے ذریعے اس طرح کے واقعات سے بچا جاسکے۔وزیر اعظم نے انٹیلی جینس اداروں کی بہتر کوآرڈینیشن اور انٹیلی جینس شیرنگ پر زور دیا ہے۔باوثوق ذرائع کے مطابق ملکی حالات کو دیکھتے ہوئے تمام انٹیلی جینس اداروں کی توجہ ملک کی نازک صورت حال پر ہونی چاہئے لیکن آپ کو جان کر حیرت ہوگی کہ تمام ہائی الرٹس کے باوجود ہمارے ایک سویلین حساس ادارے کے چیف دیگر سینئرافسران کے ساتھ اسلام آباد میں اپنے ہی ادارے کی ایک ہاؤسنگ سوسائٹی (گلبرگ گرینزاسلام آباد)کے ’پل‘ کی افتتاحی تقریب میں شرکت کر رہے ہیں جبکہ تمام ادارے کی مشینری اس پروگرام کو کامیاب بنانے میں مصروف ہے، یہی نہیں بلکہ اس افتتاحی تقریب میں موسیقی کی پر سرور محفل کا بھی انعقاد کیا گیا ہے تاکہ پر تکلف کھانے کے بعد افسران پوری طرح سے موسیقی سے لطف اندوز ہو سکیں۔ایک انتہائی اہم ذریعہ نے بتایا کہ جب ملک پہلے سے ہی حالت جنگ میں ہے اور اندرونی اور بیرونی خطرات سر پر منڈلا رہے ہیں تو ایسے حالات میں اسطرح کی محفل کو دیکھ کر گمان ہوتا ہے کہ ملک میں ہر طرف امن و آشتی ہے،اور کوئی کام ہی نہیں ،صرف یہی ’اہم ‘کام ہے جو اگر صحیح طریقے سے سرانجام نہ دیا گیا تو ملک کی سالمیت خطرے میں پڑ سکتی ہے۔ذرائع کا کہنا ہے کہ اگر سویلین حساس ادارے کے لوگ اپنے کام کی طرف توجہ دینے کی بجائے ہاؤسنگ سوسائٹی کی تقریبات کوکامیاب بنانے کے چکروں میں پڑے رہیں گے تو مستقبل میں کراچی ائیرپورٹ جیسے حملے بھی ہوتے رہیں گے۔

مزید : صفحہ اول