نعت رسول مقبولﷺ

نعت رسول مقبولﷺ

  

حفیظ تائب

رہی عمر بھر جو انیسِ جاں وہ بس آرزوے نبیؐ رہی

کبھی اشک بن کے رَواں ہوئی کبھی درد بن کے دبی رہی

شہِؐ  دیں کے فکر و نگاہ سے مٹے نسل و رنگ کے تفرقے 

نہ رہا تفاخرِ منصبی، نہ رعونتِ نسبی رہی

سرِ دشتِ زیست برس گیا، جو سحابِ رحمتِ مصطفیؐ

نہ خرد کی بے ثمری رہی، نہ جنوں کی تشنہ لبی رہی

تھی ہزار تیرگیِ فتن، نہ بھٹک سکا مرا فکر و فن

مری کائناتِ خیال پر نظرِ شہِؐ عربی رہی

وہ صفا کا مہرِ منیر ہے طلب اس کی نورِ ضمیر ہے

یہی روزگارِ فقیر ہے، یہی التجاے شبی رہی

وہی ساعتیں تھیں سُرور کی، وہی دن تھے حاصلِ زندگی

بہ حُضورِ ظافعِؐ اُمَتاں مری جن دنوں طلبی رہی

مزید :

ایڈیشن 1 -