مظفر گڑھ‘ 111 یونین کونسلوں میں کروڑوں کے فنڈز خورد برد کا انکشاف

  مظفر گڑھ‘ 111 یونین کونسلوں میں کروڑوں کے فنڈز خورد برد کا انکشاف

  



مظفر گڑھ‘چوک مکول(نامہ نگار) ضلع مظفرگڑھ کی 111یونین کونسلوں میں کروڑوں کے فنڈز خور دبرد کیے جانیکا انکشاف مالی سال 2017-18میں فی یونین کونسل 8سے 50لاکھ تک ترقیاتی فنڈز جاری ہوئے، چیئر مینوں نے بغیر اجلاس بلائے فرضی بلوں سے ہضم کر لئے سیکرٹریوں نے بھی ٹیکنیکل لوٹ مار میں خوب ہاتھ رنگے، وائس چیئر مین کاوجود خانہ پری تک محدود ڈی سی کمشنر سے صورتحال کا نوٹس لینے(بقیہ نمبر39صفحہ12پر)

کا مطالبہ۔بستی چنگوائی (نمائندہ خبریں) ضلع مظفرگڑھ پر چار تحصیلوں کے مختلف وائس چیئرمین نے نام شائع نہ کرنے کی شرط پر بتایا کہ مالی سال 2017-18میں ضلع کونسل مظفرگڑھ کی 111یونین کونسلوں کو فی یونین کو نسل 8لاکھ سے لیکر 50لاکھ تک ترقیاتی فنڈز جاری ہوئے۔ چیئرمین نے بغیر اجلاس بلائے آر سی سی پائپ، سلائی مشینوں اور نلکوں وغیرہ کے ٹینڈر اخبار میں شاء کرائے کروڑوں کے فنڈز فرضی بلوں کے ذریعے ہضم کر لئے گئے۔ بعض یونین کونسلوں کے چیئرمینوں نے دکھاوے کیلئے کم مقدار میں نلکے، سلائی مشینیں اور آرسی سی پائپ خرید کر کے من پسند لوگوں میں تقسیم کر دیئے جس کی ممبران کو ہوا تک نہیں لگنے دی گئی۔ سیکرٹری یونین کونسلز نے بھی ٹیکنیکل لوٹ مار میں خوب ہاتھ رنگے۔ یونین کونسلوں کی تزئین و آرائش کیلئے ایک لاکھ فی یونین کونسل رقم مہیا کی گئی جو عمارتوں کی برائے لیپاپوتی پر خرچ کر دی گئی۔ ایسی عمارتوں کی تزئین و آرائش پر خرچ ظاہر کر دیا گیا جن یونین کو نسلوں کے اپنے دفاتر کی عمارات کا وجود تک نہیں ہے کونسلروں کی اکثریت انگوٹھا چھاپ ہے۔ جبکہ وائس چیئرمینوں کا وجود خانہ پری کی حد تک ہے۔ کونسل کے ضروری امور کیلئے اجلاس تک بلانے کی زحمت گوارا نہیں کی جاتی۔ ذرائع کے مطابق نظام سے مسائل حل ہونے کے بجائے الٹا قومی خزانے پر بوجھ پڑا۔ ڈی سی ضلع مظفرگڑھ، کمشنر ڈیرہ اور ذمہ دار حکام صورتحال کا نوٹس لیکر فنڈز کی خورد برد میں ملوث افراد کے خلاف کاروائی اور یونین کونسلوں کے فنڈز کی شفافیت کو یقینی بنانے کیلئے اپنا کردار اداکریں۔

فنڈز خورد برد

مزید : ملتان صفحہ آخر