آزادی کشمیر کیلئے ریاست پاکستان اپنی ذمہ داریاں پوری کرے 

  آزادی کشمیر کیلئے ریاست پاکستان اپنی ذمہ داریاں پوری کرے 

  



اسلام آباد (این این آئی)یکجہتی کشمیر ملٹی پارٹی کانفرنس نے کہاہے کشمیرکی آزادی کےلئے ریاست پاکستان اپنی ذمہ داریاں پوری کرے ، فقہ اسلامی کے مطابق جس پر تمام اسلامی مکاتب فکر کا اتفاق ہے،کسی بھی اسلامی سرزمین پر کفار و مشرکین کا تسلط اور قبضہ حرام ہے،بلاد مسلمین کا دفاع اور ان کو کفار و مشرکین کے تسلط سے آزاد رکھنا اور آزاد کروانا اہل ایمان پر فرض ہے ، حکومت جدوجہد آزادی میں مسلمانان کشمیر کی مدد کرنے میں کوئی دقیقہ فروگذاشت نہ کرے،سفارتی سطح پرکردار ادا کیا جائے ،بیرونی ممالک میں قائم سفارتخانوں میں کشمیر ڈیسک کو فعال اور متحرک کرے،فلسطین کے مظلوم مسلمانوں سے بھی اپنی یکجہتی کا اظہار کرتے ہیں۔گزشتہ روز ملی یکجہتی کونسل کے زیر اہتمام اسلام آباد میں منعقدہ ”یکجہتی کشمیر ملٹی پارٹی کانفرنس“ میں شریک تمام جماعتوں ، اداروں اور شخصیات کے اتفاق رائے سے جاری کردہ اعلامیہ میں مزید کہا گیا کہ اگر حملے کے نشانے پر سرزمین اسلامی کے لوگ مدد کے محتاج ہوں تو سب سے پہلے دور کے مقابلے میں قریب ترین لوگوں پر سرزمین اسلامی کا دفاع کرنےوالے مجاہدین اور مسلمانوں کی مدد و نصرت فرض ہوتی ہے، اس لحاظ سے حریت و آزادی کی مقدس جنگ لڑنےوالے مسلما نا ن کشمیر کی مدد کرنا سب سے پہلے مسلمانان پاکستان اور حکومت پر فرض ہے ،جبکہ ہم مسلمانان کشمیر کی جدوجہد آزادی کو ہر ضروری و ہر ممکن مدد و نصرت کرنے کا عہد کرتے ہیں ، ریاست اورحکومت پاکستان بھی مسلمانان کشمیر کی مدد کرنے میں کوئی دقیقہ فروگذاشت نہ کرے، اسلامی فر یضہ کےساتھ ساتھ مقبوضہ کشمیر کو آزاد کرکے مملکت خداداد پاکستان میں شامل کرنے کی عظیم و مقدس جدوجہد کی مدد وحمایت کرنا ایسا قومی فرض ہے جس سے بطور انسان،مسلمان اور پاکستانی ہم اغماض نہیں برت سکتے ہیں۔اعلامیہ میں مطالبہ کیا گیا کہ آزادی کشمیر کےلئے ریاست پاکستا ن اپنی ذمہ داریاں پوری ،جموں و کشمیر جو پاکستان کی شہ رگ ہے اسے آزاد کروانے کےلئے عسکری اقدام کرے جبکہ پوری ریاست جموں و کشمیر کی آزادی اور پاکستان میں شمولیت تک آزاد جموں و کشمیراور گلگت بلتستان اور وہاں بسنے والے عوام کو پاکستان کے دیگر علاقوں اور لو گوں کے مساوی انتظامی آزادی اور شہری حقوق دئیے جائیں۔