خواجہ برادران ، ڈار ،انوشہ ، منظور وٹو ، زہری اسماعیل شاہ ، کامران لاشاری ، سمیت اہم شخصیات کیخلاف تحقیقات کی منظوری

خواجہ برادران ، ڈار ،انوشہ ، منظور وٹو ، زہری اسماعیل شاہ ، کامران لاشاری ، ...

 اسلام آباد (آن لائن) نیب نے 9 انکوائریوں اور22 انوسٹی گیشنز کی منظوری دیدی ہے جبکہ چیئرمین نیب جسٹس (ر) جاوید اقبال نے کہاہے کہ میگا کرپشن کے مقدمات کو منطقی انجام تک پہنچانا نیب کی اولین ترجیح ہے،نیب افسران ملک سے بدعنوانی کے خاتمے کیلئے ’احتساب سب کیلئے‘پالیسی پر سختی سے عمل پیرا ہیں، نیب بدعنوانی کے خاتمہ کو نہ صرف اپنی قومی ذمہ داری سمجھتا ہے بلکہ اپنی بہترین صلاحیتوں کا استعمال کرتے ہوئے کرپشن فری پاکستان کیلئے بھر پور کاوشیں کررہا ہے ،افسران تمام شکایات کی جانچ پڑتال ، انکوائریوں اور انوسٹی گیشنز کو قانون، میرٹ، شفافیت اور ٹھوس شوائد کی بنیا د پر مقررہ وقت کے اندر منطقی انجام تک پہنچائیں۔قومی احتساب بیورو کے ایگزیکٹو بورڈ کا اجلاس قومی احتساب بیورو کے چیئرمین جسٹس جاوید اقبال کی زیرصدارت نیب ہیڈکوارٹر ز اسلام آبادمیں منعقد ہوا جس میں 9انکوائریوں کی منظوری دی گئی جن میں سابق وفاقی وزیربرائے ریلوے خواجہ سعدرفیق اوروزارت ریلوے کے افسران/اہلکاران، سابق وزیر اعلٰی بلوچستان نواب ثناء4 اللہ زہری، غلام محمد میمن ڈپٹی آڈیٹرجنرل،سابق وفاقی وزیر برائے صنعت وپیداوار منظور احمد وٹو،سابق صوبائی وزیر برائے صنعت حکومت سندھ منظور وسان،،سابق ایم این اے نواب علی وسان، محمد افتخار گیلانی سابق ایم این اے اور احتساب کمیشن کے پی کے افسران/اہلکاران شامل ہیں۔جبکہ22 انویسٹی گیشنزکی منظوری دی گئی جن میں سابق وفاقی وزیربرائے خزانہ اسحاق ڈار ،سابق وفاقی وزیربرائے آئی ٹی انوشہ رحمان،سابق چئیرمین پی ٹی اے ڈاکٹر اسماعیل شاہ،عبدالصمد،سابق ممبر پی ٹی اے،، طارق سلطان سابق ممبر پی ٹی اے،، رضوان احمدسابق ڈی جی پی ٹی اے ، امجد مصطفی ملک ، ڈائریکٹر پی ٹی اے،، وسیم طارق سابق ڈی جی اے پی ٹی اے اور میسرز وارد ٹیلی کام، خواجہ سعد رفیق ،خواجہ سلمان رفیق ، ندیم ضیاء4 ، قیصر امین بٹ پیراگان سٹی لاہور کی انتظامیہ، کامران لاشاری ، سابق چئیرمین سی ڈی اے ، کامران علی خان قریشی ، سابق ممبر فنانس ، شوکت علی مہمند سابق ممبر ایڈمن ، اسد منیر سابق ممبر اسٹییٹ ، مظہر حسین سابق ممبر انوائرنمنٹ ، معین الدین کاکا خیل سابق ممبر انجینئرنگ /پلاننگ سی ڈی اے ،غلام سرور سندھو، ڈی جی ،منیر جیلانی سابق ڈپٹی ڈائریکٹر لینڈ سی ڈی اے اور محمد حسین ایم ڈی ا?ف میسرز ڈی ٹی ایس ، کریک مرینہ پراجیکٹ کراچی ،راجہ محمد ذرات خان میسرز باون شاہ گروپ ا?ف کمپنیز ، سریر محمدسابق ڈی جی پی ڈی اے، محمود طارق سا بق جی ایم پی ڈی اے،،ڈاکٹر ایوب روزڈائیریکٹر جنرل ہیلتھ سروسز محکمہ صحت حکومت خیبرپختونخواہ ،،ڈاکٹر افسر انور پروگرام مینیجر آئی وی سی ،،ڈاکٹر جمال ناصر ڈائریکٹر ایڈمن محکمہ صحت حکومت خیبر پختونخواہ ،یو ای ٹی یونیورسٹی پشاورکے افسران/اہلکاران شامل ہیں۔ جن کی تفصیلات مناسب موقع پراور سپریم کورٹ کے حکم کے مطابق بہم پہنچائی جائیں گی۔نیب اس بات کو واضح کرنا چاہتا ہے کہ تمام انکوائریاں اورانویسٹی گیشنز مبینہ الزامات کی بنیاد پر شروع کی گئی ہیں جوکہ حتمی نہیں۔ نیب تمام متعلقہ افراد سے بھی قانو ن کے مطابق ان کا موقف معلوم کرے گا تاکہ انصاف کے تقاضے پورے کئے جا سکیں۔ قومی احتساب بیورو کے ایگزیکٹو بورڈ کے اجلاس میں بدعنوانی کی5 ریفرنس دائرکرنے کی منظوری دی گئی جن کی تفصیل درج ذیل ہے۔نیب کے ایگزیکٹو بورڈ اجلاس نے حافظ میاں محمدنعمان، سابق چئیرمین لاہور پارکنگ کمپنی لمیٹڈ،تاثیر احمد سابق چیف ایگزیکیوٹیولاہور پارکنگ کمپنی لمیٹڈ اورعثمان قیوم سابق چیف فائینینشل آفیسر/ ایم ڈی کے خلاف بدعنوانی کا ریفرنس دائرکرنے کی منظوری دی۔ ملزمان پر مبینہ طورپر اختیارات کا ناجائز استعمال کرتے ہوئے سرکاری فنڈز میں خرد بردکاالزام ہے۔جس سے قومی خزانے کو 80ملین روپے کانقصان پہنچا۔نیب کے ایگزیکٹو بورڈ اجلاس نے گل حسن چنا ،سابق سیکرٹری آر اینڈ ایس ، ای پی ، بورڈ آف ریوینیو حکومت سندھ گل حسن چنا,افتخار حیدر، سابق ایم ڈی کراچی واٹر اینڈ سیوریج بورڈ،سید عمر احمد،سرفراز مرچنٹ،شاہد رسول،سید محمد مجتبٰی،مرزا افضل بیگ ،اویس مرزا جمیل اور فرید ثریاکے خلاف بدعنوانی کا ریفرنس دائرکرنے کی منظوری دی۔ملزمان پرمبینہ طورپر اختیارات کا نا جائز استعمال کرتے ہوئے 769ایکڑ سرکاری زمین غیر قانونی طور پرمن پسندپرائیویٹ افراد کو الاٹ کرنے کاالزام ہے۔ جس سے قومی خزانے کو48کروڑ اور 40 لاکھ روپے کانقصان پہنچا۔ایگزیکٹو بورڈ اجلاس نے نعیم یحیٰ میرسابق مینیجنگ ڈائریکٹر پاکستان اسٹیٹ آئل، ڈاکٹر سید نظیر احمد زیدی سینئر جنرل مینجر پاکستان اسٹیٹ آئل، زولفقار علی جعفری سابق سینئیر جنرل مینیجر، اخترظہیرسابق جنر ل مینیجر،صابر حسین سابق ڈائریکٹر جنرل آئل،کامران افتخار لاری،چیف آپریٹنگ آفیسربائیکو پاکستان پیٹرولیم لیمٹڈ ،عامر عباسی چیف ایگزیکٹو آفیسر بائیکو پاکستان پیٹرولیم لیمٹڈاور قیصر جمال، پریذیڈنٹ ریفائنریز میسرز بائیکو پاکستان پیٹرولیم لمیٹڈ کے خلاف بدعنوانی کا ریفرنس دائرکرنے کی منظوری دی۔ملزمان پر مبینہ طور پراختیارات کا ناجائز استعمال کرتے ہوئے میسرز بائیکو آئل پاکستان لیمیٹڈ کے ساتھ تیل کی خرید و فروخت کاقواعد کے خلاف معاہدہ کرنے کاالزام ہے۔ جس سے قومی خزانے کو تقریباًً23 ارب روپے کانقصان پہنچا۔