لڑکی بازیابی کیس میں ناکامی پر ایس ایس پی کا اظہار ندامت

لڑکی بازیابی کیس میں ناکامی پر ایس ایس پی کا اظہار ندامت

  

لاہور(نامہ نگار)لاہورہائی کورٹ کے مسٹر جسٹس ملک شہزاد احمد خان کے روبرولڑکی کی بازیابی کیس میں ایس ایس پی انویسٹی گیشن لاہور نے بے بسی کا اظہار کر تے ہوئے اعتراف کیاکہ وہ شرمندہ ہیں،عدالتی حکم کے باوجود لڑکی کو بازیاب نہیں کرواسکے، فاضل جج نے دوران سماعت درخواست گزار کے وکیل کی پولی گرافک ٹیسٹ کرانے کی استدعا مسترد کرتے ہوئے قراردیا کہ پولی گرافک کا تجربہ پوری دینا میں ناکام ہورہاہے،عدالت نے کیس کی مزید سماعت 25ستمبر تک ملتوی کرتے ہوئے 25مارچ کوسی سی پی او لاہور کو ذاتی حیثیت میں طلب کرلیاہے۔کیس کی سماعت شروع ہوئی تو عدالتی حکم پر ایس ایس پی انویسٹی گیشن لاہور ذیشان اصغر نے عدالت میں پیش ہو کر کہا کہ10 سے زائد یوسیز میں نکاح ناموں کا اندراج بھی چیک کیا،لڑکی خاوند سے تنگ آکر غائب ہوئی، جلد بازیاب کر والیں گے۔ فاضل جج نے ریمارکس دیئے کہ پولی گرافک کا تجربہ پوری دنیا میں ناکام ہو رہا ہے،کیسے حکم دے دیں۔درخواست گزار خاتون حمیدہ بی بی کا موقف ہے کہ اس نے اپنی بیٹی کے اغواء کا مقدمہ تھانہ غازی آباد میں درج کروایا، پولیس مغوی بیٹی فوزیہ بی بی کو بازیاب نہیں کر رہی،پولیس کو درخواست گزار کی بیٹی کی بازیابی کا حکم دیا جائے۔

شرمنہ ہیں

مزید :

صفحہ آخر -رائے -