باچا خان مرکز میں ڈاکٹر سنگین مرحوم کی یاد میں تعزیتی ریفرنس کا انعقاد

باچا خان مرکز میں ڈاکٹر سنگین مرحوم کی یاد میں تعزیتی ریفرنس کا انعقاد

  

پشاور ( پ ر ) خدائی خدمت گار اور باچا خان کے سچے پیروکار ڈاکٹر محمدسنگین خان مرحوم کی وفات پر انہیں خراج عقیدت پیش کرنے کی غرض سے باچا خان مرکز میں ملگری ڈاکٹران کے زیر اہتمام تعزیتی ریفرنس کا انعقاد کیا گیا جس کی صدارت ملگری ڈاکٹران کے مرکزی صدر ڈاکٹر عادل روغانی نے کی جبکہ تقریب کے مہمان خصوصی جرمنی سے آئے ممتاز قوم پرست اور دانشور علی خان محسود تھے ، تقریب کے دوران مرحوم ڈاکٹر محمدسنگین خان کی خدائی خدمت گار تحریک کیلئے کی جانے والی خدمات کو خراج عقیدت پیش کیا گیا، باچا خان مرکز اور ٹرسٹ کے منتظم انجینئر اعجاز یوسفزئی ،ڈاکٹر غریب نواز،ڈاکٹر شمس ،نور الامین یوسفزئی ، ڈاکٹر سالاراور مرحوم کے بیٹے محمد عابد خان نے تقریب سے خطاب کیا اور مرحوم کی خدمات اور ان کی زندگی پر تفصیلی روشنی ڈالی ،مقررین نے اپنے خطاب میں کہا کہ مرحوم باچا خان بابا کے حقیقی پیروکار ، خدائی خدمت گار اور انسانیت کی خدمت کی ایک روشن مثال تھے ،انہوں نے کہا کہ مرحوم نے تمام زندگی انسانیت کی خدمت کیلئے وقف کر رکھی تھی اور آخر دم تک اس مشن پر قائم رہے اور ان کی وفات بلا شبہ پسماندگان کیلئے ناقابل تلافی نقصان ہے ، انہوں نے کہا کہ ایسی عظیم شخصیات صدیوں بعد پیدا ہوتی ہیں اور مرحوم کی وفات سے پیدا ہونے والا خلاء شاید ہی کبھی پُر ہو سکے گا ،انہوں نے کہا کہ مرحوم سنگین خان نہ صرف ایک ڈاکٹر تھے بلکہ حقیقی معنوں میں خدائی خدمت گار اور ایک منجھے ہوئے سیاسی رہنما تھے اور اس حوالے سے انہوں نے جو بھی خدمات انجام دیں وہ تاریخ کا انمٹ باب ہیں،انہوں نے کہا کہ ڈاکٹر سنگین خان مرحوم باچا خان بابا کے سچے پیروکار تھے اور ہمیشہ ان کے نقش قدم پر چلتے رہے جبکہ ہمیشہ دوسروں کے مفادات کو مقدم رکھا جس کی وجہ سے کئی بار انہیں مشکلات کا بھی سامنا کرنا پڑا ، مقررین نے کہا کہ ڈاکٹر محمد سنگین خان کی وفات سے خدائی خدمت گار تحریک اپنے ایک مخلص پیراکار سے محروم ہو گئی ہے تاہم ان کی خدمات اور قربانیاں رہتی دنیا تک یاد رکھی جائینگی۔مرحوم اپنی زندگی کے آخری ایام میں تورغر میں ڈسٹرکٹ ہیلتھ آفیسر کے عہدے پر تعینات تھے ۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -