اوباما امریکہ کے ہاتھوں برباد ہونیوالے ہیروشیما کے تاریخی دورہ پر جائیں گے،معافی نہیں مانگیں گے

اوباما امریکہ کے ہاتھوں برباد ہونیوالے ہیروشیما کے تاریخی دورہ پر جائیں ...
اوباما امریکہ کے ہاتھوں برباد ہونیوالے ہیروشیما کے تاریخی دورہ پر جائیں گے،معافی نہیں مانگیں گے

  


واشنگٹن(مانیٹرنگ ڈیسک) امریکی صدر باراک اوباما جاپان کے دورے کے موقع پر 70 سال قبل ہیروشیما میں ہونے والے ایٹمی حملے کے مقام کا تاریخی دورہ کریں گے۔وائٹ ہاوس حکام نے اعلان کیا ہے کہ امریکی صدر باراک اوباما جاپان کے پہلے سے طے شدہ دورے کے دوران وزیراعظم شینزو بے کے ساتھ ہیروشیما کا تاریخی دورہ بھی کریں گے۔

نیویارک ٹائمز اور ڈان نیوز کے مطابق  یہ کسی بھی امریکی صدر کا ہیروشیما کا پہلا اور تاریخی دورہ ہوگا۔وائٹ ہاوس کے ترجمان جوش ایرنسٹ کا کہنا تھا کہ اس موقع پر امریکی صدر 'جوہری ہتھیاروں کے بغیر دنیا میں امن اور تحفظ کیلئے اپنے عزم کا اعادہ کریں گے'۔انہوں یہ واضح کیا ہے کہ امریکی صدر مذکورہ بم حملے کیلئے معافی نہیں مانگے گے، جبکہ جاپانی وزیراعظم کا کہنا تھا کہ ایسی توقع نہیں کی جارہی اور نہ ہی یہ ضروری ہے، ساتھ ہی انہوں نے تجویز بھی دی کہ مذکورہ دورہ ہی ایک طاقت ور پیغام ثابت ہوگا۔

جاپانی وزیراعظم نے میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے کہا ہے کہ 'قوم ہی جوہری دھماکوں سے متاثر ہوتی ہے اور صرف قومیں ہی ان نے متاثر ہونے والے افراد کو عزت دیتی ہیں'۔میں یقین رکھتا ہوں کہ دنیا کوئی ایسا طریقہ کار اختیار کرے گی جس سے ایٹم بم سے متاثرہ افراد اور اس درد میں مبتلا لیکن زندہ بچ جانے والوں کی داد رسی ہوسکے۔

ہیروشیما کے میئر کاظامی نے اوباما کے منصوبے کو سراہتے ہوئے اسے ضمیر اور عقل پر مبنی جرات مندانہ فیصلہ قرار دیا ہے۔انہوں نے کہا کہ باراک اوباما کو شاید اس موقع پر حملے میں بچ جانے والے متاثرہ افراد کی کہانیاں بھی سننے کو ملیں۔

یاد رہے کہ 70 سال قبل دوسری جنگ عظیم کے دوران امریکا نے جاپان کے شہر ہیروشیما اور ناگاساکی پر ایٹمی حملہ کیا تھا جس سے لاکھوں افراد ہلاک اور دیگر لاکھوں ہمیشہ کیلئے معذور ہوگئے تھے جبکہ اس حملے میں دونوں شہر مکمل طور پر تباہ ہوگئے تھے۔امریکا نے 6 اگست 1945 کو دوسری عالمی جنگ عظیم کے اختتامی دونوں میں ہیروشیما پر ایٹمی حملہ کیا تھا، جس میں 140,000 افراد ہلاک ہوئے تھے، اس کے علاوہ امریکا نے 9 اگست کو جاپان کے ایک اور شہر ناگاساکی پر بھی ایٹمی حملہ کیا تھا، جس کے بعد جاپان نے 15 اگست کو ہتھیار ڈال دیئے تھے۔

مزید : بین الاقوامی


loading...