جدہ میں فیشن شو میں خواتین کی جگہ ڈرونز کا استعمال

جدہ میں فیشن شو میں خواتین کی جگہ ڈرونز کا استعمال
جدہ میں فیشن شو میں خواتین کی جگہ ڈرونز کا استعمال

  

جدہ(مانیٹرنگ ڈیسک)تصور کریں کہ اگر فیشن شو میں ماڈلز کی جگہ ڈرونز کا استعمال کیا جانے لگے تو کیسا لگے گا؟گذشتہ دنوں سعودی عرب کے معروف شہر جدہ میں ایک ایسا ہی واقعہ پیش آیا۔جدہ میں منعقدہ ایک فیشن شو میں مختلف قسم کے ملبوسات کے لیے ماڈلز یا خواتین کی جگہ ڈرونز کا استعمال کیا گیا اور ڈرونز کے ذریعے ہی ملبوسات کی نمائش کی گئی۔لیکن بعض لوگوں کا خیال ہے کہ ڈرونز کے ذریعے ملبوسات کی پیشکش پرکشش ہونے کے بجائے ڈراؤنی تھی۔کمرے کے خلا میں ڈرونز کے ذریعے ادھر ادھر جھولتے یا گھومتے ملبوسات کا منظر کسی 'ہارر فلم' سے کم نہیں تھا۔ ایسا معلوم ہو رہا تھا کہ کوئی غیر مرئی قوت ان کپڑوں کے ساتھ کمرے میں چکر لگا رہی ہے۔فیشن شو کے منتظمین میں سے ایک نبیل اکبر نے بی بی سی عربی کے ساتھ ایک انٹرویو میں بڑے فخر سے کہا کہ 'کسی خلیجی ملک میں یہ اپنی قسم کا پہلا شو ہے۔'انھوں نے بتایا کہ اس کی تیاری میں دو ہفتے لگے۔ انھوں نے یہ بھی بتایا کہ ڈرونز کے ذریعے انہی ملبوسات کو پیش کیا گیا جو رمضان کے محترم بالشان مہینے کے شایان شان ہو۔سوشل میڈیا میں جہاں اس شو پر غصے کا اظہار کیا گیا وہیں اسے مذاق کا بھی نشانہ بنایا گیا۔چند لوگوں نے اس بات پر ناراضی ظاہر کی کہ سعودی عرب نے خواتین کو اتنا حق بھی نہیں دیا کہ وہ ان ملبوسات کے لیے ریمپ پر چل سکیں۔جبکہ بعض دوسرے ملبوسات کی نمائش کے لیے ڈرونز کے استعمال پر ہنستے اور اس کی نقل یا میم کرتے نظر آئے۔

سعودی ولی عہد محمد بن سلمان کے دور میں یہاں کے معاشرے میں بہت سے تبدیلیاں رونما ہو رہی ہیں۔گذشتہ دنوں سعودی عرب کی تاریخ میں پہلی بار شہر جدہ میں خواتین شائقین کو سٹیڈیم میں جا کر مردوں کے فٹبال میچز دیکھنے کا موقع ملا ہے۔اور اس کی تازہ مثال خواتین کو ڈرائیونگ کا حق ہے۔

مزید : کلچر