سینیٹ الیکشن، تحریک انصاف میں بھی بغاوت سامنے آگئی

سینیٹ الیکشن، تحریک انصاف میں بھی بغاوت سامنے آگئی
سینیٹ الیکشن، تحریک انصاف میں بھی بغاوت سامنے آگئی

روزنامہ پاکستان کی اینڈرائیڈ موبائل ایپ ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

لاہور(ویب ڈیسک )پنجاب سے سینیٹ الیکشن میں تحریک انصاف میں بھی بغاوت سامنے آگئی ،تحریک انصاف کے 4 ارکان اسمبلی کا پیپلز پارٹی کے امیدوار کو ووٹ دینے کا انکشاف ہوا ہے ، پارٹی میں بغاوت کرنے والوں کا کھوج لگانا شروع کر دیا گیا ہے۔

یوٹیوب چینل سبسکرائب کرنے کیلئے یہاں کلک کریں

روزنامہ دنیا کے مطابق کے پی کے کے بعد پنجاب میں بھی تحریک انصاف کے 4 ارکان اسمبلی جن میں ایک خاتون اور 3 مرد شامل ہیں کی جانب سے پارٹی سے بغاوت کرتے ہوئے پیپلز پارٹی کے امیدوار نواب شہزاد کو ووٹ دینے کا انکشاف ہوا ہے ،یہ انکشاف اس وقت سامنے آیا جب چوہدری سرور کے ٹوٹل 44 ووٹ نکلے حالانکہ انہوں نے 52 ووٹوں کا انتظام کررکھا تھا ۔

سینیٹ الیکشن سے ایک رات قبل سپیشل برانچ کی جانب سے انتہائی بااثر صوبائی وزیر کو مسلم لیگ ن کے 4 ارکان کے تحریک انصاف سے رابطوں کی رپورٹ پیش کی گئی جس پر ان ارکان کو مشکوک لسٹ میں ڈال دیا گیا اور ان سے باقاعدہ حلف بھی لیا گیا کہ وہ مسلم لیگ ن کے ہی امیدوار کو ووٹ دیں گے جس کے بعد چوہدری سرور کے ووٹ پھر بھی 48 بنتے تھے مگر انہیں صرف 44 ووٹ پڑے۔

اخبار کے مطابق ووٹ ڈالنے والے ارکان سے تصدیق کے بعد پارٹی کے اپنے ہی 4 ارکان اسمبلی مشکوک قرار پائے ہیں۔ ان ارکان کا تعلق لاہور سے باہر مختلف اضلاع سے ہے۔ پارٹی کی بدنامی اور چوہدری سرور کی کامیابی کے بعد ان ارکا ن کے خلاف کارروائی نہ کرنے کا بھی فیصلہ کیا گیا ہے تاہم آئندہ الیکشن میں ان کو پارٹی ٹکٹ نہیں دئیے جائیں گے۔

مزید : علاقائی /پنجاب /لاہور