سرکاری ملازمین کی تنخواہیں کتنی بڑھیں گی اور کم سے کم اجرت کتنی کر دی گئی ہے ؟ شوکت ترین نے بجٹ پیش کرتے ہوئے اعلان کر دیا

سرکاری ملازمین کی تنخواہیں کتنی بڑھیں گی اور کم سے کم اجرت کتنی کر دی گئی ہے ؟ ...
سرکاری ملازمین کی تنخواہیں کتنی بڑھیں گی اور کم سے کم اجرت کتنی کر دی گئی ہے ؟ شوکت ترین نے بجٹ پیش کرتے ہوئے اعلان کر دیا

  

اسلام آباد (ڈیلی پاکستان آن لائن ) وزیر خزانہ شوکت ترین قومی اسمبلی میں نئے مالی سال کا بجٹ پیش کر رہے ہیں جس کا حجم آٹھ ہزار 487ا رب روپے ہے جس میں کم سے کم اجرت بڑھا کر 20 ہزار روپے کر دی گئی ہے ۔

ملازمین کیلئے خوشخبری 

تفصیلات کے مطابق شوکت ترین کا کہناتھا کہ وفاقی سرکار ی ملازمین کو 10 فیصد ایڈہاک ریلیف فراہم کیا جائے گا ، تمام پنشنرز کی پنشن میں 10 فیصد اضافہ کیا جائے گا ، اردلی الاﺅنس 14 ہزار سے بڑھا کر ساڑھے 17 ہزار کیا جارہاہے ۔ 2022 میں نئی مردم شماری کرانے کیلئے 5 ارب مختص کر دیئے گئے ہیں ۔

گاڑیوں پر مختلف  ٹیکسز کی کمی کی تجویز

وفاقی حکومت کی جانب سے مالی سال 2021-22 کے بجٹ میں گاڑیوں پر کئی اقسام کے ٹیکسوں میں چھوٹ دے دی گئی۔وفاقی وزیر خزانہ شوکت ترین کے مطابق مقامی طور پر تیار گاڑیوں پر ویلیو ایڈڈ ٹیکس ختم کیا جا رہا ہے۔ پہلے سے بننے والی گاڑیوں اور نئے ماڈل بنانے والوں کو ایڈوانس کسٹم ڈیوٹی سے استثنیٰ دیا جا رہا ہے۔ بجلی سے چلنے والی گاڑیوں کیلئے ایک سال تک کسٹم ڈیوٹی کم کی جا رہی ہے۔ بجٹ میں مقامی طور پر تیار ہیوی موٹرسائیکل ، ٹرک اور ٹریکٹر کی مخصوص اقسام پر ٹیکسوں کی کمی کی تجویز دی گئی ہے۔

بجٹ 2021-22 میں الیکٹرک گاڑیوں کے لیے سیلز ٹیکس کی شرح میں 17 فیصد سے ایک فیصد تک کمی کی تجویز دی گئی ہے۔ اس کے علاوہ 850 سی سی گاڑیوں کو فیڈرل ایکسائز ڈیوٹی  جب کہ درآمد شدہ 850 سی سی تک کی گاڑیوں پر کسٹم اور ریگولیٹری ڈیوٹی پر چھوٹ دی جا رہی ہے۔

ترقیاتی ہدف 4.8فیصد 

وزیر خزانہ نے بجٹ 22-2021 پیش کرتے ہوئے کہا کہ گزشتہ ڈیڑھ سال سے کورونا  کے باعث پوری دنیا کی معیشت متاثر ہوئی  ، پاکستان میں بھی اس کے اثرات  پڑے مگر ان تمام  مشکلات کے باوجود اگلے سال کی ترقی کا ہدف 4.8  فیصد رکھنے کا فیصلہ کیا ، وزیر خزانہ کا کہنا تھا کہ گردشی قرضے کم کرنے کیلئے منصوبہ بندی کی ہے ۔

مزید :

بجٹ -