ملتان ریلوے سٹیشن پر ناقص اشیاء خوردونوش کی مہنگے داموں فروخت

ملتان ریلوے سٹیشن پر ناقص اشیاء خوردونوش کی مہنگے داموں فروخت

  

ملتان(جنرل رپورٹر)کینٹ ریلوے سٹیشن پر غیر معیاری اشیائے خوردونوش کی فروخت عام ہوگئی منرل واٹر بھی مسافروں کو تھرڈ کلاس کمپنیوں کا پلایا جانے لگا اس ضمن میں ذرائع سے معلوم ہواہے کہ کینٹ سٹیشن پر سٹالوں کا ٹھیکہ انتہائی مہنگا ہونے کے (بقیہ نمبر28صفحہ12پر )

باعث وینڈرز کی جانب سے زیادہ قیمتوں کی وصولی اور غیر معیاری اشیاء کی فروخت جاری ہے سوہن حلوہ‘ سالن روٹی‘ کولڈڈرنک‘ چائے اور دیگر سٹالز 15سے20لاکھ روپے سالانہ کے لئے نیلام کئے جاتے ہیں اور پھر آئے روز ڈویژنل کمرشل آفیسر کی جانب سے چھاپوں کے باعث جرمانے بھی کئے جاتے ہیں لاکھوں روپے ٹھیکہ ادا کرنے والے وینڈرز کا روزانہ کرایہ5سے7ہزار روپے بنتاہے جبکہ انہیں ملازمین کا خرچہ اور بجلی کا بندوبست بھی کرنا پڑتا ہے جس کی وجہ سے 20والی ریگولر بوتل30روپے‘ چاول کی پلیٹ120سے150روپے‘ چائے25روپے اور سوہن حلوہ400روپے کلو فروخت ہورہا ہے جبکہ ان میں سے کوئی بھی چیز کھانے کے قابل بھی نہیں ہوتی ۔معلوم ہوا ہے کہ 400روپے کلو میں فروخت ہونے والا سوہن حلوہ انتہائی غیر معیاری اور صرف100سے120روپے کلو لاگت میں تیار ہوتا ہے ریلوے انتظامیہ کو چیک کروانے کے لئے اچھا حلوہ سامنے ہی رکھ دیا جاتا ہے جبکہ مسافروں کو فروخت کرنے کے لئے سٹال کے اندر مضر صحت حلوہ رکھا ہوتا ہے گزشتہ چند روز قبل بھی چھاپہ کے دوران بھاری مقدار میں مضر صحت سوہن حلوہ برآمد ہوا جس کی انکوائری کے دوران کمرشل برانچ کا ایک کلرک بھی معطل کیا جاچکا ہے سٹالوں پر فروخت ہونے والی چائے میں انتہائی مضر صحت پتی اور دودھ استعمال کیا جاتا ہے چاول ‘سالن روٹی اور دیگر اشیائے خوردونوش بھی غیر معیاری اور مضر صحت فروخت کی جاتی ہیں صرف 10روپے میں خریدی گئی منرل واٹر کی ہاف لیٹر بوتل کو وینڈرز 30سے40روپے میں فروخت کرتے ہیں اس بارے انتظامیہ نے کبھی بھی معروف کمپنی کا پانی منظور کرانے کے لئے سٹال ٹھیکیداروں کو نوٹس جاری نہ کئے ہیں۔ٹھیکیداروں کا کہنا ہے کہ مقابلہ بازی کی فضا نے منافع کے لالچ میں معیار کا خاتمہ اور مہنگائی میں اضافہ کردیا ہے جس کا براہ راست اثر مسافروں اور شہریوں پر ہوا ہے ریلوے انتظامیہ مسافروں کا اچھا معیاری کھانا اور دیگر اشیائے خوردونوش فراہم کرنا چاہتی ہے تو سٹالوں کے ٹھیکے کم کرکے معیاری اشیاء فروخت کروائے اور پھر بھی اگر کوئی وینڈر مضر صحت اشیاء فروخت کرتا پکڑا جائے تو اس کا ٹھیکہ ضبط کرکے سٹال خالی کروالیا جائے۔

مزید :

ملتان صفحہ آخر -