ضلع صوابی میں بدھ کو دسویں روز بھی پیٹرول کی قلت جاری رہی

ضلع صوابی میں بدھ کو دسویں روز بھی پیٹرول کی قلت جاری رہی

  

صوابی(بیورورپورٹ)ضلع صوابی میں بدھ کو دسویں روز بھی پیٹرول کی قلت جاری رہی۔ ضلع بھر کے تمام پیٹرول پمپ میں پیٹرول ناپید رہے۔ اس وقت ضلع صوابی میں تقریباً سو سے زائد پیٹرول پمپ اور دوسرے پمپس موجود ہے۔ جن میں سے بمشکل چھ پیٹرول پمپس کو پیٹرولیم کمپنیوں کی جانب سے پیٹرول فراہم کی جارہی ہے۔ جب کہ سو کے لگ بھگ پیٹرول پمپس میں پیٹرول عدم دستیاب ہے۔ جب ان چھ پمپوں میں پیٹرول آتا ہے تو گاڑیوں کی لمبی لمبی قطاریں لگ جاتی ہے اس شدید گرمی اور دھوپ میں بے چارے لوگ پیٹرول کے لئے قطاروں میں کھڑے ہو کر خوار و ذلیل ہو رہے ہیں ایک پیٹرول پمپ مالک نے بتایا کہ حکومتی اراکین کے سفارش پر پیٹرول پمپوں کو پیٹرول فراہم کی جاتی ہے حکومت اور ضلعی انتظامیہ تمام پمپوں کو پیٹرول کی فراہمی میں مکمل طور پر ناکام ہو چکی ہے۔ اسی طرح اکثر دوکاندار پمپوں سے پیٹرول خرید کر مشروبات کی بوتلوں، جیری کین اور گیلنوں میں لے جا کر اپنے دوکانوں میں 120سے 180روپے لیٹر تک فروخت کر رہے ہیں۔ اس حوالے سے عوامی حلقوں نے متعلقہ حکام سے مطالبہ کیا ہے کہ گاڑیوں کے بغیر کھلی پیٹرول فروخت کرنے کا سلسلہ بند کیا جائے اور اس پر مکمل پابندی عائد کی جائے۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -