سندھ کابینہ نے جیٹیز کورجسٹر کرنے کے قوانین کی منظوری دیدی

سندھ کابینہ نے جیٹیز کورجسٹر کرنے کے قوانین کی منظوری دیدی

  

          کراچی (اسٹاف رپورٹر) سندھ کابینہ نے غیر قانونی فشنگ کو روکنے کے لیئے جیٹیز کو رجسٹر کرنے کے قوانین کی منظوری دے دی۔وزیراعلی سندھ سید مراد علی شاہ کی زیر صدارت سندھ کابینہ کا اجلاس ہوا، جس میں کابینہ کے گزشتہ اجلاس کے منٹس کی منظوری دی گئی۔اجلاس میں جیٹیز کے حوالے سے سیکریٹری فشریز اینڈ لائیواسٹاک نے اجلاس کو بریفنگ دی، جس میں بتایا کہ ڈپارٹمنٹ کو معلوم ہوا ہے کہ سندھ کے ساحلی بیلٹ کے ساتھ کچھ جیٹیز غیر قانونی چل رہی ہیں۔ ان غیر قانونی جیٹیز کی وجہ سے چار بلین روپے کا نقصان ہو رہا ہے۔بریفنگ کے مطابق جیٹیز رجسٹر نہ ہونے سے غیر قانونی فشنگ ہوتی ہے۔ صوبے میں تقریبا 64 جیٹیز غیر قانونی کام کررہے ہیں۔ ان میں کیماڑی میں 5، ملیر 27، ٹھٹھہ 29، سجاول 2 اور بدین میں ایک کام کر رہی ہیں۔باری پتافی نے کہاکہ ہمارے پاس کوئی ایسا قانون موجود نہیں تھا، جس کے تحت جیٹیز کو رجسٹر کیا جاسکے۔ اب یہ قوانین بنائے گئے ہیں جس کے تحت جیٹیز رجسٹر ہوں گی۔ وزیر اعلی سندھ کو بتایا گیا کہ قوانین تمام اسٹیک ہولڈرز کی مشاورت سے بنا ئے گئے ہیں۔باری پتافی نے مزید کہا کہ جیٹیز کی رجسٹریشن کشتیوں کے حساب سے فی وصول کرکے رجسٹر کی جائے گی۔ رجسٹریشن کا لائسنس 3 سال کے لیے ہوگا۔ جیٹیز کی رجسٹریشن اور سیکوریٹی سندھ فشریز ڈپارٹمنٹ کی میرین ونگ کرے گی۔ کابینہ نے جیٹیز کو رجسٹر کرنے کے قوانین کی منظوری دے دی۔اجلاس میں صوبائی وزرا، مشیران، معاونین خصوصی، چیف سیکریٹری، چیئرمین پی اینڈ ڈی، وزیراعلی سندھ کے پرنسپل سیکریٹری اور دیگر متعلقہ افسران نے شرکت کی۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -