102 سالہ خاتون جس کا 75 سال سے روزانہ سگریٹ پینے کی عادت بھی کچھ نہ بگاڑ سکی، لیکن 102سال کی عمر میں ایک خبر ایسی سنی کہ فوراً ہی ہمت ہار بیٹھی، جان سے گئی، ایسی کیا خبر تھی؟ جان کر آپ کا بھی دل افسردہ ہوجائے گا

102 سالہ خاتون جس کا 75 سال سے روزانہ سگریٹ پینے کی عادت بھی کچھ نہ بگاڑ سکی، ...
102 سالہ خاتون جس کا 75 سال سے روزانہ سگریٹ پینے کی عادت بھی کچھ نہ بگاڑ سکی، لیکن 102سال کی عمر میں ایک خبر ایسی سنی کہ فوراً ہی ہمت ہار بیٹھی، جان سے گئی، ایسی کیا خبر تھی؟ جان کر آپ کا بھی دل افسردہ ہوجائے گا

  

ایڈنبرا (نیوز ڈیسک) سکاٹ لینڈ سے تعلق رکھنے والی 102سالہ خاتون میسی سٹرینک اس ضعیف العمری میں بھی اچھی بھلی صحت کی مالک تھیں، باوجود اس کے کہ وہ گزشتہ 75 سال سے باقاعدگی سے سگریٹ بھی پی رہی تھیں۔ پیرانہ سالی اور سگریٹ کا زہریلا دھواں تو ان کا کچھ نہ بگاڑ سکا البتہ چند دن قبل جب یہ خبر ملی کہ ان کا اکلوتا بیٹا کینسر کے باعث دنیا سے رخصت ہوگیا تھا تو وہ اس اندوہناک خبر کی تاب نہ لاسکیں اور چند گھنٹے بعد خود بھی دنیا سے رخصت ہوگئیں۔

آدمی نے موبائل پر نوجوان لڑکی کو انتہائی شرمناک تصویر بھیج دی اور پھر گھر کا پتہ مانگنے لگا، آگے سے لڑکی نے ایڈریس بھیج دیا، یہ ایڈریس کس کا تھا؟ نوجوان پہنچا تو دیکھ کر ہوش اُڑ گئے ، وہ لڑکی کا گھر نہ بلکہ۔۔۔

میسی سٹرینک چند ماہ قبل اس وقت عالمی میڈیا کی توجہ کا مرکز بنیں جب انہوں نے اپنی 102ویں سالگرہ پر بتایا تھا کہ وہ گزشتہ 75 سال سے باقاعدگی سے سگریٹ پی رہی تھیں۔ جب انہیں ان کے اکلوتے بیٹے سینڈی سٹرینگ کی موت کی خبر ملی تو ان کی ہمت ٹو ٹ گئی اور چند گھنٹوں میں ہی وہ خود بھی موت کے منہ میں چلی گئیں۔

میسی 30 سال تک گلاسگو کے ہچسن گرائمر سکول میں پڑھاتی رہی تھیں۔ سکول انتظامیہ کا کہنا ہے کہ میسی سٹرینک کی موت کی خبر عام ہوتے ہی ان کے سابقہ طالب علموں کی بہت بڑی تعداد انہیں خراج تحسین پیش کرنے کیلئے جمع ہوگئی۔ وہ پہلی جنگ عظیم کے آغاز کے کچھ ہی عرصے بعد 5اکتوبر1914ءکے دن پولوکشاز کے علاقے میں پیدا ہوئی تھیں۔ انہوں نے سکول ٹیچنگ کے علاوہ ایک ہسپتال میں بھی نوکری کی اور گلاسگو کے مشہور اخبار ڈیلی ایکسپریس کے ایڈیٹر کی سیکرٹری کے طور پر بھی کام کیا۔

مزید : ڈیلی بائیٹس