نواز شریف کو کچھ ہوا تو حکومت قاتل تصوتر ہو گی ع: خورشید شاہ ، پی پی رہنما کو اپنی فکر ہے: فواد چودھری

نواز شریف کو کچھ ہوا تو حکومت قاتل تصوتر ہو گی ع: خورشید شاہ ، پی پی رہنما کو ...

سکھر(این این آئی،مانیٹرنگ ڈیسک ) پاکستان پیپلز پارٹی کے سینئر رہنما سید خورشید شاہ نے واضح کیا ہے کہ اگر سابق وزیر اعظم محمد نواز شریف کو نقصان ہوا تو وہ قتل تصور کیا جائیگا اور اس کا قصور وار حکومت کو سمجھا جائیگا اور اسے قاتل تصور کیا جائے گا،لاہور کے سروسز اور جناح ہسپتال میں امراض قلب کا شعبہ ہی نہیں ہے،نواز شریف کی طبیعت ٹھیک نہیں ہے، سب صحتیابی کی دعا کریں،عمران خان نے خود کو ابھی تک وزیر اعظم نہیں سمجھا ، اب تک کنٹینر کی سیاست کررہے ہیں ،عمران خان کی سیاست گالم گلوچ اور کنٹینر کی سیاست ہے،قائد اعظم انگریزی میں تقریر کرتے تھے ، قوم قائد اعظم کے ہر ایک لفظ کو سمجھتی تھی۔ اتوار کو یہاں میڈیا نمائندوں سے بات کرتے ہوئے خورشید شاہ نے کہا کہ وزیر اعظم عمران خان اور اس کی پارٹی میری ایک بات یاد رکھیں اگر نالائقی کی وجہ سے نوازشریف کو نقصان ہوا تو اس کو قتل سمجھا جائیگا، اس میں عمران خان اور اس کے ساتھی ملوث سمجھیں جائیں گے اور وہ اس سے بچ نہیں سکیں گے۔انہوں نے کہاکہ سابق وزیر اعظم نواز شریف کی طبیعت ٹھیک نہیں ہے، سب صحتیابی کی دعا کریں، لاہور کی سروسز اور جناح ہسپتال میں امراض قلب کا شعبہ ہی نہیں ہے۔سید خورشید شاہ نے کہا کہ نوازشریف کو پنجاب کارڈیالوجی یا این آئی سی وی ڈی میں علاج کی اجازت نہیں دی جارہی، نوازشریف کو جیل سے نکال ہی نہیں رہے۔سید خورشید شاہ نے کہا کہ وزیراعظم پورے ملک کا ہوتا ہے، صرف پارٹی کا نہیں ہوتا، عمران خان نے خود کو ابھی تک وزیراعظم نہیں سمجھا، وہ اب تک کنٹینر کی سیاست کررہے ہیں، عمران خان کی سیاست گالم گلوچ اور کنٹینر کی سیاست ہے۔پیپلز پارٹی کے رہنما نے کہا کہ ہم سیاست میں ذاتیات سے ہٹ کر بات کرتے ہیں، ہماری سیاست گالم گلوچ کی نہیں، ہم نے بہت اتار چڑھاؤ دیکھے ہیں اور کبھی بھی اقتدار کی بات نہیں کی بلکہ عوام کی بات کی ہے۔ انہوں نے کہا کہ جوشخص یوٹرن کا ماسٹر ہے اس کی سیاست پر بات کرنے کا کوئی فائدہ نہیں، وزیراعظم ریاست کا ہوتا ہے، جو وزیراعظم بد زبانی اور بے حیائی کی سیاست لے آئے اس آدمی پر کیا تبصرہ کریں، قوم کو چاہیے کہ دیکھے عمران خان کس قسم کی سیاست کرتے ہیں۔سابق اپوزیشن لیڈر نے کہا کہ عمران خان پر بہت ساری باتیں ہو سکتی ہیں لیکن ہم وہ ملحوظ خاطر نہیں لاتے کیوں کہ وہ ذاتیات کی باتیں ہیں ۔خورشید شاہ نے کہا کہ بدقسمتی سے عمران خان کو کنٹینر پر چڑھایا گیا اور وہ اب تک کنٹینر سے اترنے کو تیار نہیں ہیں۔چیئرمین پیپلز پارٹی بلاول بھٹو زرداری کی پارلیمنٹ میں انگریزی میں تقریر اور اس پر وزیراعظم عمران خان کی تنقید پر خورشید شاہ نے کہا کہ قائد اعظم انگریزی میں تقریر کرتے تھے اور قوم قائد اعظم کے ہر ایک لفظ کو سمجھتی تھی۔نواز بلاول ملاقات کے پر تبصرہ کرتے ہوئے خورشید شاہ نے کہا کہ بلاول بھٹو سیاست دان ہیں، مسلم لیگ(ن) اور پاکستان پیپلزپارٹی شروع سے ہی بڑی سیاسی پارٹیاں ہیں۔

