پنجاب ہیلتھ کیئر کمیشن کا آپریشن جاری، عطائیوں کے 3551اڈے بند

پنجاب ہیلتھ کیئر کمیشن کا آپریشن جاری، عطائیوں کے 3551اڈے بند

لاہور ((سٹی رپورٹر))سپریم کورٹ کی احکامات کی تعمیل میں پنجاب ہیلتھ کیئر کمیشن نے فیصلے سے اب تک پنجاب بھر میں 3,551عطائیوں کے اڈے بندکردیے ہیں ،جبکہ10,475علاج گاہوں پر چھاپے مارے گئے ہیں اور اعدادوشمار کے مطابق ان میں سے 2,800سے زائدعطائیوں نے نئے کاروبار شروع کر دیے ہیں۔ دوسری جانب ضلعی انتظامیہ نے بھی 2,744علاج گاہوں پر چھاپے مارے ہیں اور کمیشن کے ایکٹ2010ء کے تحت 1,321عطائیوں کے اڈے سربمہر کیے ہیں اور ان کی رپورٹیں کمیشن کو بھجواد ی ہیں۔دونوں نے کل4,872کاروبار بند کیے ہیں۔ مزید برآں کمیشن کو 1,870ڈی سیلنگ کی درخواستیں بھی موصول ہو چکی ہیں۔واضح رہے کہ جولائی 2015 ء سے اب تک 13,500سے زائد عطائیوں کے کاروبار سربمہر کیے جاچکے ہیں۔مزیدبرآں گزشتہ ہفتے کے دوران چار اضلاع میں کمیشن کی ٹیموں نے مزید264عطائیوں کے کاروبار بند کردیے۔کمیشن کی ٹیموں نے فیصل آباد ،ساہیوال ،اوکاڑہ اور لاہور کے اضلاع کے مختلف علاقوں میں803علاج گاہوں پر چھاپے مارے اور264پرعطائی کام کرتے ہوئے پائے گئے،جن کے اڈوں کو بند کر دیاگیا۔سب سے زیادہ 108فیصل آباد میں،ساہیوال میں 68،اوکاڑہ اور لاہور میں بالترتیب53اورکاروبار بند کیے گئے ہیں۔مزید برآں جن عطائیوں کے اڈوں کوچیک کیا گیا، ان میں سے 268نے عطائیت چھوڑ کر دوسرے کارروبار شروع کردیے ہیں۔پنجا ب ہیلتھ کیئر کمیشن کے ترجمان کے مطابق سب سے زیادہ عطائی خود کو جنرل فزیشن ظاہر کرتے ہیں جبکہ دوسروں میں جراح،جعلی حکیم ،ہومیوپیتھک ڈاکٹر،جعلی دندان ساز،میڈیکل سٹور، لیبارٹریاں وغیرشامل ہیں۔

انھوں نے کہا کہ پنجاب ہیلتھ کیئر کمیشن عطائیت کے مکمل خاتمے تک اپنی کارروائی جاری رکھے گا۔

مزید : میٹروپولیٹن 4