خدا گواہ کے پروڈیوسر کو امیتابھ کی والدہ نے کیا دھمکی دی تھی؟

خدا گواہ کے پروڈیوسر کو امیتابھ کی والدہ نے کیا دھمکی دی تھی؟
خدا گواہ کے پروڈیوسر کو امیتابھ کی والدہ نے کیا دھمکی دی تھی؟

  

ممبئی (ویب ڈیسک) بالی ووڈ کے معروف فلم پروڈیوسر منوج ڈیسائی اس وقت مشکل میں پڑگئے تھے جب 1992 میں ان کی پروڈیوس کردہ فلم ’خدا گواہ‘ کی شوٹنگ کے لیے فلم کی ٹیم افغانستان گئی ہوئی تھی۔

مقامی اخبار روزنامہ جنگ کے مطابق اپنے ایک حالیہ انٹرویو میں منوج ڈیسائی نے کہا کہ بالی ووڈ سپر اسٹار امیتابھ بچن کی والدہ تیجی بچن اور آنجہانی اداکارہ سری دیوی  کی والدہ راجیشوری نے اس فلم کی شوٹنگ کےدوران انہیں ایک بار دھمکی بھی دی۔منوج ڈیسائی کے مطابق تیجی بچن نے ان سے کہا کہ اگر امیتابھ کی اہلیہ اداکارہ جیا بچن بیوہ ہوئیں تو پھر تمہاری بیوی کو بھی بیوہ ہونا پڑے گا، جبکہ سری دیوی کی والدہ نے ان سے کہا کہ اگر ان کی بیٹی کو کچھ ہوا تو پھر تمہیں (ڈیسائی) کابل میں ہی قیام کرنا پڑے گا۔

انہوں نے دھمکی دیتے ہوئے کہا کہ اگر تم میری بیٹی کے بغیر بھارت واپس آئے تو تمہیں قتل کروادیا جائے گا۔واضح رہے کہ یہ فلم جس عہد میں بنائی گئی اس وقت افغانستان سے سابق سوویت یونین کی فوجیں نکل چکی تھیں اور ملک میں خانہ جنگی ہورہی تھی۔ اس دوران اس فلم کی کابل اور مزار شریف میں شوٹنگ ہوئی اور اس وقت کے افغان صدر ڈاکٹر نجیب اللہ نے 1991 میں 18 روزہ شوٹنگ کے لیے مکمل سیکیورٹی فراہم کی تھی۔اس فلم میں امیتابھ بچن اور سری دیوی کے علاوہ نگر جونا، شلپا شروڈوکر، ڈینی ڈینزونگپا اور کرن کمار نے بھی اداکاری کے جوہر دکھائے تھے۔

مزید :

تفریح -