دو ایم این ایز، پارلیمنٹ لاجز کے ملاز م میں کورونا کی تشخیص، قومی اسمبلی کا اجلاس آج، سینیٹ کا کل ہو گا،حکمت عملی تیار، اجلاس ملتوی کی جائے ڈپٹی چیئر مین سینیٹ

دو ایم این ایز، پارلیمنٹ لاجز کے ملاز م میں کورونا کی تشخیص، قومی اسمبلی کا ...

  

اسلام آباد (سٹاف رپورٹر،نیوز ایجنسیاں)قومی اسمبلی کا اجلاس (آج)پیر کی سہ پہر 3 بجے ہوگا، ارکان کی شرکت کے حوالے سے حکمت عملی مرتب کرلی گئی۔ ذرائع کے مطابق تمام ارکان کو ضلعی سطح پر اپنے ٹیسٹ کروانے کی ہدایات کے بعد حفاظتی انتظامات بھی مکمل کرلئے، ارکان قومی اسمبلی گیٹ ون سے پارلیمنٹ ہاؤس میں داخل ہونگے۔ ذرائع کے مطابق گیٹ پر تھرمل گن کے ذریعے ارکان کا ٹمپریچر چیک کرنے بعد پارلیمنٹ ہاؤس جانے کی اجازت ہوگی، تمام ارکان کی نشستوں میں سماجی فاصلے کو ملحوظ خاطر رکھا جائیگا۔قومی اسمبلی سیکرٹریٹ ذرائع کے مطابق ایوان میں چار سو سے زائد نشستوں کی گنجائش کے باعث سماجی فاصلے میں کسی قسم کی دقت پیش نہیں آئے گی۔ ذرائع کے مطابق تمام ارکان کے سامنے مائیک ہونگے البتہ کورونا کے پیش نظر ایوان میں نئی ڈویژن کرنا پڑی تو کوئی مشکل نہیں ہوگی۔ ذرائع کے مطابق مہمانوں اور وی وی آئی پیز کے لئے مختص گیلریز مکمل طور پر بند رہیں گی، صحافیوں کی بھی محدود تعداد ایوان کی کوریج کرسکے گی، مخصوص پاسز کے حامل افراد ہی ایوان میں آسکیں گے۔ذرائع کے مطابق قومی اسمبلی اور سینیٹ میں ایک ایک رپورٹر ہی کوریج کرسکے گا۔ ذرائع کے مطابق قومی اسمبلی اجلاس میں کورونا وائرس کی موجودہ صورتحال کے علاوہ کسی اور ایشو پر بحث نہیں ہوگی، سپیکر قومی اسمبلی کی غیر موجودگی میں ڈپٹی سپیکر قومی اسمبلی ایوان کی کارروائی چلائیں گے، کسی ممبر کو اپنے ہمراہ سٹاف لانے کی اجازت نہیں ہوگی، ڈرائیور حضرات اپنی گاڑیوں تک ہی محدود رہیں گے۔ذرائع کے مطابق زیادہ ضرورت پڑنے کی وجہ سے صرف ایک سٹاف ممبر ہی ایوان میں جاسکے گا، پارلیمان میں داخلے کے لئے پاسز کے ساتھ دستانے اور ماسک لازمی قرار دیئے گئے ہیں۔ ذرائع نے بتایا کہ اراکین قومی اسمبلی کو اجلاس میں شرکت سے قبل کرونا ٹیسٹ لازمی کرانا ہوگا جبکہ اسمبلی ملازمین کے بھی ٹیسٹ کیے جائیں گے۔ قومی اسمبلی اجلاس کے دوران عام افراد کا داخلہ ممنوع ہوگا جبکہ پارلیمنٹ لارجز میں داخلے کیلئے ایس او پیز بھی تیار کیے جائیں گے۔دریں اثنا سینٹ کا اجلاس (کل) منگل بارہ مئی کو ہوگا صدارت چیئر مین سینٹ صادق سنجرانی کرینگے۔تفصیلات کے مطابق چند روز قبل چیئرمین سینیٹ صادق سنجرانی کی زیر صدارت اؤس بزنس ایڈوائزری کمیٹی کے اجلاس میں اپوزیشن کی ریکوزیشن پر سینیٹ اجلاس 12 مئی کو طلب کرنے کا فیصلہ کیاگیا تھا۔اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ سینیٹ اجلاس قومی اسمبلی کے اجلاس کے متبادل دن پر ہوگا،اجلاس کی کارروائی دو گھنٹے تک چلانے پر اتفاق کیا گیا تھا،ایک ہفتہ تک جاری رہنے والے اجلاس میں کورونا سے پیدا شدہ صورتحال پر بحث سمیت اپوزیشن کے دیئے گئے ایجنڈے پر کارروائی ہوگی۔اس موقع پرچیئرمین سینیٹ کا کہنا تھا کہ اجلاس کا انعقاد کورونا سے متعلق احتیاطی تدابیر کے مطابق کیا جائے گا ہال کے اندر ہر سطح پر سماجی فاصلے کو یقینی بنائیں گے،

