حکومت پسماندگی دور کرنے کیلئے کم از کم 10 بلین ڈالر خرچ کرے ، صہیب الدین

حکومت پسماندگی دور کرنے کیلئے کم از کم 10 بلین ڈالر خرچ کرے ، صہیب الدین

لاہور(خبرنگار) اسلامی جمعیت طلبہ پاکستان کے ناظم اعلیٰ اسلامی جمعیت طلبہ پاکستان صہیب الدین کاکا خیل نے دیگر عہدیداروں کے ہمراہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا ہے کہ حکومت ملک سے پسماندگی دور کرنے کے لئے کم از کم 9 سے 10 بلین ڈالر خرچ کرے اور آئندہ بجٹ میں تعلیم کے شعبہ کو ترجیح دی جائے۔ ملک میں 25 ملین یعنی اڑھائی کروڑ بچے سکول ہی نہیں جا پاتے اور جو جاتے ہیں ان میں سے تقریباً نصف پرائمری کے بعد ہی تعلیم کو خدا حافظ کہہ دیتے ہیں۔ پاکستان کے سب سے بڑے صوبے پنجاب میں بچوں کو سکول میں داخل کروانے کی شرح 60 فیصد جبکہ بلوچستان میں یہ شرح صرف 39 فیصد ہے۔ سرکاری تعلیمی اداروں میں پانچویں جماعت کے تقریباً آدھے بچے دوسری جماعت میں پڑھائی جانے والی اردو تک نہیں پڑھ سکتے ۔پنجاب حکومت نے تو گذشتہ سالوں کی نسبت تعلیمی بجٹ میں 26فیصد کمی کی۔اس صورت حال کو دیکھ کر اندازہ ہوتا ہے کہ ہماری حکومتیں تعلیمی معیار میں بہتری کے لئے کیا اقدامات کر رہی ہیں۔انہوں نے کہا کہ یونیسکو کے مطابق ہر ملک کو اپنے جی ڈی پی کا کم از کم 4 فیصد شعبہ تعلیم پر خرچ کرنا چاہئے۔ اس لحاظ سے حکومت کو چاہئے کہ وہ کم از کم 9 سے 10 بلین ڈالر تعلیمی پسماندگی دور کرنے پر خرچ کرے مگر وفاق اور پاکستان کے تمام صوبے اپنے مجموعی مالی وسائل کا محض چند سو ارب روپے تعلیم پر خرچ کرتے ہیں

مزید : میٹروپولیٹن 4


loading...