داعش کیخلاف جنگ ‘امریکہ کا مزید 400 ٹرینر عراق بھیجنے کا فیصلہ

داعش کیخلاف جنگ ‘امریکہ کا مزید 400 ٹرینر عراق بھیجنے کا فیصلہ

واشنگٹن (اظہر زمان، بیوروچیف) امریکہ نے عراقی صوبے عنبر میں نیا فوجی اڈہ قائم کرکے وہاں مزید 400 ٹرینر بھیجنے کا فیصلہ کیا ہے۔ وائٹ ہاؤس کی نیشنل سکیورٹی کونسل کے ترجمان السٹیئر بیسکی نے آج بدھ کے روز یہ اعلان کرتے ہوئے بتایا کہ ٹرینر کی تعداد بڑھانے کا مقصد داعش کے خلاف جنگ میں عراق فورسز کی عسکری صلاحیت میں اضافہ کرنا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ عنبر صوبے میں امریکی اڈہ قائم کرنے اور وہاں فوجی مشیر اور ٹرینر متعین کرنے سے رمادی کے شہر کو داعش کے جنگجوؤں سے واپس لینے میں مدد ملے گی۔ انہوں نے بتایا کہ اس وقت عراق کے مختلف اڈوں پر امریکی فوج کے ٹرینر کی تعداد 3100 ہے جو اس اضافے کے بعد 3500 ہو جائیگی۔ مبصرین کا کہنا ہے کہ صدر بارک اوبامہ نے حال ہی میں عراقی فورسز کی تربیت کیلئے پینٹاگون کی حکمت عملی کو نامکمل قرار دیتے ہوئے جو تنقید کی تھی اس کے بعد نیا اڈہ قائم کرنے اور مزید ٹرینر بھیجنے کا یہ اقدام اس حکمت عملی کو بہتر بنانے کا ایک سلسلہ ہے۔ معلوم ہوا ہے کہ پہلے عنبر صوبے کے مغربی شہر الاسد میں تربیتی کیمپ قائم تھا اور اب اسی صوبے میں حبانیہ شہر کے قریب نیا فوجی اڈہ بنایا جا رہا ہے۔ اس دوران چیئرمین جوائنٹ چیف آف سٹاف جنرل مارٹن ڈیمپسی نے میڈیا کو بتایا ہے کہ اوبامہ کی فوجی حکمت عملی میں کسی بنیادی تبدیلی کا منصوبہ زیر غور نہیں ہے جس کا مطلب یہ ہے کہ امریکی فوج عراق کی زمینی جنگ میں حصہ نہیں لے گی۔ انہوں نے مزید بتایا کہ عراق میں چار مختلف تربیتی مراکز میں عراقی فورسز کے 8920 ارکان کو پہلے ہی تربیت فراہم کی جاچکی ہے اور اس وقت 2600 ارکان کی تربیت کا سلسلہ جاری ہے۔

مزید : صفحہ آخر