لندن، نوا زشریف کے معالج ڈاکٹر عدنان نامعلوم افراد کے حملے میں زخمی، ہسپتال داخل

لندن، نوا زشریف کے معالج ڈاکٹر عدنان نامعلوم افراد کے حملے میں زخمی، ہسپتال ...

  

لندن(مانیٹرنگ ڈیسک،آئی این پی) برطانیہ میں زیرعلاج سابق وزیراعظم نواز شریف کے ذاتی معالج ڈاکٹرعدنان خان کو نامعلوم افراد نے حملہ کرکے زخمی کردیا۔ تفصیلات کے مطابق لندن میں حسن نواز کی رہائش گاہ کے قریب شام کی چہل قدمی کے دوران 2 نقاب پوشوں نے ڈاکٹر عدنان پر لوہے کی سلاخ سے حملہ کیا اور انہیں تشدد کا نشانہ بنایا جس سے وہ شدید زخمی ہوگئے۔ سابق وزیراعظم نواز شریف کے ذاتی معالج ڈاکٹر عدنان کے خاندانی ذرائع کا کہنا ہے کہ ڈاکٹرعدنان کے سر، چہرے اور سینے پر چوٹیں آئی ہیں جنہیں فوری طور پر اسپتال منتقل کردیا۔ پولیس کو آگاہ کر دیا گیاہے لیکن گرفتاری عمل میں نہیں آسکی۔اسکاٹ لینڈ یارڈ نے واقعے کی تصدیق کرتے ہوئے کہا ہے کہ ڈاکٹر عدنان شدید زخمی نہیں ہوئے انہوں نے ڈکیتی کی رپورٹ کی ہے اور نامعلوم افراد ان کی گھڑی چھین کر فرار ہوئے ہیں ڈاکٹر عدنان نے کہا ہے کہ حملہ آوروں کا مقصد مجھے لوٹنا نہیں بلکہ مجھے تشدد کا نشانہ بنانا تھا، دو افراد اچانک پیچھے سے حملہ آور ہوئے اور تشدد شروع کردیا۔ میڈیا رپورٹ کے مطابق ڈاکٹر عدنان نے کہا کہ وہ شام کو چہل قدمی کے لیے ایک ہی راستہ استعمال کرتے ہیں، حملہ چونکہ پیچھے سے ہوا اور میں گر گیا، اس لیے حملہ آوروں کی شکل نہ دیکھ سکا، پولیس کو قطعاً یہ نہیں کہا کہ میرا بٹوہ چھینا گیا ہے۔انہوں نے کہا کہ میرے پاس نقد رقم کے علاوہ دو موبائل فون بھی تھے، علم نہیں کہ پولیس کو ”ڈکیتی“ کی خبر کہاں سے ملی، پولیس پر واضح کردیا ہے کہ حملہ آوروں کا مقصد مجھے لوٹنا نہیں تھا، انہوں نے مجھے ہدف بناکر تشدد کا نشانہ بنایا۔۔ پاکستان مسلم لیگ (ن) کے صدر اور قائد حزب اختلاف شہباز شریف نے نواز شریف کے ذاتی معالج ڈاکٹر عدنان پر حملے کی شدید مذمت کرتے ہوئے کہا ہے کہ ڈاکٹر عدنان پر حملہ نواز شریف کے علاج میں رکاوٹ ڈالنے کے لیے کیا گیا،حملے کا انداز بتا رہا ہے کہ یہ منظم اور سوچی سمجھی واردات ہے،واقعے کی رپورٹ درج کرادی گئی ہے،امید ہے لندن پولیس اِس واقعے کی تحقیقات کر کے ملوث عناصر کو سامنے لائے گی۔ انہوں نے کہا شرپسند اس سے پہلے ہماری رہائش گاؤں پر حملے کر چکے ہیں،پارٹی رہنما اور کارکن مشتعل نہ ہوں، ہم قانون کے ذریعے شرپسندعناصر تک پہنچیں گے،ایسی بزدلانہ وارداتوں سے مسلم لیگ (ن) کی قیادت، رہنماؤں اور کارکنان کے حوصلے پست نہیں کئے جاسکتے،اللہ تعالی کا شکر ہے کہ ڈاکٹر عدنان کی جان حملے میں محفوظ رہی سابق وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے ڈاکٹر عدنان پر قاتلانہ حملے کی شدید مذمت کرتے ہوئے کہا ہے کہ نواز شریف کے بعد نواز شریف کا معالج بھی ٹارگٹ پر ہے، ڈاکٹر عدنان پر قاتلانہ حملے کا مطلب واضح ہے،سیاسی مخالفین اور ان سے وابستہ افراد کو نشانہ بنانا انتہائی منفی رجحان ہے،برطانوی حکومت قاتلانہ حملے کے واقعے کا نوٹس لے اور سکیورٹی یقینی بنانے کے لئے مناسب اقدامات کرے،ڈاکٹر عدنان کی جلد صحت یابی کیلئے دعا کرتے ہیں۔پاکستان مسلم لیگ (ن) کے پارلیمانی لیڈر خواجہ محمد آصف نے ڈاکٹر عدنان پر قاتلانہ حملے کی مذمت کرتے ہوئے کہا ہے کہ ڈاکٹر عدنان پر حملہ نہایت سنجیدہ معاملہ ہے، محض اتفاق نہیں،لندن میں ہونے والے واقعے کے ڈانڈے کہاں کہاں ملتے ہیں؟، تحقیقات ضروری ہیں۔ ایک بیان میں انہوں نے کہا یہ لندن پولیس کا بھی امتحان ہے کہ وہ معاملے کی تہہ تک جائے،نوازشریف جب سے لندن گئے ہیں، تب سے انہیں ہراساں کیا جارہا تھا،اللہ تعالی ڈاکٹر عدنان ان کو صحت کاملہ عطا فرمائے۔پاکستان مسلم لیگ (ن) کے سیکرٹری جنرل احسن اقبال نے ڈاکٹر عدنان پر قاتلانہ حملے کی شدید مذمت کرتے ہوئے کہا ہے کہ سیاسی مخالفین کے خلاف تشدد، حملے اور ذاتیات تک جانا افسوسناک اور فاشسٹ سوچ کی عکاس ہے۔ ایک بیان میں انہوں نے کہاکہ شریف فیملی کی رہائش گاہوں اور مجھ سمیت پارٹی کے دیگر رہنماؤں پر حملوں کا ماضی دیکھتے ہوئے سمجھ سکتے ہیں کہ ڈاکٹر عدنان کو نشانہ بنانے والے کون ہوسکتے ہیں۔

ڈاکٹر حملہ

مزید :

صفحہ اول -