اسمبلی اجلاس

اسلام آ باد (سٹاف رپورٹر آئی این پی) قومی اسمبلی کے اراکین محمود شاہ اور گل ظفر خان کی کروناٹیسٹ رپورٹ مثبت آگئی۔ذرائع کا کہنا ہے کہ قومی اسبملی کے دونوں اراکین (محمود شاہ، گل ظفر خان) میں کرونا وائرس پایا گیا ہے، رپورٹ میں تصدیق ہوگئی، اراکین پارلیمنٹ سے ٹیسٹ کے لیے سیمپلز 8مئی کولیے گئے تھے۔ذرائع کے مطابق اراکین پارلیمنٹ کے سیمپلز این آئی ایچ کی خصوصی ٹیم نے لیے تھے، قومی اسمبلی اجلاس میں شرکت سے قبل کروناٹیسٹ لازمی قرار دیا گیا تھا۔ گل ظفر خان باجوڑ سے تحریک انصاف کے ایم این اے ہیں۔دوسری جانب ذرائع نے یہ بھی انکشاف کیا ہے کہ پارلیمنٹ لاجز کے ایک اور چیمبراٹینڈنٹ میں کرونا کی تصدیق ہوگئی، کرونا سے متاثرہ چیمبر اٹینڈنٹ کی عمر 39سال ہے۔ پارلیمنٹ لاجز سے سامنے آنے والے کیسز کی تعداد3ہوگئی۔ادھر اراکین پارلیمان کے کروناٹیسٹ کے نتائج جاری کردیے گئے ہیں۔ سینیٹر راجہ ظفر الحق اور مشاہد حسین سید کا کرونا ٹیسٹ منفی آیا۔ وفاقی وزیر غلام سرور خان اور سیدفخر امام کا بھی ٹیسٹ منفی رہا۔اسی طرح مصطفی نوازکھوکھر، شاہ زین بگٹی، پی ٹی آئی کے پشاور سے ایم این اے نور عالم خان، ایم این اینور عالم، سینیٹر سلیم ضیا، ستارہ ایاز، ملیکہ بخاری اور ڈاکٹر عائشہ غوث پاشا بھی مہلک وائرس سے محفوظ رہیں۔لیگی رکن اسمبلی طاہرہ اونگزیب، معاونین خصوصی علی نواز اعوان، ملک امین اسلم، مریم اورنگزیب اور مائزہ حمید کے کرونا ٹیسٹ بھی منفی آئے ہیں۔دوسری جانب ارکان پارلیمنٹ اور عملے میں کورونا کی تشخیص کے بعد ڈپٹی چیئرمین سینیٹ سلیم مانڈی والا نے قومی اسمبلی اور سینیٹ اجلاس موخر کرنے کی تجویز دے دی ہے اور کہا ہے کہ ارکان اور پارلیمنٹ عملے میں کورونا کی تشخیص باعث تشویش ہے۔سلیم مانڈی والا نے کہا کہ کورونا کیسز میں اضافے سے متعلق میرے خدشات درست ثابت ہو رہے ہیں، اب یہ وائرس پارلیمنٹ کی راہداریوں میں بھی پہنچ گیا ہے، مزید ارکان اور عملے میں کرونا کی تشخیص ہونے کا خدشہ ہے، بروقت خبردار کردیا تھا کہ ٹیسٹ کے بغیر کسی کو پارلیمنٹ میں داخل نہ ہونے دیا جائے، موجودہ صورتحال میں اجلاس بلانے کے خطرناک نتائج نکل سکتے ہیں، ضروری ہو تو اجلاس میں تاخیر کی جائے اور ٹیسٹ کو یقینی بنانے کے بعد ئی پارلیمنٹ میں داخلے کی اجازت دی جائے۔

ارکان ٹیسٹ

مزید :

صفحہ اول -