بھارت چھوٹے پیمانے پر جنگ لڑ رہا ہے ، ایسے ہتھیار باقاعدہ جنگ میں استعمال نہیں ہوتے:ڈی جی رینجرز پنجاب

بھارت چھوٹے پیمانے پر جنگ لڑ رہا ہے ، ایسے ہتھیار باقاعدہ جنگ میں استعمال ...

   سیالکوٹ(آئی این پی) ڈی جی رینجرز پنجاب میجر جنرل خان طاہر جاوید خان نے کہا ہے کہ بھارت ورکنگ باو¿نڈری پر سیز فائر کی خلاف ورزی نہیں کر رہا بلکہ چھوٹے پیمانے پر جنگ لڑ رہا ہے‘ گزشتہ 4 سال میں بھارتی فوج 3 لاکھ 48 ہزار سے زیادہ چھوٹے ہتھیاروں سے حملے کر چکی ہے‘31 ہزار سے زیادہ مارٹر گولے فائر کئے گئے‘اتنے بڑے پیمانے پر چھوٹے اور بڑے ہتھیاروں کا استعمال تو باقاعدہ جنگ میں بھی نہیں کیا جاتا‘یہ بات سمجھ میں نہیں آتی کہ آخر بھارت ایسا کیوں کر رہا ہے؟‘بھارت کے سیز فائر کی خلاف ورزی کے الزام کو مسترد کرتے ہیں ‘بی ایس ایف کے سربراہ کو چیلنج کرتا ہوں کہ وہ ثابت کرے کہ پاکستان کی جانب سے سیز فائر کی خلاف ورزی کی گئی ہے۔وہ جمعہ کوورکنگ باو¿نڈری پر بھارتی جارحیت کے حوالے سے میڈیا کو بریفنگ دے رہے تھے۔ ڈی جی رینجرز پنجاب نے کہا کہ بھارت گزشتہ 2 سال سے ورکنگ باو¿نڈری پر سیز فائر کی خلاف ورزی کر رہا ہے لیکن یہ بات سمجھ میں نہیں آتی کہ آخر بھارت ایسا کیوں کر رہا ہے، ظاہری طور پر تو ایسا کرنے کی وجہ فوجی معلوم نہیں ہوتی، بھارتی جارحیت کی وجہ سیاسی ہو سکتی ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ پاکستان اور بھارت کے درمیان 193 کلو میٹر طویل ورکنگ باو¿نڈری ہے اور پاکستانی سرحدی علاقے میں کوئی ایک بھی ایسا گاو¿ں نہیں ہے جس پر بھارتی فوج کی جانب سے فائرنگ اور گولہ باری نہ کی گئی ہو۔ڈی جی رینجرز نے کہاکہ 2010 سے لیکر 2014 تک بھارتی فوج ورکنگ باو¿نڈری پر اب تک 3 لاکھ 48 ہزار سے زیادہ چھوٹے ہتھیاروں سے حملے کر چکا ہے جب کہ 31 ہزار سے زیادہ مارٹر گولے فائر کئے جا چکے ہیں۔ اتنے بڑے پیمانے پر چھوٹے اور بڑے ہتھیاروں کا استعمال تو باقاعدہ جنگ میں بھی نہیں کیا جاتا، بھارت ورکنگ باو¿نڈری پر سیز فائر کی خلاف ورزی نہیں کر رہا بلکہ چھوٹے پیمانے پر جنگ لڑ رہا ہے۔ انھوں نے بھارت کی جانب سے سیز فائر کی خلاف ورزی کے الزام کو یکسر مسترد کرتے ہوئے کہا کہ بھارتی سرحدی فورس (بی اس ایف) کے سربراہ کو چیلنج کرتا ہوں کہ وہ ثابت کہ پاکستان کی جانب سے سیز فائر کی خلاف ورزی کی گئی

ڈی جی رینرز پنجاب

مزید : صفحہ اول