بجٹ آئی ایم ایف کی ٹیم نے بنایا،الفاظ کا وہ گورکھ دھندہ ہے جو خود معاشی افلاطونوں کی سمجھ میں بھی نہیں آرہا:سینیٹر سراج الحق

بجٹ آئی ایم ایف کی ٹیم نے بنایا،الفاظ کا وہ گورکھ دھندہ ہے جو خود معاشی ...
 بجٹ آئی ایم ایف کی ٹیم نے بنایا،الفاظ کا وہ گورکھ دھندہ ہے جو خود معاشی افلاطونوں کی سمجھ میں بھی نہیں آرہا:سینیٹر سراج الحق

  

لاہور (ڈیلی پاکستان آن لائن) امیر جماعت اسلامی پاکستان سینیٹر سراج الحق نے  کہاہے کہ یہ پاکستان کا بجٹ نہیں ، بلکہ پاکستانی عوام کے لیے آئی ایم ایف کا بجٹ ہے جس میں سارازور ٹیکس اور اشیاء کی قیمتیں بڑھانے پر دیا گیاہے ،حکومت نے صرف آئی ایم ایف کا تیا ر کردہ بجٹ پڑھ کرسنانے کی ذمہ داری ادا کی ہے۔

بجٹ پر اپنے ردعمل میں سینیٹر سراج الحق کا کہنا تھا کہ بجٹ میں عام آدمی کو درپیش مشکلات کے حل اور مہنگائی کو کم کرنے کی طرف کوئی توجہ نہیں دی گئی ،بجٹ الفاظ کا وہ گورکھ دھندہ ہے جو خود معاشی افلاطونوں کی سمجھ میں بھی نہیں آرہا ۔ انہوں نے کہاکہ دس ماہ کی قلیل مدت میں حکومت نے یہ تیسرا بجٹ پیش کیا ہے جو دو ہزار پانچ سو پچاس ارب روپے خسارے کا بجٹ ہے ،کل آمدن پانچ ہزار پانچ سو ارب ہے جبکہ بجٹ اخراجات چھ ہزار سات سو ارب روپے ہیں،مہنگائی 100 فیصد بڑھ گئی ہے جبکہ تنخواہوں میں صرف دس فیصداضافہ کیاگیاہے۔ سینیٹر سراج الحق نے کہاکہ اگرچہ ماضی کی حکومتوں نے قرضے لے کر غلط کیا مگر موجودہ حکومت نے دوگنا زیادہ قرض لے کر کونسا اچھا کیا ہے،یہ بجٹ پاکستان کی تاریخ میں سب سے زیادہ خسارے والا بجٹ ہے،بجٹ آئی ایم ایف کی ٹیم نے بنایا ہے،ماضی کی حکومتوں نے قرض لے کر غلط کیا،ورلڈ بینک اور آئی ایم ایف کے پاس جاکر اپنے ملک پر بوجھ ڈالا تھا لیکن موجودہ حکومت نے تو اس میں کئی گنا اضافہ کیا ہے،اس  بجٹ میں 700  ارب روپے کے مزید ٹیکسز لگائے گئے ہیں جس کے نتیجہ میں مہنگائی ہوگی اور عام آدمی پر بوجھ بڑھے گا،بالواسطہ ٹیکس میں اضافہ ہوناچاہیے بلاواسطہ ٹیکس سے گریز کیا جانا چاہیے کیونکہ بلاواسطہ ٹیکس چوکی دار، ٹیکسی ڈرائیور اور عام آدمی بھی دیتا ہے یہ حقیقت ہے ٹیکس کے بغیر کوئی بھی حکومت نہیں چل سکتی لیکن دیکھنا یہ ہے کہ ٹیکس غریب سے لینا ہے یا امیر سے لینا ہے یہاں ٹیکس غریب سے لیا جاتا ہے اور امیر پر کم سے کم بوجھ ڈالا جاتا ہے۔

مزید : قومی