پانی بحران، جنوبی پنجاب میں لاکھوں ایکڑاراضی بنجر ہونے کا خدشہ 

پانی بحران، جنوبی پنجاب میں لاکھوں ایکڑاراضی بنجر ہونے کا خدشہ 

  

کوٹ ادو(تحصیل رپورٹر)بارشوں کی کمی، ملک میں خشک سالی کے سائے منڈلانے لگے،آبی بحران شدت اختیار کرگیا دریاں اور بیراجوں پر پانی کے بہا میں شدید کمی،  دریائے چناب  میں پنجند کے مقام پر ڈان سٹریم کی جانب پانی کی شرح صفر ہوگئی نہروں میں پانی کی فراہمی ناممکن ہو گئی،نہری پانی کی قلت سے جنوبی پنجاب کی لاکھوں ایکڑ سونا اگلتی زمینیں بنجر ھونے کا خدشہ(بقیہ نمبر13صفحہ6پر)

 بڑھ گیا ہے تفصیل کے مطابق  گذشتہ چند ماہ کے دوران بارشوں کی کمی کے باعث ملک میں خشک سالی کے سائے منڈلانے لگے ہیں اور ملک بھر میں آبی بحران شدت اختیار کرگیا ہے دریاؤں اور بیراجوں پر پانی کے بہاؤ میں شدید کمی کا سامناہے دریائے چناب میں مرالہ ہیڈورکس کے مقام پر اپ سڑیم کی جانب پانی کا بہاؤ 17736کیوسک اور ڈان سٹریم کی جانب 9936کیوسک ھے جبکہ پنجند کے مقام پر اپ سٹریم کی طرف صرف 4ہزار کیوسک اور ڈان سٹریم کی جانب پانی کے بہا کی شرح صفر ھوگء ھے ادھر دریائے سندھ میں کالا باغ  کے مقام پر پانی کا بہا 83 ہزار کیوسک چشمہ کے مقام پر 82ہزارکیوسک جبکہ تونسہ بیراج کے مقام پر اپ سڑیم کی جانب پانی کا بہا 70ہزار کیوسک ہے یہاں سے ڈان سٹریم صوبہ سندھ کی طرف 62ہزار کیوسک پانی چھوڑا جارہاہے،  دریائے چناب اور دریائے سندھ میں پانی کی شدید کمی کے باعث دریائے چناب کے  مرالہ ہیڈورکس، خانکی ہیڈورکس اور قادر آباد ھیڈ ورکس، کے مقام سے نکلنے والی مرکزی نہروں اور دریائے سندھ کے چشمہ بیراج اور تونسہ بیراج سے نکلنے والی بڑی نہروں میں مختص مقدار میں پانی کی فراہمی ناممکن ہو گء ھے دریائے سندھ سے دریائے چناب کو پا نی فراہم کرنے والے تونسہ پنجند کینال(ٹی پی لنک)میں پانی کی فراہمی مکمل طور پر بند ھے جبکہ مظفرگڑھ کینال میں 4ہزار 5سو کیوسک پانی چھوڑا جارہاہے مختص پانی 10ہزار کیوسک ہے ڈی جی خان کینال میں صرف 3576 کیوسک پانی فراہم کیا جارہا ھے جبکہ مختص پانی 10ہزار کیوسک ہے جنوبی پنجاب کی مرکزی نہروں میں مطلوبہ مقدار میں پانی کی فراہمی نہ ھو نے کے سبب برانچ نہروں میں پانی کی فراہمی ناممکن ہو گء ہے نہری سیرابی پانی کی قلت کے باعث جنوبی پنجاب کی لاکھوں ایکڑ سونا اگلتی زمینیں بنجر ھونے کا خدشہ پیدا ہوگیا ہے۔

مزید :

ملتان صفحہ آخر -