خورشید شاہ

جہلم ( مانیٹرنگ ڈیسک ، نیوز ایجنسیاں)وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات فواد چودھری نے کہا ہے کہ عوام نے ہمیں احتساب کیلئے ووٹ دیا، ہم کسی کو ریلیف نہیں دے سکتے،سب کا احتساب ہوگا۔جہلم میں جلسے سے خطاب میں فواد چودھری کا کہنا تھا کہ مسلم لیگ (ن) کے پاس کوئی عوامی ایشوز نہیں نواز شریف کی صحت پر سیاست کر رہی ہے۔ نواز شریف سے کہہ رہے ہیں کہ وہ بیرون ملک سے اپنے ڈاکٹر بلا لیں، یہ کیسی بات ہے کہ کسی ڈاکٹر کے پاس نہیں جانا بلکہ لندن جانا ہے۔ سیاست احتساب اور صحت پر نہیں ہونی چاہیے لیکن عوام صحت کے معاملے پر سیاست کی اجازت نہیں دیں گے۔ عوام نے ہمیں احتساب کے لیے ووٹ دیا ہے، ہم ان کو ریلیف نہیں دے سکتے،۔فواد چودھری نے کہا کہ پہلے قوم نے عمران خان کو ووٹ سے عزت دی، آج پاکستانیوں کو دنیا بھر میں عمران خان کی وجہ سے عزت مل رہی ہے۔ عمران خان کی قیادت میں ترقی کا سفر شروع کیا ہے، پاکستان کو ترقی کی منزل تک لے کر جائیں گے۔انہوں نے کہا کہ اس وقت حکومت اوراپوزیشن کی کوئی لڑائی نہیں، صرف ایک لڑائی عوام کے ٹیکس کے پیسوں کا حساب دو۔ آج ان سے حساب مانگنا چھوڑ دیں تو یہ عمران کو نوبل انعام دینے کی بات بھی کریں گے۔ان کا کہنا تھا کہ اپوزیشن نے کبھی عوامی مسائل پر بات نہیں کی، جب بھی اسمبلی اجلاس ہوتا ہے تو سارے نیب کیخلاف آنسو بہاتے ہیں۔ خورشید شاہ کہتے ہیں کہ نواز شریف کو کچھ ہوا تو مقدمہ عمران کیخلاف درج کروائیں گے، خورشید شاہ کو نواز شریف نہیں اپنی جیل جانے کی فکر ہے۔ انہوں نے کہا کہ ’نواز شریف نے اپنی مرضی سے ہسپتال منتقل ہونے سے انکار کیا لیکن اب صورتحال یہ ہے کہ سابق وزیراعظم کی صحت مسئلہ نہیں لیکن اس پر سیاست کا ماحول گرم ہے‘۔انہوں نے الزام لگایا کہ ’نواز شریف خود ایسا نہیں چاہتے لیکن مسلم لیگ (ن) میں موجود ایک طبقہ ان کی صحت پر سیاست چمکا رہا ہے کیونکہ انہیں سیاست کرنے کا موقع نہیں مل رہا‘۔ چوہدری فواد حسین نے کہا ہے کہ نوازشریف جس ہسپتال سے علاج کر انا چاہتے ہیں کرالیں ،باہر سے بھی ڈاکٹرز منگوا سکتے ہیں ، نواز شریف پر اربوں روپے کی کرپشن کے کیسز ہیں ملک سے باہر جانا چاہتے ہیں تو نیب میں پلی بارگین میں اپیل کریں، اندرونی معاملات میں ہمارے اختلافات ہوسکتے ہیں ، قومی سلامتی کے معاملے پر ہم سب متحد ہیں۔ وزیر اطلاعات کے مطابق وزیراعظم عمران خان نے تو اس بات پر زور دیا کہ نواز شریف کو اپنا علاج ضرور کرانا چاہیے اور ان کی جو بھی بیماری ہے اس کے علاج کے لیے اگر انہیں باہر سے بھی کوئی ڈاکٹر منگوانا ہے تو اس میں بھی کوئی حرج نہیں اور انہیں جس علاج کی ضرورت ہے وہ انہیں ضرور ملنا چاہیے، اس بات پر تو کوئی سیاست نہیں اور نہ ہی ہمیں کوئی مسئلہ ہے انہیں بہترین علاج ضرور ملنا چاہیے اصولی طور پر تو نواز شریف نیب کی حراست میں ہیں اور عدالت نے طبی بنیادوں پر ان کی ضمانت مسترد کی ہے اس لیے جیل حکام جانے یا عدلیہ جانے حکومت کا اس معاملے سے کوئی زیادہ تعلق نہیں ہے۔

مزید : صفحہ اول