رمیز راجہ کی فخر زمان کو روایتی جارحانہ انداز اپنانے کی تلقین

رمیز راجہ کی فخر زمان کو روایتی جارحانہ انداز اپنانے کی تلقین

  

لاہور(سپورٹس رپورٹر)سابق قومی کپتان رمیزراجہ کا کہنا ہے کہ اگر پاکستانی ٹیم کو انگلینڈ کیخلاف سیریز اور ورلڈ کپ میں کامیاب ہونا ہے تو اوپنر فخر زمان کو اپنا جارحانہ اسٹائل ہی اپنانا ہو گا کیونکہ پہلے ون ڈے میں ان کے جلد آؤٹ ہونے کی بڑی وجہ ان کی دفاعی حکمت عملی تھی حالانکہ ان کا قدرتی انداز جارحانہ ہے جس نے انہیں اس مقام تک پہنچایا ہے۔ گزشتہ روز ایک گفتگو میں رمیز راجہ کا کہنا تھا کہ فخر زمان جارحانہ انداز میں کھیل کر مخالف بالرز پر اپنا دباؤ قائم رکھنے کیلئے مشہور ہیں جس کی بدولت انہیں کامیابی ملی مگر اب یہ بات کافی حد تک تشویشناک ہے کہ وہ اچھی تیکنیک سے کھیلنے کی کوشش کرتے ہوئے اپنے بیٹنگ ڈی این اے کو تبدیل کرنے میں مصروف ہیں۔ موجودہ دور کے بہترین کمنٹیٹر کا کہنا تھا کہ موثر اور مضبوط تیکنیک سے کھیلنا بری بات نہیں لیکن کیریئر میں اتنی تاخیر سے تبدیلیوں کا فخر زمان کو نقصان ہی ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ اوپنر کو مثبت انداز سے اپنا قدرتی کھیل پیش کرنا ہوگا کیونکہ یہی اسٹائل ان کی کامیابی کی ضمانت ہے جس میں انہیں پاور ہٹنگ کا سہارا لینا پڑتا ہے۔ سابق کپتان کا کہنا تھا کہ فخر زمان کے پاس وہ گیم نہیں کہ دفاعی انداز سے زیادہ دیر تک کریز پر ٹکے رہ سکیں لہٰذا انہیں اپنی اہمیت کو سمجھتے ہوئے انگلش سیریز اور عالمی کپ میں اچھا کھیل پیش کرنا ہوگا ورنہ ان کے ساتھ پاکستانی ٹیم بھی مشکلات سے دوچار ہو سکتی ہے۔انہوں نے مزید کہا کہ جدید ون ڈے کرکٹ میں تین سو سے زائد رنز ہی بنا کر کامیابی حاصل کی جاسکتی ہے کیونکہ کسی بھی وقت کوئی حریف کھلاڑی دھواں دھار اننگز کھیل کر میچ کا پانسہ پلٹ سکتا ہے۔

مزید :

کھیل اور کھلاڑی -