پاکپتن دربار پر آئی شادی شدہ خاتون اغواء، تھانیدار کی 3 روز تک زیادتی

پاکپتن دربار پر آئی شادی شدہ خاتون اغواء، تھانیدار کی 3 روز تک زیادتی
پاکپتن دربار پر آئی شادی شدہ خاتون اغواء، تھانیدار کی 3 روز تک زیادتی

  

پاکپتن (ویب ڈیسک) دربار بابا فرید الدینؒ کا چوکی انچارج سب انسپکٹر ارشد درندہ بن گیا، دربار پر سلام کی غرض سے آنے والی لڑکی سے تین دن تک زیادتی کرتا رہا، لڑکی کے بیان پر تھانہ سٹی پولیس پاکپتن نے زناء کا مقدمہ درج کرکے سب انسپکٹر محمد ارشد انچارج چوکی نمبر 1 کو گرفتار کرکے حوالات میں بند کردیا گیا۔ تفصیلات کے مطابق ہوتہ روڈ کی رہائشی شازیہ دختر اللہ دتہ نے پولیس رپورٹ میں بتایا کہ ایک سال قبل اس کی نذیر احمد کے ساتھ شادی ہوئی تھی اس دوران اولاد پیدا نہ ہوئی خاوند سے آئے روز لڑائی جھگڑے ہوتے تھے جس پرناراض ہوکر وہ اپنے والد اللہد تہ کے گھر آگئی اس کا والد اس کو زبردستی خاوند کے ساتھ بھیجنا چاہتا تھا لیکن وہ جانا نہیں چاہتی تھی جس پر پریشانی کے عالم میں دربار بابا فریدؒ پر سلام کرنے کے لئے آئی اور وہ دربار پر رورہی تھی کہ اس کو رضیہ پولیس کانسٹیبل اور احمد حسن گارڈ آگئے اور انہوں نے چوکی انچارج ارشد کی سیکیورٹی میں دے دیا جو اس کو ساہیوال لے گیا اور بعدازاں نوکرانی بنا کر گھر رکھ لیا اور تین دن تک زیادتی کرتا رہا اور دوبارہ پھر سب انسپٹر محمد ارشد مجھے 27-03-2015 ساہیوال لاری اڈہ چھوڑ آیا وہ لاری اڈہ پر کھڑی تھی کہ ایک شخص گلفام ولد محمد قبال قوم قریشی سکنہ 134/9L موٹرسائیکل پر آیا اور حیلے بہانے سے ساتھ لے گیا اور وہاں سے مجھے ناصر علی ولد منشاء قوم جوئیہ، رانا پرویز احمد ولد عنایت علی قوم راجپوت کوٹ فرید خاں، مختاراں عرف نصرت دختر غلام محمد سکنہ غلہ منڈی ساہیوال، نذیر جٹ موجود تھے اور دیگر افراد محمد عقیل ولد محمد سرور سکنہ عمر کالونی ساہیوال وغیرہ کو بلاکر بلیک میل کیا کہ آپ نے شازیہ کے ساتھ زناء کیا ہے اور وہ اپنے آپ کو پریس رپورٹر ظاہر کرتے تھے اور ان سے زبردستی رقم اور دیگر سامن چھین کر لے گئے اور 28-03-2015 کو گلفام کا پھوپھا محمد اکرم ولد نذیر احمد سکنہ 139/9L سے ساتھ لے کر چوکی بائی پاس ساہیوال تھانہ غلہ منڈی لے گیا اور میری روزنامچہ میں رپٹ تھریر کروائی اور محمد افضل کانسٹیبل 526/C کے ہمراہ سول ہسپتال ساہیوال بھجوایا اور اس کا نام شہزادی دختر محمد امین ضلع بہاولنگر ظاہر کیا اور میڈیکل و دیگر مواد ہسپتال سے حاصل کیا اور 09-04-2015 کو گلفام وغیرہ کے خلاف تھانہ غلہ منڈی ساہیوال میں مقدمہ نمبر 204/15 بجرم 382pp.c درج کروایا اور پولیس نے اس کا 161 ض ب تحریر کیا اور 11-04-2015 کو علاقہ مجسٹریٹ ساہیوال کے روبرو پیش کرکے بیان 164 قلم بند کرایا اور دوبارہ اصل نام شازیہ سے 13-04-2015 کو میڈیکل کروایا خاتون شازیہ نے مزید پولیس رپورٹ میں بتایا ہے کہ سب انسپکٹرمحمد ارشد نے اس کی مرضی کے خلاف زبردستی کی ہے۔

مزید : پاکپتن