’جب تک لاکھوں مسلمان مل کر یہ کام نہیں کریں گے تب تک فلسطین کو آزادی نہیں ملے گی‘ طیب اردگان نے دبنگ اعلان کردیا، اسرائیل میں تھرتھلی مچادی، مسلمانوں کو فلسطین کی آزادی کا بہترین راستہ دکھادیا

’جب تک لاکھوں مسلمان مل کر یہ کام نہیں کریں گے تب تک فلسطین کو آزادی نہیں ملے ...
’جب تک لاکھوں مسلمان مل کر یہ کام نہیں کریں گے تب تک فلسطین کو آزادی نہیں ملے گی‘ طیب اردگان نے دبنگ اعلان کردیا، اسرائیل میں تھرتھلی مچادی، مسلمانوں کو فلسطین کی آزادی کا بہترین راستہ دکھادیا

  

انقرہ(مانیٹرنگ ڈیسک) ترک صدر رجب طیب اردگان اپنے دبنگ اقدامات اور اعلانات کے حوالے سے بہت شہرت رکھتے ہیں۔ حال ہی میں انہوں نے بھارتی دورے کے دوران کشمیر پر جو جرأت مندانہ موقف اختیار کیا اس نے پاکستانیوں اور کشمیریوں سمیت کروڑوں مسلمانوں کے دل جیت لیے۔ اب فلسطین کے حوالے سے انہوں نے ایسی بات کہہ دی ہے کہ آپ انہیں داد دیئے بغیر نہیں رہ سکیں گے۔ روسی انٹرنیشنل ٹی وی نیٹ ورک کی رپورٹ کے مطابق گزشتہ روز استنبول میں ایک بین الاقوامی فورم سے خطاب کرتے ہوئے ترک صدر نے دنیا بھر کے مسلمانوں کو ہدایت کی ہے کہ وہ فلسطینیوں سے اظہار یکجہتی اور آزاد ریاست کے حصول میں ان کی معاونت کے لیے زیادہ سے زیادہ یروشلم جائیں۔

”بھارت کے ہماری فوج کے بارے میں ۔۔۔“ چین نے اپنی فوج کے بارے میں واضح اعلان کر کے مودی سرکار کو زور دار جھٹکا دے دیا

رپورٹ کے مطابق رجب طیب اردگان کا کہنا تھا کہ ”اسرائیل نے طویل عرصے سے غزہ کی پٹی کا محاصرہ کر رکھا ہے۔ اس کا یہ اقدام انتہائی غیرانسانی ہے۔ اسرائیل فلسطینیوں کے ساتھ نسل پرستانہ اور امتیازی سلوک روا رکھے ہوئے ہے۔ فلسطین کے مسئلے کا واحد حل یہ ہے کہ اسرائیل 1967ءکی حدود پر واپس جائے اور ایک مکمل خودمختار اور آزادفلسطینی ریاست کا قیام عمل میں لایا جائے ، جس کا دارالحکومت مشرقی یروشلم ہو۔ جب تک لاکھوں مسلمان یروشلم جانا شروع نہیں کر دیتے تب تک یہ کام ممکن نہیں۔“ واضح رہے کہ فلسطین اور اسرائیل کے مابین تنازع میں یروشلم کو بنیادی حیثیت حاصل ہے کیونکہ دونوں ریاستیں اس شہر کی ملکیت کی دعویدار ہیں اور اس کے لیے تاریخی و مذہبی حوالے دیتی ہیں۔اقوام متحدہ بھی مشرقی یروشلم کو فلسطین کا مقبوضہ حصہ سمجھتی ہے لیکن وہ پرامید ہے کہ ایک دن یروشلم فلسطین اور اسرائیل دونوں کا دارالحکومت بن جائے گا۔

مزید : بین الاقوامی