ایرانی انٹیلی جنس کے اہلکار کی شرمناک کوشش نے نوجوان دوشیزہ کی جان لے لی ،ملک میں ہنگامہ

ایرانی انٹیلی جنس کے اہلکار کی شرمناک کوشش نے نوجوان دوشیزہ کی جان لے لی ،ملک ...
ایرانی انٹیلی جنس کے اہلکار کی شرمناک کوشش نے نوجوان دوشیزہ کی جان لے لی ،ملک میں ہنگامہ

  

تہران (مانیٹرنگ ڈیسک) ایران کے شمال مغربی شہر مھاباد میں عصمت دری سے بچنے کی کوشش میں بلند عمارت سے چھلانگ لگا کر جاں بحق ہونے والی نوجوان خاتون کے لئے انصاف طلب کرنے والے سینکڑوں مظاہرین سڑکوں پر نکل آئے ہیں اور شہر کی فضا سخت کشیدہ ہوگئی ہے۔

 اخبار ”سعودی گزٹ“ کے مطابق 25 سالہ کرد خاتون فاری ناز خسروانی مھاباد کے تارائی ہوٹل میں کام کرتی تھیں اور مبینہ طور پر انہوں نے ایک انٹیلیجنس اہلکار کی طرف سے جنسی زیادتی کی کوشش کے بعد چوتھی منزل سے چھلانگ لگا کر خود کشی کرلی۔ تقریباً تین لاکھ آبادی کے مھاباد شہر میں کرد آبادی اکثریت میں ہے جس کی طرف سے خاتون کی مبینہ خودکشی کے بعد شہر میں شدید احتجاج جاری ہے۔ مشتعل نوجوانوں نے احتجاج کے دوران توڑ پھوڑ کی اور تارائی ہوٹل کو آگ لگادی۔ مظاہرین کا کہنا تھا کہ حکام خاتون کی موت کے ذمہ داران کے خلاف کارروائی نہیں کررہے۔

مزیدپڑھیں:وہ جیل جہاں آپ بآسانی بغیر کوئی جرم کیے رہائش اختیار کرسکتے ہیں

جمعہ کے روز مقامی حکام کی طرف سے اعلان کیا گیا کہ خاتون کی موت کے بعد ایک شخص کو حراست میں لیا گیا ہے اور تفتیش کی جارہی ہے۔ شہر کے میئےر جعفر قطانی نے نیوز سائٹ Rudaw سے بات کرتے ہوئے کہا کہ لوگوں کو تفتیش کے نتائج سامنے آنے تک انتظار کرنا چاہیے تاکہ ہلاکت کی درست وجوہات سامنے آسکیں۔ دریں اثناءسوشل میڈیا ویب سائٹ ٹویٹر پر #Iran_Ignite کا ہیش ٹیگ تیزی سے پھیل رہا ہے اور اس کے ذریعے انٹرنیٹ صارفین نہ صرف اپنے غصے کا اظہار کررہے ہیں بلکہ فاری ناز خسروانی کے لئے انصاف کا مطالبہ بھی کررہے ہیں۔

مزید : انسانی حقوق