چوہدری افتخار نذیرکی کوششوں سے متعدد منصوبے مکمل

چوہدری افتخار نذیرکی کوششوں سے متعدد منصوبے مکمل

  

ٹھٹھہ صادق آباد(نامہ نگار)افتخار نذیر گروپ کا نعرہ”سیاست برائے عوامی خدمت“تحصیل جہانیاں کی عوام کو سیاست دان تو بہت ملے لیکن چند سیاست کے میدان میں عوامی کاموں کی بجائے صرف دلاسے دینے والے ہی ملتے رھے جبکہ2008 کے الیکشن میں ایک ایسا سیاست دان سامنے آیا جس نے ایک ہی نعرہ لگایا سیاست نہیں صرف عوامی(بقیہ نمبر9صفحہ6پر)

 خدمت جبکہ عوام نے اس نعرہ لگانے والے چوہدری افتخار نزیر کی اس نعرہ کی بنا پر انہیں پہلی دفعہ ممبر قومی اسمبلی منتخب کیا جبکہ دوسری مرتبہ2013 کے الیکشن میں عوام نے اس نعرہ لگانے والے عوامی شخصیت کے مالک کو اس بنا پر دوبارہ ووٹ دے کر کامیاب کرایا کیونکہ انہوں نے سابق دور میں بے شمار عوامی خدمت کے کاموں کو عملی جامہ پہنایا عوامی خدمت کے سال گزرتے رھے اور ایک مشکل وقت پاکستان مسلم لیگ ن پر 2018 کے الیکشن میں آیا تو چوہدری افتخار نزیر نے اپنے بھائی حاجی عطا الرحمن کو بھی ممبر صوبائی اسمبلی کی سیٹ پر الیکشن میں حصہ لیا ان کی بے شمار فلاحی کاموں اور عوامی محبت سے چوہدری افتخار نذیر ممبرقومی اسمبلی اور حاجی عطا الرحمن ممبرصوبائی اسمبلی منتخب واضح اکثریت سے منتخب ھوگئے اور سیاسی مخالفین اتنے برے وقت میں دونوں بھائیوں کی جیت پر حیران وپریشان اور کہتے سنا کہ ان کی عوامی خدمت کے سامنے باقی سب زیرو ہیں جب عوام چوہدری افتخار نذیر کی پندرہ سالہ فلاحی اور عوامی کاموں پر تبصرہ کرتی ھے تو سیاسی مخالفین بھی کہنے پر مجبور ہیں کہ ہم ان کے آگے کچھ بھی نہیں لیکن بغض اور حسد کی آگ میں جلنے والے کوئی موقع بھی ضائع نہیں کرتے لیکن وہ صبر وتحمل کا دامن کو نہیں چھوڑتے بلکہ عوامی خدمت کرکے ان کو بہترین جواب دینا اپنا وطیرہ بنایا ھوا ھے جب ہم ان کے پندرہ سالہ عوامی خدمت کے سب سے بڑے منصوبہ سوئی گیس کو دیکھتے ہیں تو ہزاروں ہاتھ ان کیلیے دعا مانگتے نظر آتے ہیں جب ملتان ڈویژن میں ایک ہی پاسپورٹ کا دفتر ھوتا تھا پورے ڈویژن کی عوام کارش ھوتا تھا تو وہ عوامی خدمت ہی تھی بڑے بڑے ضلعوں میں پاسپورٹ کا دفتر نہ بنوا سکے اور ایک چھوٹی سی تحصیل جہانیاں میں پاسپورٹ کا دفتر بنا جس کے لیے زمین تک وقف کی گء ووکیشنل کالج علامہ اقبال کا کمیپس 1122 اور گونگے بہرے بچوں کیلیے سکول نادرا آفس کاقیام جہانیاں ہسپتال میں توسیع منصوبہ جات نئے تقریبا5 فیڈرز کے قیام پر25 کروڑ کی لاگت  تقریبا اڑھائی سو کے قریب دیہاتوں میں بجلی کی فراہمی اور سینکڑوں چکوک میں نئے ٹرانسفارمراور سینکڑوں نئے کھمبے اور132 کیوی کی اپ گریڈیشن کروائی اس سے قبل وولٹیج کا شدید مسلہ چلا آرہا تھا موٹر پمپ نہیں چلتے تھے وولٹیج کا مسلہ حل کروایا سکولوں کی اپ گریڈیشن اور عمارت کیلیے فنڈز میٹھے پانی کے منصوبہ جات چک نمبر136.137.139.123.135 میں کروڑوں روپے کی لاگت سے میٹھے پانی کی فراہمی جبکہ 140 دس آر 127 دس آر تک 26 کروڑ کی لاگت سے کارپٹ روڈ پرویز والا سے دلو موڑ تک بننے والا کارپٹ روڈ 15 کروڑ کی لاگت 149 دس آر سے 157 دس آر تک کارپٹ روڈ کا منصوبہ سینکڑوں چکوک میں نالیاں سولنگ  واٹر فلٹریشن پلانٹس کی تنصیب 8 کروڑ روپے کی لاگت واہلہ اسٹیڈیم کی اپ گریڈیشن۔2 نئے پارکوں کی تعمیر جبکہ تحصیل سپورٹس کمپلیکس کا منصوبہ سابق دور میں بڑی مشکل سیمنظور ھوا لیکن سیاسی مخالفین نیکبیروالا میں حسین جہانیاں کو دے دیا کہ ہمیں اس کی ضرورت نہیں سابق دور حکومت میں پل114 سے پل132 تک روڈ کی منظوری تو ھوگی لیکن فنڈز جاری نہ ھوسکے اور پاکستان تحریک انصاف کی حکومت نے فنڈز جاری نہ کیے اس دور حکومت میں بہت سے سیاست دانوں نے دعوے تو بہت کیے لیکن پل114 سیپل132 تک روڈ تو دور کی بات ھے جہانیاں کے لیے ایک منصوبہ بھی حاصل نہ کرسکے اور اس کے فنڈز بھی باقی تین تحصیلوں کو دے دہیے اب دوبارہ مسلم لیگ ن کی حکومت آئی ھے اس روڈ کو افتخار نزیر ہی بنوائیں گے بلکہ انشااللہ دو سب ڈویژن واپڈا کا قیام بہت جلد ھونے والا ھے میرے لیے جہانیاں کے تمام سیاست دان قابل احترام ہیں جو اس سیقبل اور آج تک اپنی کوشش میں لگے ہیں کہ جہانیاں کی عوام کیلیے کچھ کیا جائے ان کے اچھے اقدام کو سہراہا جائے گا اور سب کارکنان کوچاہیے وہ کسی بھی پارٹی سے ھیاپنے اپنے لیڈر کے ذریعے عوامی منصوبیلے کرعوام میں آئیں اور سیاست دانوں کو بھی چاہیے وہ بڑھ چڑھ کر عوامی خدمت کرکے سیاسی مخالفین کا مقابلہ کریں۔

مزید :

ملتان صفحہ آخر -