ایگزیکٹو بورڈ اجلاس نے عبدالحمید پٹھان، ایڈمینسٹریٹر تعلقہ گڑھی خیرو ڈسٹرکٹ جیکب آباد سندھ،، انجینئرٹی ایم اے تعلقہ گڑھی خیرو ڈسٹرکٹ جیکب آباد شہزادو کھوکھراور دیگر کے خلاف بدعنوانی کا ریفرنس دائرکرنے کی منظوری دی۔ملزمان پر مبینہ طوراختیارات کا ناجائز استعمال کرتے ہوئے سرکاری فنڈز میں خرد بردکاالزام ہے۔ جس سے قومی خزانے کو تقریباًً 20 کروڑ روپے کانقصان پہنچا۔ایگزیکٹو بورڈ اجلاس نے سابق چیف انجینئر سکھر بیراج لیفٹ بینک ریجن احمد جنید میمن، احمد جنید میمن سابق چیف انجینئر سکھر بیراج، سعید احمد سابق سپریٹنڈنٹ انجینئر ، امجد احمد سابق ایگزیکٹو انجینئر ، سید حسنین حیدر اسسٹنٹ ایگزیکٹو انجینئر ، شہزاد علی چیف ایگزیکٹو/ڈائریکٹرمیسرزسردار محمد اشرف ڈی بلوچ اینڈکمپنی کے خلاف بدعنوانی کا ریفرنس دائرکرنے کی منظوری دی۔ملزمان پر مبینہ طور پر شہید بے نظیر ا?باد ضلع کے محکمہ ا?بپاشی سندھ کی مختلف سرکاری اسکیموں کے فنڈز میں خرد برد کرنے کاالزام ہے۔ جس سے قومی خزانے کوتقریباًً 66 کروڑ روپے کانقصان پہنچا۔قومی احتساب بیورو کے ایگزیکٹو بورڈ کے اجلاس نے سابق وفاقی سیکرٹری کامرس حکومت پاکستان محمد شہزاد ارباب ،عمران احمد چوہدری،سابق سیکرٹری ایکسپورٹ پالیسی ایف بی آر ، آفیسرز / آفیشلز کسٹم کلیکٹوریٹ پشاور اور فاٹا کے کلیئرنگ ایجنٹس کے خلاف انکوائری بند کرتے ہوے وزارت کامرس حکومت پاکستان کو واپس بھجوانے کی منظوری دی۔چیئرمین نیب جسٹس جاوید اقبال نے کہا ہے کہ میگا کرپشن کے مقدمات کو منطقی انجام تک پہنچانا نیب کی اولین ترجیح ہے۔نیب کے افسران ملک سے بدعنوانی کے خاتمے کے لئے’‘اسلام آباد (آن لائن) نیب نے 9 انکوائریوں اور22 انوسٹی گیشنز کی منظوری دیدی ہے جبکہ چیئرمین نیب جسٹس (ر) جاوید اقبال نے کہاہے کہ میگا کرپشن کے مقدمات کو منطقی انجام تک پہنچانا نیب کی اولین ترجیح ہے،نیب افسران ملک سے بدعنوانی کے خاتمے کیلئے ’احتساب سب کیلئے‘پالیسی پر سختی سے عمل پیرا ہیں، نیب بدعنوانی کے خاتمہ کو نہ صرف اپنی قومی ذمہ داری سمجھتا ہے بلکہ اپنی بہترین صلاحیتوں کا استعمال کرتے ہوئے کرپشن فری پاکستان کیلئے بھر پور کاوشیں کررہا ہے ،افسران تمام شکایات کی جانچ پڑتال ، انکوائریوں اور انوسٹی گیشنز کو قانون، میرٹ، شفافیت اور ٹھوس شوائد کی بنیا د پر مقررہ وقت کے اندر منطقی انجام تک پہنچائیں۔قومی احتساب بیورو کے ایگزیکٹو بورڈ کا اجلاس قومی احتساب بیورو کے چیئرمین جسٹس جاوید اقبال کی زیرصدارت نیب ہیڈکوارٹر ز اسلام آبادمیں منعقد ہوا جس میں 9انکوائریوں کی منظوری دی گئی جن میں سابق وفاقی وزیربرائے ریلوے خواجہ سعدرفیق اوروزارت ریلوے کے افسران/اہلکاران، سابق وزیر اعلٰی بلوچستان نواب ثناء4 اللہ زہری، غلام محمد میمن ڈپٹی آڈیٹرجنرل،سابق وفاقی وزیر برائے صنعت وپیداوار منظور احمد وٹو،سابق صوبائی وزیر برائے صنعت حکومت سندھ منظور وسان،،سابق ایم این اے نواب علی وسان، محمد افتخار گیلانی سابق ایم این اے اور احتساب کمیشن کے پی کے افسران/اہلکاران شامل ہیں۔