سینئر صحافی حامد میر ایک ایسی جگہ پہنچ گئے کہ دیکھ کر جیو کے مالک میر شکیل الرحمان کو اپنی آنکھوں پر ذرا بھی یقین نہیں آئے گا

سینئر صحافی حامد میر ایک ایسی جگہ پہنچ گئے کہ دیکھ کر جیو کے مالک میر شکیل ...
سینئر صحافی حامد میر ایک ایسی جگہ پہنچ گئے کہ دیکھ کر جیو کے مالک میر شکیل الرحمان کو اپنی آنکھوں پر ذرا بھی یقین نہیں آئے گا

اسلام آباد (ڈیلی پاکستان آن لائن) جنگ، جیو گروپ اور اے آروائی گروپ میں جہاں نظریاتی اختلاف ہے وہیں دونوں گروپ ایک دوسرے کی ٹانگیں کھینچنے کا کوئی بھی موقع ہاتھ سے نہیں جانے دیتے، پاکستان کے عوام دونوں چینلز کی لڑائی کو کسی ’ خاندانی دشمنی ‘ کی طرح دیکھتے ہیں، ایسے میں حامد میر نے اے آروائی نیوز کے پروگرام میں بطور تجزیہ کار شرکت کرکے سب کو حیران کردیا۔

پاکستان کے ٹاپ چینلز جیواور اے آروائی کی لڑائی کسی سے ڈھکی چھپی نہیں ہے، جیو نیوز مسلم لیگ ن کا حمایتی سمجھا جاتا ہے تو اے آروائی حکومت کے سخت ترین ناقد ین میں شمار ہوتا ہے۔ دونوں چینلز ایک دوسرے کے خلاف بھی پراپیگنڈا کرنے میں مصروف رہتے ہیں لیکن حیران کن طور پر دونوں چینلز کے اینکرز کی آپس میں کافی گہری دوستیاں ہیں۔

”جب آپ گھریلو خاتون کو سیاسی تقریریں کرنے پر لگادیں تو وہ ایسے ہی بلنڈر کرتی ہے“ مریم نواز نے ایسا ’ بلنڈر‘ کردیا کہ حامد میر نے کلاس لگادی

دونوں اداروں سے وابستہ نیوز کاسٹرز اور اینکرز کے سوشل میڈیا اکاﺅنٹس کا جائزہ لیا جائے تو پتہ چلتا ہے کہ یہ آپس میں بہترین دوست ہیں، ان چینلز کے نیوز کاسٹرز کی آپس میں جتنی گہری دوستیاں ہیں اور کسی بھی چینل کے نیوز کاسٹرز میں اس طرح کی ’ محبت ‘ نظر نہیں آتی۔ جیو نیوز کے عبداللہ سلطان، رابعہ انعم اور عائشہ خالد کی شادی میں اے آروائی نیوز کے اینکرز سب سے آگے نظر آئے۔ اسی طرح اے آروائی نیوز کی اینکر ماریہ میمن اور ارضیٰ خان کی شادی میں جیو کے نیوز کاسٹرز پیش پیش تھے۔

” 3 سے 4 دن میں نواز شریف کے خلاف برطانیہ سے منی لانڈرنگ کے ثبوت آنے والے ہیں جس کے بعد ۔۔۔ “ حامد میر نے اب تک کا سب سے بڑا دھماکہ کردیا

اگر اینکرز کی بات کی جائے تو جیو نیوز کے حامد میر اور اے آروائی نیوز کے کاشف عباسی گہرے دوست ہیں جو مختلف ٹی وی چینلز کے پروگرامز میں ایک ساتھ بطور تجزیہ کار شرکت کرتے ہیں ۔ دونوں چینلز کے اینکرز کی آپس میں جتنی بھی گہری دوستیاں ہوں لیکن ایک چینل کا ملازم دوسرے چینل کے کسی پروگرام میں شرکت نہیں کرتا لیکن حامد میر نے یہ لائن بھی عبور کرلی ہے۔

حامد میر نے ہفتہ اور اتوار کی درمیانی شب اے آروائی نیوز کے پروگرام ” اعتراض ہے “ میں بطور تجزیہ کار شرکت کی ۔ خیال رہے کہ اس پروگرام کے ہوسٹ عادل عباسی ہیں جو کہ جمعہ سے اتوار 8 سے 9 بجے تک اے آروائی نیوز پر نشر ہوتا ہے۔ یاد رہے کہ حامد میر کا پروگرام بھی اسی دورانیے میں ہفتے کے پہلے 4 روز جیو نیوز پر نشر ہوتا ہے۔

ویڈیو دیکھیں

مزید : ڈیلی بائیٹس /علاقائی /اسلام آباد

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...