کراچی کے مختلف علاقوں میں پانی کا بحران بدستور جاری

  کراچی کے مختلف علاقوں میں پانی کا بحران بدستور جاری

  

کراچی (سٹاف رپورٹر) پاکستان کے سب سے بڑے شہر کراچی میں ایک اندازے کے مطابق پچاس لاکھ سے زائد شہری پینے کے پانی سے محروم ہیں۔ ایم ڈی واٹر بورڈ کا کہنا ہے کہ شہر میں کوئی بحران نہیں۔اس حوالے سے ذرائع کا کہنا ہے کہ کراچی کے مختلف علاقوں میں پانی کا بحران بدستور جاری ہے، شہر کے متعدد علاقے لانڈھی، کورنگی، گلستان جوہر، شاہ فیصل کالونی، گلشن اقبال متاثر ہیں۔اس کے علاوہ نارتھ ناظم آباد، نارتھ کراچی، اورنگی ٹان سمیت دیگر علاقوں کے مکین پانی کی بوند بوند کو ترس رہے ہیں۔ماہرین کا کہنا ہے کہ شہر کو مہیا کیے جانے والے پانی کا چالیس فیصد چوری ہوجاتا ہے جو بعد میں مہنگے داموں واپس شہریوں کو فروخت کیا جا رہا ہے۔دوسری جانب ایم ڈی واٹر بورڈ کاموقف ہے کہ شہر قائد میں پانی کا کوئی بحران نہیں ہے، کراچی کو دریائے سندھ  سے 50کروڑ30 لاکھ گیلن یومیہ پانی فراہم کیا جارہا ہے۔ایم ڈی واٹر بورڈ کے مطابق کراچی کا 16فیصد پانی ضائع ہورہا ہے، ترجمان واٹر بورڈ کا کہنا ہے کہ شہر میں مجموعی طور پر50کروڑ گیلن پانی کا شارٹ فال ہے، بجلی کی لوڈشیڈنگ سے پانی کی فراہمی متاثر ہورہی ہے۔واضح رہے کہ سندھ میں پانی کی قلت شدت اختیار کرگئی، سکھر، گڈو اور کوٹری بیراجوں کو پانی کی قلت کا سامنا ہے جس سے شہر قائد میں پانی کی فراہمی کا بحران شدت اختیار کرگیا ہے۔ذرائع کے مطابق ماہرین کا کہنا ہے کہ بالائی علاقوں میں بارشیں نہ ہونے کے سبب زرعی پانی کے ساتھ پینے کے پانی کا بحران ہے جس کیلئے اہم اقدامات کرنا ہوں گے۔

  

مزید :

صفحہ اول -