جبکہ22 انویسٹی گیشنزکی منظوری دی گئی جن میں سابق وفاقی وزیربرائے خزانہ اسحاق ڈار ،سابق وفاقی وزیربرائے آئی ٹی انوشہ رحمان،سابق چئیرمین پی ٹی اے ڈاکٹر اسماعیل شاہ،عبدالصمد،سابق ممبر پی ٹی اے،، طارق سلطان سابق ممبر پی ٹی اے،، رضوان احمدسابق ڈی جی پی ٹی اے ، امجد مصطفی ملک ، ڈائریکٹر پی ٹی اے،، وسیم طارق سابق ڈی جی اے پی ٹی اے اور میسرز وارد ٹیلی کام، خواجہ سعد رفیق ،خواجہ سلمان رفیق ، ندیم ضیاء4 ، قیصر امین بٹ پیراگان سٹی لاہور کی انتظامیہ، کامران لاشاری ، سابق چئیرمین سی ڈی اے ، کامران علی خان قریشی ، سابق ممبر فنانس ، شوکت علی مہمند سابق ممبر ایڈمن ، اسد منیر سابق ممبر اسٹییٹ ، مظہر حسین سابق ممبر انوائرنمنٹ ، معین الدین کاکا خیل سابق ممبر انجینئرنگ /پلاننگ سی ڈی اے ،غلام سرور سندھو، ڈی جی ،منیر جیلانی سابق ڈپٹی ڈائریکٹر لینڈ سی ڈی اے اور محمد حسین ایم ڈی ا?ف میسرز ڈی ٹی ایس ، کریک مرینہ پراجیکٹ کراچی ،راجہ محمد ذرات خان میسرز باون شاہ گروپ ا?ف کمپنیز ، سریر محمدسابق ڈی جی پی ڈی اے، محمود طارق سا بق جی ایم پی ڈی اے،،ڈاکٹر ایوب روزڈائیریکٹر جنرل ہیلتھ سروسز محکمہ صحت حکومت خیبرپختونخواہ ،،ڈاکٹر افسر انور پروگرام مینیجر آئی وی سی ،،ڈاکٹر جمال ناصر ڈائریکٹر ایڈمن محکمہ صحت حکومت خیبر پختونخواہ ،یو ای ٹی یونیورسٹی پشاورکے افسران/اہلکاران شامل ہیں۔ جن کی تفصیلات مناسب موقع پراور سپریم کورٹ کے حکم کے مطابق بہم پہنچائی جائیں گی۔نیب اس بات کو واضح کرنا چاہتا ہے کہ تمام انکوائریاں اورانویسٹی گیشنز مبینہ الزامات کی بنیاد پر شروع کی گئی ہیں جوکہ حتمی نہیں۔ نیب تمام متعلقہ افراد سے بھی قانو ن کے مطابق ان کا موقف معلوم کرے گا تاکہ انصاف کے تقاضے پورے کئے جا سکیں۔ قومی احتساب بیورو کے ایگزیکٹو بورڈ کے اجلاس میں بدعنوانی کی5 ریفرنس دائرکرنے کی منظوری دی گئی جن کی تفصیل درج ذیل ہے۔نیب کے ایگزیکٹو بورڈ اجلاس نے حافظ میاں محمدنعمان، سابق چئیرمین لاہور پارکنگ کمپنی لمیٹڈ،تاثیر احمد سابق چیف ایگزیکیوٹیولاہور پارکنگ کمپنی لمیٹڈ اورعثمان قیوم سابق چیف فائینینشل آفیسر/ ایم ڈی کے خلاف بدعنوانی کا ریفرنس دائرکرنے کی منظوری دی۔ ملزمان پر مبینہ طورپر اختیارات کا ناجائز استعمال کرتے ہوئے سرکاری فنڈز میں خرد بردکاالزام ہے۔جس سے قومی خزانے کو 80ملین روپے کانقصان پہنچا۔نیب کے ایگزیکٹو بورڈ اجلاس نے گل حسن چنا ،سابق سیکرٹری آر اینڈ ایس ، ای پی ، بورڈ آف ریوینیو حکومت سندھ گل حسن چنا,افتخار حیدر، سابق ایم ڈی کراچی واٹر اینڈ سیوریج بورڈ،سید عمر احمد،سرفراز مرچنٹ،شاہد رسول،سید محمد مجتبٰی،مرزا افضل بیگ ،اویس مرزا جمیل اور فرید ثریاکے خلاف بدعنوانی کا ریفرنس دائرکرنے کی منظوری دی۔ملزمان پرمبینہ طورپر اختیارات کا نا جائز استعمال کرتے ہوئے 769ایکڑ سرکاری زمین غیر قانونی طور پرمن پسندپرائیویٹ افراد کو الاٹ کرنے کاالزام ہے۔ جس سے قومی خزانے کو48کروڑ اور 40 لاکھ روپے کانقصان پہنچا۔ایگزیکٹو بورڈ اجلاس نے نعیم یحیٰ میرسابق مینیجنگ ڈائریکٹر پاکستان اسٹیٹ آئل، ڈاکٹر سید نظیر احمد زیدی سینئر جنرل مینجر پاکستان اسٹیٹ آئل، زولفقار علی جعفری سابق سینئیر جنرل مینیجر، اخترظہیرسابق جنر ل مینیجر،صابر حسین سابق ڈائریکٹر جنرل آئل،کامران افتخار لاری،چیف آپریٹنگ آفیسربائیکو پاکستان پیٹرولیم لیمٹڈ ،عامر عباسی چیف ایگزیکٹو آفیسر بائیکو پاکستان پیٹرولیم لیمٹڈاور قیصر جمال، پریذیڈنٹ ریفائنریز میسرز بائیکو پاکستان پیٹرولیم لمیٹڈ کے خلاف بدعنوانی کا ریفرنس دائرکرنے کی منظوری دی۔ملزمان پر مبینہ طور پراختیارات کا ناجائز استعمال کرتے ہوئے میسرز بائیکو آئل پاکستان لیمیٹڈ کے ساتھ تیل کی خرید و فروخت کاقواعد کے خلاف معاہدہ کرنے کاالزام ہے۔ جس سے قومی خزانے کو تقریباًً23 ارب روپے کانقصان پہنچا۔ایگزیکٹو بورڈ اجلاس نے عبدالحمید پٹھان، ایڈمینسٹریٹر تعلقہ گڑھی خیرو ڈسٹرکٹ جیکب آباد سندھ،، انجینئرٹی ایم اے تعلقہ گڑھی خیرو ڈسٹرکٹ جیکب آباد شہزادو کھوکھراور دیگر کے خلاف بدعنوانی کا ریفرنس دائرکرنے کی منظوری دی۔ملزمان پر مبینہ طوراختیارات کا ناجائز استعمال کرتے ہوئے سرکاری فنڈز میں خرد بردکاالزام ہے۔ جس سے قومی خزانے کو تقریباًً 20 کروڑ روپے کانقصان پہنچا۔ایگزیکٹو بورڈ اجلاس نے سابق چیف انجینئر سکھر بیراج لیفٹ بینک ریجن احمد جنید میمن، احمد جنید میمن سابق چیف انجینئر سکھر بیراج، سعید احمد سابق سپریٹنڈنٹ انجینئر ، امجد احمد سابق ایگزیکٹو انجینئر ، سید حسنین حیدر اسسٹنٹ ایگزیکٹو انجینئر ، شہزاد علی چیف ایگزیکٹو/ڈائریکٹرمیسرزسردار محمد اشرف ڈی بلوچ اینڈکمپنی کے خلاف بدعنوانی کا ریفرنس دائرکرنے کی منظوری دی۔ملزمان پر مبینہ طور پر شہید بے نظیر ا?باد ضلع کے محکمہ ا?بپاشی سندھ کی مختلف سرکاری اسکیموں کے فنڈز میں خرد برد کرنے کاالزام ہے۔ جس سے قومی خزانے کوتقریباًً 66 کروڑ روپے کانقصان پہنچا۔قومی احتساب بیورو کے ایگزیکٹو بورڈ کے اجلاس نے سابق وفاقی سیکرٹری کامرس حکومت پاکستان محمد شہزاد ارباب ،عمران احمد چوہدری،سابق سیکرٹری ایکسپورٹ پالیسی ایف بی آر ، آفیسرز / آفیشلز کسٹم کلیکٹوریٹ پشاور اور فاٹا کے کلیئرنگ ایجنٹس کے خلاف انکوائری بند کرتے ہوے وزارت کامرس حکومت پاکستان کو واپس بھجوانے کی منظوری دی۔