چارسدہ، ٹریفک پولیس کے خلاف رکشہ ڈرائیور وں اور شہریوں کا احتجاجی مظاہرہ

چارسدہ، ٹریفک پولیس کے خلاف رکشہ ڈرائیور وں اور شہریوں کا احتجاجی مظاہرہ

  

چارسدہ (بیو رو رپورٹ)ٹریفک پولیس کے خلاف رکشہ ڈرائیوروں اور شہریوں کا مظاہرہ۔ ٹریفک پولیس پر رکشہ ڈرائیوروں کے ساتھ غیر انسانی سلوک کا الزام۔ ٹریفک پولیس کے اپنے ملکیتی رکشوں کیلئے کوئی قانون اور ضابطہ نہیں جبکہ غریبوں کے رکشوں کو حیلے بہانوں سے پولیس چوکی میں بند کرکے گالم گلوچ کے ساتھ ساتھ بھاری جرمانے اور ڈرائیوروں کو حوالات میں بند کیا جا تا ہے۔ احتجاجی رکشہ ڈرائیوروں کے پاس لائسنس اور نہ روٹ پر مٹ ہے۔ٹریفک پولیس کا موقف۔ تفصیلات کے مطابق ٹریفک پولیس چوکی کے سامنے رکشہ ڈرائیوروں اور شہریوں نے ٹریفک پولیس کے غیر انسانی رویے کے خلاف احتجاجی مظاہرہ کیا۔ مظاہرین کا کہنا تھا کہ ٹریفک پولیس حکام اور شہر کے بااثر لوگوں کے اپنے ملکیتی رکشوں کیلئے کوئی روٹ پر مٹ اور نہ ڈرائیونگ لائسنس کی ضرورت ہوتی ہے اور وہ سارا دن چوک سے سواریاں اٹھاتے ہیں جبکہ ہمیں روٹ پر مٹ اور نہ پاس دئیے جاتے ہیں جبکہ اڈے پر بھاری کے انتظار میں کھڑے ہو کر بھی ہمیں جرمانہ کرکے رکشوں کو ٹریفک چوکی میں بند کیا جا تا ہے تاکہ ان کے اپنے ملکیتی رکشوں کے لئے راستہ ہموار ہو ۔انہوں نے کہا کہ ٹریفک پولیس کے اپنے رکشوں کیلئے کوئی قانون اور ضابطہ نہیں جبکہ غریب شہریوں کے رکشوں کو حیلے بہانوں سے پولیس چوکی میں بند کرکے گالم گلوچ کے ساتھ ساتھ بھاری جرمانے اور ڈرائیوروں کو حوالات میں بند کیا جا تا ہے۔انہوں نے کہا کہ ٹریفک پولیس روزانہ ہماری بے عزتی کر تے ہیں۔ رکشہ ڈرائیوروں کا کہناتھا کہ لاک ڈاؤن او ر رمضان کی وجہ سے ان کے گھروں کے چولہے ٹھنڈے پڑ چکے ہیں اور ان کے بچے فاقوں پر مجبور ہیں جبکہ ٹریفک اہلکارہماری عزت نفس مجروح کر کے مزید ظلم کر رہے ہیں۔ اس حوالے سے ٹریفک پولیس کا کہنا ہے کہ احتجاجی رکشہ ڈرائیوروں کے پاس روٹ پرمٹ اور نہ لائسنس ہے۔ دوسری طرف موقع پر موجود ٹریفک اہلکاروں ساجد اللہ اور ظاہر اللہ نے میڈیا نمائندوں کو برا بلا کہتے ہوئے کہا کہ احتجاجی رکشہ ڈرائیوروں کو جتنا چاہتے ہو کوریج دو کسی کا باپ بھی ہمار ا کچھ نہیں بگاڑ سکتا۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -