فیصل آباد میں تحریک انصاف کی ٹکٹوں کی تقسیم پر کارکنوں کے تحفظات

فیصل آباد میں تحریک انصاف کی ٹکٹوں کی تقسیم پر کارکنوں کے تحفظات

فیصل آباد(نامہ نگار خصوصی)الیکشن 2018ء کے لئے امیدواروں کو ٹکٹوں کی حالیہ تقسیم کے خلاف پی ٹی آئی کے فیصل آباد سے بہت سے اہم نظریاتی رہنماؤں اور کارکنوں نے میڈیا پر اپنے شدید تحفظات اور لائحہ عمل کا کھل کر اظہار شروع کر دیا ہے. خاص طور پر این اے 107‘ این اے 110‘ اور پی پی 110‘ پی پی 111میں امیدواروں کی نامزدگیوں کے خلاف زیادہ شدت دیکھنے میں آ رہی ہے. گذشتہ روز این اے 107سے پی ٹی آئی کے تین اہم امیدوار میاں علی سرفراز‘بریگیڈ (ر) ممتاز کاہلوں اور راجہ اسد ناصر پرویز نے مشترکہ طور پر ایک پریس کانفرنس کی جس میں سابق وفاقی وزیر داخلہ و سابق ایم این اے راجہ نادر پرویز بھی اپنے صاحبزادے راجہ اسد کی حمایت میں اور صوبائی امیدوار رانا مبشر اور علی شہزاد بھی موجود تھے۔ پریس کانفرنس کے ذریعے عمران خان سے اپیل کی گئی ہے کہ این اے 107سمیت جن حلقوں میں نظریاتی کارکنوں کو نظر انداز کیا گیا ہے ان کے بارے میں فیصلوں پر نظرثانی کی جائے اس پریس کانفرنس کے علاوہ ٹکٹوں سے محروم رہنے والے دیگر سات امیدوار حلیم اسلم ملک‘ ملک ارشد‘ سلیم انصاری ‘سلیم بی بی‘ عبداللہ کمال‘ آصف نقوی اور شہباز کسانہ نے بھی اپنا ایک الگ مشترکہ محاذ بنا کر اپنے باغیانہ مؤقف سے عمران خان اور جہانگیر ترین کو آگاہ کرنے کا فیصلہ کر لیا ہے. این اے 107 سے میاں علی سرفراز‘ سابق وفاقی وزیر اور سینئر سیاستدان میاں زاہد سرفراز کے صاحبزاد ہیں‘ اس موقع پر میاں علی سرفراز نے کہا کہ ہم عمران خان کا پیغام گھر گھر پہنچانے کیلئے تحریک انصاف میں شامل ہوئے تھے. ہم نے پی ٹی آئی کے لئے قربانیاں دیں‘ وقت دیا پیسہ دیا‘ خون دیا۔بریگیڈ (ر) ممتاز کاہوں نے بھی اسی مؤقف کو دوہراتے ہوئے کہا کہ حلقہ این اے 107 میں ایک شیخ کو ٹکٹ دے دیا گیا جن کا اس حلقہ سے کوئی تعلق نہیں ہے. انہوں نے کہا کہ ریکارڈ گواہ ہے کہ ن لیگ کے امیدوار حاجی اکرم انصاری کے مقابلے میں 2013ء کے الیکشن میں سب سے زیادہ ووٹ میں نے لئے تھے لیکن مجھے نہ جانے کیوں نظر انداز کر دیا گیا تیسرے امیدوار راجہ اسد ناصر نے کہا کہ ٹکٹوں کی تقسیم میں ناانصافی کی گئی ہے ہم حلقہ این اے 107‘ این اے 110اور این اے 111میں تمام پینل کو مسترد کرتے ہیں سابق وفاقی وزیر راجہ نادر پرویز نے کہا کہ میں سیاست کی بات کروں گا اور بہت کچھ سامنے لاؤں گا انہوں نے کہا کہ ہمیں کسی نے بتایا نہ پوچھا‘ زیادتی کی گئی‘تینوں امیدواروں نے عمران خان سے آخری بار اپیل کرتے ہوئے اپنے فیصلے پر نظرثانی کرنے کی اپیل کی. اس موقع پر میاں علی سرفراز نے مزید کہا کہ نواز شریف کہتا ہے مجھے کیوں نکالا اور ہم کہتے ہیں ’’ہمارے ساتھ ایسا کیوں کیا ‘‘۔

مزید : صفحہ اول