چیئرمین نیب جسٹس جاوید اقبال نے کہا ہے کہ میگا کرپشن کے مقدمات کو منطقی انجام تک پہنچانا نیب کی اولین ترجیح ہے۔نیب کے افسران ملک سے بدعنوانی کے خاتمے کے لئے ۔۔’ احتساب سب کیلئے ‘‘ کی پالیسی پر سختی سے عمل پیرا ہیں۔ نیب بدعنوانی کے خاتمہ کو نہ صرف اپنی قومی ذمہ داری سمجھتا ہے بلکہ اپنی بہترین صلاحیتوں کا استعمال کرتے ہوئے کرپشن فری پاکستان کیلئے بھر پور کاوشیں کررہے ہیں۔انہوں نے نیب کے افسران کوہدایت کی کہ تمام شکایات کی جانچ پڑتال ، انکوائریوں اور انوسٹی گیشنز کو قانون، میرٹ، شفافیت اور ٹھوس شوائد کی بنیا د پر مقررہ وقت کے اندر منطقی انجام تک پہنچایا جائے۔ مقررہ وقت کے اندر شکایات کی جانچ پڑتال ، انکوائریوں اور انوسٹی گیشنز کومنطقی انجام تک نہ پہنچانے والے افسران کے خلاف قانون کے مطابق کارروائی عمل میں لائی جائیگی۔’’ احتساب سب کیلئے ‘‘ کی پالیسی پر سختی سے عمل پیرا ہیں۔ نیب بدعنوانی کے خاتمہ کو نہ صرف اپنی قومی ذمہ داری سمجھتا ہے بلکہ اپنی بہترین صلاحیتوں کا استعمال کرتے ہوئے کرپشن فری پاکستان کیلئے بھر پور کاوشیں کررہے ہیں۔انہوں نے نیب کے افسران کوہدایت کی کہ تمام شکایات کی جانچ پڑتال ، انکوائریوں اور انوسٹی گیشنز کو قانون، میرٹ، شفافیت اور ٹھوس شوائد کی بنیا د پر مقررہ وقت کے اندر منطقی انجام تک پہنچایا جائے۔ مقررہ وقت کے اندر شکایات کی جانچ پڑتال ، انکوائریوں اور انوسٹی گیشنز کومنطقی انجام تک نہ پہنچانے والے افسران کے خلاف قانون کے مطابق کارروائی عمل میں لائی جائیگی۔

نیب

اسلام آباد(آئی این پی )نیب کے ایگزیکٹو بورڈ نے وزیراعظم عمران خان کے مشیر برائے سول سروس ریفارمز محمد شہزاد ارباب ، سابق سیکرٹری ایکسپورٹ پالیسی عمران چوہدری اور کلیئرنگ ایجنٹس فاٹا کے خلاف کرپشن شکایت پر شروع کی گئی انکوائری بند کرنے کی منظوری دیدی ۔ بدھ کو نیب کے چیئرمین نیب جسٹس (ر) جاوید اقبال کی صدارت میں نیب بورڈ اجلاس میں محمد شہزاد ارباب کے خلاف سابق سیکرٹری تجارت کی حیثیت سے شروع کی گئی انکوائری بند کرنے کا کیس پیش کیا گیا ، نوازشریف دورحکومت میں شہزاد ارباب سیکرٹری تجارت تھے ، اس دوران نیب نے ایک شکایت پر اس وقت کے سیکرٹری تجارت محمد شہزاد ارباب ، سابق سیکرٹری ایکسپورٹ پا لیسی ایف بی آر عمران احمد چوہدری، کسٹم الیکٹوریٹ پشاور اور فاٹا کے کلیئرنگ ایجنٹس کے خلاف انکوائری شروع کی جسے نیب بورڈ میں شواہد کی عدم فراہمی پر بند کرنے کیلئے پیش کیا گیا اور نیب بورڈ نے اس انکوائری کو بند کرتے ہوئے کیس وزارت تجارت کو واپس بجھوا دیا ۔

انکوائریاں بند

مزید : صفحہ اول