’جہاں سے آپ کہہ رہے ہیں وہاں سے کال ہوتی تو کریم صاحب دو کالیں مس نہ کرتے خود پہنچ جاتے‘ لیگی رہنماؤں کی پریس کانفرنس پر شہباز گل کا دلچسپ جواب

’جہاں سے آپ کہہ رہے ہیں وہاں سے کال ہوتی تو کریم صاحب دو کالیں مس نہ کرتے خود ...
’جہاں سے آپ کہہ رہے ہیں وہاں سے کال ہوتی تو کریم صاحب دو کالیں مس نہ کرتے خود پہنچ جاتے‘ لیگی رہنماؤں کی پریس کانفرنس پر شہباز گل کا دلچسپ جواب

  

اسلام آباد (ڈیلی پاکستان آن لائن) وزیر اعظم عمران خان کے معاون خصوصی برائے سیاسی امور ڈاکٹر شہباز گل کا کہنا ہے کہ اگر سینیٹر حافظ عبدالکریم کو وہاں سے کال آتی جہاں کا لیگی رہنماؤں نے الزام لگایا ہے تو وہ دو کالیں مس نہ کرتے بلکہ خود پہنچ جاتے۔

شاہد خاقان عباسی، احسن اقبال ، مریم اورنگزیب اور سینیٹر حافظ عبدالکریم کی پریس کانفرنس پر رد عمل دیتے ہوئے ڈاکٹر شہباز گل نے کہا کہ  ’شاہد خاقان ایک گالی کے بدلے دس گالیاں دینے والے جعلی لیڈر کی قیادت میں ن کی بے ڈھنگی پریس کانفرنس جو فرضی کال لاگ کا من گھڑت افسانہ سنانے کی ناکام کوشش تھی۔ اس سے ایک بات تو طے ہو گئی کہ پی پی پی اور پی ڈی ایم اس بیانیے میں ن کے ساتھ نہیں۔امیدوار پی پی پی  اور پی ڈی ایم کا اور رونا دھونا ن کر رہی ہے۔‘

ڈاکٹر شہباز گل کے مطابق ’میں نے تو آج صبح ہی کہہ دیا تھا کہ فیصلہ کر لیں کل تک سب نیوٹرل تھا کیوں کہ آپ ووٹ خرید کر جیت گئے تھے۔ آج ہار نظر آ رہی ہے تو حسب عادت ریاستی اداروں پر حملہ!  یہ منجن اب نہیں بکے گا اور جہاں سے آپ کہہ رہے ہیں وہاں سے کال ہوتی تو کریم صاحب دو کالیں مس نہ کرتے، خود پہنچ جاتے۔‘

خیال رہے کہ لیگی رہنماؤں نے پریس کانفرنس میں الزام عائد کیا تھا کہ ان کے سینیٹرز کو وفاداریاں تبدیل کرنے کیلئے کالز کی جا رہی ہیں۔ سینیٹر حافظ عبدالکریم کے مطابق انہیں تین کالز آئیں جن میں سے پہلی دو انہوں نے مس کردی تھیں جبکہ تیسری کال میں ان سے صادق سنجرانی کو ووٹ دینے  کا کہا گیا۔

مزید :

قومی -