کلبھوشن یادیو کیس: پاکستان نے سابق چیف جسٹس تصدق جیلانی کو عالمی عدالت انصاف میں ایڈہاک جج مقرر کردیا

کلبھوشن یادیو کیس: پاکستان نے سابق چیف جسٹس تصدق جیلانی کو عالمی عدالت انصاف ...
کلبھوشن یادیو کیس: پاکستان نے سابق چیف جسٹس تصدق جیلانی کو عالمی عدالت انصاف میں ایڈہاک جج مقرر کردیا

  

اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن)کلبھوشن یادیو کیس کے سلسلے میں پاکستان نے عالمی عدالت انصاف میں سابق چیف جسٹس تصدق جیلانی کو ایڈہاک جج مقرر کردیا ہے جبکہ حکومت پاکستان نے ایڈہاک جج کے تقرر کے حوالے سے عالمی عدالت انصاف کو بھی آگاہ کردیا ہے۔

دفتر خارجہ سے جاری بیان کے مطابق حکومت پاکستان نے کلبھوشن یادیو کیس کے لئے سابق چیف جسٹس تصدق جیلانی کو عالمی عدالت انصاف میں اپنا ایڈہاک جج مقرر کرتے ہوئے آئی سی جے کو مطلع کردیا ہے۔ عالمی عدالت انصاف ایڈہاک جج کے حوالے سے بھارت کو آگاہ کرے گی۔کلبھوشن یادیو کیس میں  بھارت کی جانب سے جسٹس بھنڈاری عالمی عدالت انصاف میں ایڈہاک جج کے طور پر مقرر ہیں جبکہ پاکستا ن کی جانب سے کوئی بھی جج تعینات نہیں کیا گیا، ترجمان دفتر خارجہ کا مزید کہنا تھا کہ عالمی عدالت دونوں ممالک کو ایڈہاک ججز کے تقرر کا حق دیتی ہے اور عالمی عدالت انصاف میں فریقین کی جانب سے مقرر کیے جانے والے ایڈہاک ججز کو وہی اختیارات حاصل ہوتے ہیں، جو عدالت کے دیگر ججز کے پاس ہوتے ہیں۔عالمی عدالت جسٹس ریٹائرڈ تصدق حسین جیلانی کے بطور ایڈہاک جج تقرری سے متعلق بھارت کو آگاہ کرے گی۔

واضح رہے کہ جسٹس ریٹائرڈ تصدق حسین جیلانی نے 31 جولائی 2004 سے 11 دسمبر 2013 تک سپریم کورٹ کے جج کے طور پر فرائض انجام دیئے،اس کے بعد وہ 5 جولائی 2014 تک چیف جسٹس آف پاکستان کے عہدے پر بھی فائز رہے۔

دو ہفتوں سے اپنی بہن کو کندھوں پر اٹھا کر چلنے والا روہنگیا بچہ بنگلہ دیش پہنچ گیا، داستان سن کر سب کی آنکھیں بھر آئیں

مزید :

قومی -اہم خبریں -