چیئرمین نیب جسٹس(ر) جاوید اقبال کی تعیناتی لاہور ہائیکورٹ میں چیلنج

چیئرمین نیب جسٹس(ر) جاوید اقبال کی تعیناتی لاہور ہائیکورٹ میں چیلنج

  

لاہور(نامہ نگار)نئے تعینات ہونے والے چیئرمین نیب جسٹس (ر)جاوید اقبال کی تعیناتی کو لاہور ہائیکورٹ میں چیلنج کر دیا گیاہے۔یہ درخواست بیرسٹر سید محمد جاوید اقبال جعفری کی جانب سے دائر کی گئی ہے جس میں موقف اختیار کیا گیا ہے کہ جسٹس (ر)جاوید اقبال کی تعیناتی میرٹ پر نہیں کی گئی،آئین کے تحت کسی بھی آئینی عہدے اور خالی ہونے والی اسامی کو اوپن میرٹ کے ذریعے ٹیسٹ ،انٹرویو کی بنیاد پر ہی پر کیا جا سکتا ہے،عمر کی حد پوری کرنے والے ریٹائرڈ ججوں کواز سر نو نوکری دینا آئین سے متصادم ہے،نئے چیئرمین نیب کی تعیناتی حکومت اور اپوزیشن گٹھ جوڑ کا نتیجہ ہے،اخباری اشتہار کے ذریعے اسامی کی تشہیر کئے بغیر من پسند امیدوار کا تقرر ماورائے آئین اقدام ہے،چیئرمین نیب کی اسامی پر تعیناتی سے قبل اخبار میں اشتہار نہیں دیا گیا جو اوپن میرٹ کی خلاف ورزی ہے،اس طریقہ کار سے ہونے والی تعیناتی سے اہل امیدواروں میں بے چینی پائی جا رہی ہے جو کہ میرٹ کا قتل ہے،نئے تعینات ہونے والے چیئرمین نیب جسٹس ریٹائرڈ جاوید اقبال نے ایبٹ آباد کمیشن کو مرتب کرنے کے لئے غیر ضروری طور پر ڈیڑھ برس کا وقت صرف کیا جبکہ آج تک آج تک ایبٹ آباد کمیشن رپورٹ منظر عام پر لائے نہ ہی اس حوالے سے احکامات صادر کئے،درخواست میں استدعا کی گئی ہے کہ نئے چیئرمین نیب کی تعیناتی کو کالعدم قرار دیتے ہوئے ریٹائرڈ ججوں کی بجائے عمر پر پورا اترنے والے اہل امیدواروں کو اسامی مشتہر کر کے تعیناتی کا موقع فراہم کیا جائے۔

چیلنج

مزید :

صفحہ آخر -