اینوویٹو آئیڈیاز کے حامل طلبہ کیلئے دروازے کھلے ہیں‘ تنویرالیاس

اینوویٹو آئیڈیاز کے حامل طلبہ کیلئے دروازے کھلے ہیں‘ تنویرالیاس

  



ملتان (سپیشل رپورٹر) چیئر مین پنجاب بورڈ آف انوسٹمنٹ سردار تنویر الیاس نے کہاکہ کسی بھی قوم کا مستقبل نوجوان ہوتے ہیں اور اگر نوجوان ایسے اینوویٹو آئیڈیاز لا رہے ہیں تو یہ ہمارے سنہری مستقبل کی ضمانت ہیں۔ جس طرح اس جامعہ میں بزنس ماڈلز کے مقابلوں کا انعقاد کروایا جا رہا ہے اگر اسی طرح تمام تعلیمی اداروں میں اس طرح کے مقابلہ جات کروائے جائے تو بہت زیادہ فائدہ حاصل ہو گا۔ وہ (بقیہ نمبر33صفحہ12پر)

گزشتہ رز ایم این ایس زرعی یونیورسٹی اور ڈائس امریکہ کے تعاون سے منعقدہ دو روزہ DICE(Distinguished Innovations Collaboration and Entrepreneurship) کے آخری روز اختتامی تقریب سے خطاب کررہے تھے۔  انہوں نے مزید کہا کہ اینوویٹو آئیڈیاز کے حامل طلبہء کیلئے پنجاب بورڈ آف انوسٹمنٹ کے دروازے کھلے ہیں اور ہر ممکن مدد کیلئے ادارہ تیار ہے۔ انہوں نے کہاکہ پورے پاکستان کی 70فیصد ایگریکلچر پروڈیوس جنوبی پنجاب سے حاصل ہو رہی ہے اور یہ جامعہ مستقبل میں زراعت کی ترقی اور ملکی معشیت کی بہتری میں اہم کردار ادا کرے گی۔ علاوہ ازیں سردار تنویر الیاس نے وائس چانسلر جامعہ پروفیسر ڈاکٹر آصف علی کو شاندار بزنس ماڈلز کے مقابلے منعقد کروانے پر مبارک باد دی۔ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے ممبر قومی اسمبلی احمد حسین ڈیہڑ نے کہاکہ ان مقابلوں کے انعقاد سے طلبہء میں خود اعتمادی پیدا ہو گی آنے والا دور انٹر پری نیور شپ کا دور ہے جس میں چھوٹے کاروبار زیادہ اہمیت کے حامل ہونگے۔ بڑھتی آبادی اور محدود وسائل کے پیش نظر ہر طالب علم نوکری حاصل نہیں کر سکتا۔انہوں نے کہاکہ زرعی جامعہ کی جانب سے منعقد کئے گئے بزنس آئیڈیاز کے مقابلوں میں طلبہء کی جانب سے دئے گئے نئے آئیڈیاز بہت شاندار ہیں جس سے یہ بات ثابت ہوتی ہے ہمارے طلبہ ء میں بہت زیادہ ٹیلنٹ موجود ہے۔ اختتامی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے  وائس چانسلر پروفیسر ڈاکٹر آصف علی نے کہاکہ اس کانفرنس کا مقصد طلبہ ء کواپنا کاروبار خود شروع کرنے کیلئے اعتماد پیدا کرنا تھا تاکہ طلبہء کم لاگت سے اپنا کاروبار شروع کریں اور اپنے پاؤں مضبوط کریں۔ انہوں نے کہاکہ زرعی جامعہ میں طلباء و طالبات کو تعلیم کے ساتھ ساتھ انٹر پری نیورشپ کے کلچر کو فروغ دینے کیلئے اقدامات کئے جا رہے ہیں۔انہوں نے مزید کہاکہ مستقبل میں بھی زرعی جامعہ میں بزنس ماڈلز کے مقابلوں کا انعقاد کروایا جاتا رہے گا ۔تقریب سے خطاب کرتے ہوئے وائس چانسلر وومن یونیورسٹی ڈاکٹر عظمی قریشی نے کہاکہ زرعی جامعہ اور وومن یونیورسٹی نے مل کر اس پروگرام کا انعقاد کروایا جو کہ آئندہ بھی جاری رہے گا۔ دو روزہ ڈائس بزنس مقابلوں میں ایرڈ یونیورسٹی راولپنڈی، یونیورسٹی آف ویٹرنری سائنسز لاہور، BUITEMSکوئٹہ، یونیورسٹی آف کراچی، اسراء یونیورسٹی کراچی، جناح یونیورسٹی آف وومن کراچی، یونیورسٹی آف سرگودھا، زرعی یونیورسٹی فیصل آباد، بہاالدین زکریا یونیورسٹی، وومن یونیورسٹی آف ملتان،ایجوکیشن یونیورسٹی ملتان، یونیورسٹی آف انجینئرنگ ملتان سمیت 34سے زائد یونیورسٹیوں کے طلباء و طالبات کی جانب سے 170سے زائد بزنس ماڈلز پیش کئے گئے۔مقابلوں میں پہلی پوزیشن اور ایک لاکھ روپے کا انعام کراچی یونیورسٹی نے حاصل کیا۔ دوسری پوزیشن اور 50ہزار روپے کا انعام  BUITEMSکوئٹہ کی ٹیم نے حاصل کیا جبکہ تیسری پوزیشن اور 25ہزار روپے کا نقد انعام COMSATوہاڑی کی ٹیم نے اپنے نام کیا۔ اس کے علاوہ خصوصی انعامات ایم این ایس زرعی یونیورسٹی ملتان، جناح یونیورسٹی فار وومن کراچی، نور یونیورسٹی، زرعی یونیورسٹی فیصل آباد اور یونیورسٹی آف ویٹرنری اینڈ اینمل سائنسز لاہور کو دیا گیا۔ تقریب کے آخر میں مہمان خصوصی تنویر الیاس کو وائس چانسلر جامعہ پروفیسر ڈاکٹر آصف علی کی جانب سے تعریفی شیلڈ بھی دی گئی۔ اس موقع پر ممبر صوبائی اسمبلی جاوید اختر انصاری، ریٹائر آئی جی ریلوے پولیس سید ابن حسین ، ڈائریکٹر نایاب افتخار علی، چیئر مین ڈائس ڈاکٹر خورشید احمد ، نامور شاعر حسینہ معین سمیت طلباء و طالبات کی کثیر تعداد موجود تھی۔ علاوہ ازیں گزشتہ رات میوزیکل اینڈ کلچرل نائٹ کا بھی انعقاد کیا گیا جس میں طلباؤ طا لبات نے ثقافتی رقص اور پرفارمنسز پیش کیں۔ ایم این ایس زرعی یونیورسٹی میں جاری دو روزہ DICE(Distinguished Innovations Collaboration and Entrepreneurship)ڈائس مقابلوں کے دوران پلسز ویلیو ایڈیشن مقابلوں کا انعقاد کیا گیا جس کا مقصد دالوں سے بنائی جانے والی خوراک کے مقابلے اور ان کی اہمیت کو اجاگر کرنا تھا۔اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے وائس چانسلر جامعہ پروفیسر ڈاکٹر آصف علی نے دالوں سے بنائے جانے والی خوراک کے مقابلوں کے دوران کہا کہ ان مقابلوں کو کروانے کا مقصد دالوں سے بنے کھانے کی اہمیت کے بارے میں بتانا تھا۔ فاسٹ فوڈز کھانے سے بہتر ہے کہ دالوں سے بنے پراڈکٹ کھائے جائیں کیو نکہ یہ کیمیکل سے پاک ہو نگے۔ علاوہ ازیں انہوں نے مزید کہا کہ ان مقابلوں کے کروانے کا ایک اہم مقصد خواتین کو زیادہ سے زیادہ آگاہی دینا بھی ہے۔دالوں سے بنائی جانے والی خوراک کے مقابلوں 2کیٹگریز جن میں پروفیشنل اور نان پروفشنل شامل ہیں میں ملتان کی جامعات، کالجز، سکول، ریسٹورینٹس اور پرائیوٹ 40سے زائد ٹیموں نے شرکت کی۔ پروفیشنل مقابلوں میں پہلی پوزیشن رمادہ ہوٹل ملتان نے حاصل کی، دوسری پوزیشن اواری ایکسپریس اور کوتھم ملتان نے حاصل کی جبکہ تیسری پوزیشن چائنہ ٹاؤن ریسٹورنٹ نے حاصل کی۔ نان پروفیشنل مقابلوں میں پہلی پوزیشن یونیوسٹی آف سرگودھا کی ٹیم نے حاصل کی۔دوسری پوزیشن ایم این ایس زرعی یونیورسٹی ملتان کی ٹیم نے حاصل کی جبکہ تیسری پوزیشن رائز کالج فار گرلز نے حاصل کی۔

مزید : ملتان صفحہ آخر