پہلے سے آڈٹ شدہ صنعتی اداروں کی دوبارہ ٹیکس سلیکشن روکتے ہوئے فیڈرل بورڈ آف ریونیو سے دو ہفتوں میں جواب طلب

پہلے سے آڈٹ شدہ صنعتی اداروں کی دوبارہ ٹیکس سلیکشن روکتے ہوئے فیڈرل بورڈ آف ...

لاہور(نامہ نگار خصوصی )لاہور ہائیکورٹ نے پہلے سے آڈٹ شدہ صنعتی اداروں کی دوبارہ ٹیکس سلیکشن روکتے ہوئے فیڈرل بورڈ آف ریونیو سے دو ہفتوں میں جواب طلب کر لیاہے۔جسٹس شاہد جمیل خان نے یہ عبوری حکم ایم ڈی ٹیکسٹائل کی درخواست پر جاری کیا، درخواست گزار کی طرف سے محمد محسن ورک ایڈووکیٹ نے موقف اختیار کیا کہ ایف بی آر نے انکم ٹیکس آرڈیننس کی دفعہ 177کی ذیلی دفعہ 7کے تحت درخواست گزار کی 2011ء اور 2013ء کے سال کے ٹیکس سلیکشن کی گئی ہے جبکہ پہلے ہی درخواست گزار 2012ء کا ٹیکس آڈٹ کروا چکا ہے، ایف بی آر نے ٹیکس سلیکشن کے لئے کوئی ٹھوس وجہ بھی نہیں بتائی جبکہ لاہور ہائیکورٹ پہلے ہی یہ اصول طے کر چکی ہے کہ ٹھوس وجہ کے بغیر کسی ادارے کی دوبارہ ٹیکس سلیکشن نہیں کی جا سکتی، انہوں نے مزید مؤقف اختیار کیا کہ ایف بی آر انکم ٹیکس آرڈیننس کی دفعہ 177کا غلط استعمال کر کے پنجاب بھر کے صنعتی اداروں کو پریشان کر رہا ہے، انہوں نے استدعا کی کہ ایف بی آر کی طرف سے آڈٹ شدہ صنعتی اداروں کے دوبارہ ٹیکس سلیکشن کے نوٹیفکیشن کو کالعدم کیا جائے، عدالت نے ایف بی آر کو آڈٹ شدہ صنعتی اداروں کی دوبارہ ٹیکس سلیکشن روکتے ہوئے دو ہفتوں میں جواب طلب کر لیاہے۔

مزید : علاقائی


loading...