یہ امر باعث تشویش ہے کہ بھارت اپنے ظلم و تعدی پر مبنی موقف ہونے کے باوجود دنیا کو اپنا ہمنوا بنانے میں کامیاب دکھائی دیتا ہے،اسکا توڑ کرنے کیلئے حکومت بیرونی ممالک میں قائم سفارتخانوں میں کشمیر ڈیسک کو فعال و متحرک ، آزادکشمیر کو تحریک آزادی کشمیرکا حقیقی بیس کیمپ بنانے کےلئے عملی اقدامات جبکہ آزاد حکومت کو پوری ریاست کی نما ئند ہ حکومت کی حیثیت دیتے ہوئے عالمی سطح پر کشمیریوں کو خود اپنا مقدمہ پیش کرنے کا بھرپور موقع فراہم کرے ۔ہم کشمیر کی آزادی اور مظلوم کشمیریوں کو برہمن سامراج کے ظلم و استبداد سے نجات دلوانے کی ہر کوشش میں ہم ہراول دستے کا کردار ادا کریں گے۔اعلامیہ میں عالمی اداروں اور دنیا کے بیشتر ممالک کی مسئلہ کشمیر پر خاموشی پر اظہار تشویش کرتے ہوئے ان سے تقاضا کیا گیا وہ اپنی انسانی و اخلاقی ذمہ داری پوری کرنے کےلئے مظلوم کشمیریوں کی حمایت میں آواز بلند کریں، کوئی بھی قوم کسی بھی وقت دنیا میں مشکلات کا شکار ہو سکتی ہے اور اسے باقی انسانیت کی مدد کی ضرورت پڑ سکتی ہے۔ پاکستان بھر کی مذہبی و سیاسی جماعتیں ، ادارے اور سول سوسائٹی مسئلہ کشمیر پر بھر پو ر اتحاد و یکجہتی کا مظاہرہ کریں اور اس راستے میں کسی اختلاف کو حائل نہ ہونے دیں۔اعلامیہ میں مظلوم فلسطینیوں یکجہتی کا اظہار ، غاصب صہیو نی حکومت کی طرف سے ان پر روا رکھے جانےوالے مظالم ، مسلمانوں کےخلاف بھارتی و صہیونی گٹھ جوڑ کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہو ئے اعلان کیا گیا کہ قرآن و سنت کی تعلیمات کے مطابق ہم امت اسلامیہ کے اتحاد و وحدت پر ایمان رکھتے ہیں،کانفرنس سے کونسل کے صدر ڈا کٹر صاحبزا د ہ ابو الخیر محمد زبیر، امیر جماعت اسلامی سراج الحق، تحریک منہاج القرآن کے ناظم اعلی خرم نواز گنڈا پور، اسلامی تحریک کے سیکر یٹر ی جنرل علا مہ عارف حسین واحدی، تنظیم اسلامی کے سربراہ حافظ عاکف سعید، جمعیت اتحاد علمائے پاکستان کے صدر مولانا عبد الما لک، اتحاد علمائے پا کستان کے نائب صدر مولانا عبد الجلیل نقشبندی، متحدہ جمعیت اہل حدیث کے سربراہ علامہ ضیاءاللہ شاہ بخاری،جمعیت اہل حدیث کے سر بر اہ مولانا عبد الغفار روپڑی، جماعت اہل حرم کے سربراہ مفتی گلزار احمد نعیمی، ہدی الہادی کے صدر رضیت باللہ، کل جماعتی حریت کانفرنس کے چیئرمین سید فیض نقشبندی، تحریک جوانان پاکستان کے سربراہ عبد اللہ گل، جمعیت علمائے پاکستان کے سینئر نائب صدر صفدر گیلانی، علامہ زبیر احمد زہیر صدر جمہوری اتحاد، جماعت اسلامی کے نائب امیر پروفیسر محمد ابراہیم، حریت کانفرنس کے رہنما سید عبداللہ گیلانی، نور الباری اور دیگر نے بھی خطاب کیا۔

 یکجہتی کشمیر کانفرنس

مزید : صفحہ آخر


loading...