حاجی غلام علی کی قیادت میں بزنس مین پینل کے وفد کا سوات چیمبر کا دورہ

حاجی غلام علی کی قیادت میں بزنس مین پینل کے وفد کا سوات چیمبر کا دورہ

  

پشاور(سٹی رپورٹر)بزنس مین پینل پاکستان کے اعلی سطح وفد نے سارک چیمبر کے نائب صدر حاجی غلام علی کی سربراہی میں سوات چیمبر کا دورہ کیا وفد میں FPCCI  کے نائب صدر قیصر خان داؤد زئی سابقہ صوبائی وزیر فضل الہی  سرتاج احمد خان صوابی چیمبر کے صدر شیراز باچہ زائد شاہ فضل رحیم بابر خان اسرار خان شامل تھے  وفد نے سوات چیمبر کے نو منتخب صدر حاجی حمید الرحمن خان سینئر نائب صدر اکبر خان نائب صدر عثمان خان کو مبارک باد دی اس موقع پر سوات چیمبر کے سابقہ صدور نور محمد خان احمد خان عدنان خان ممتاز صنعت کار مجبیب خان  اور سوات کے بزنس کمیونٹی موجود تھی نو منتخب صدر نے وفد کو خوش آمدید کہا اور شکریہ ادا کیا سارک چیمبرآ ف کامرس کے نائب صدر حاجی غلام علی  کہاکہ اس وقت ملک میں صنعت وتجارت کو جو مشکلات درپیش ہے، آئے روز بجلی و سوئی گیس کی نہ صرف قیمتیں بڑھائی جاتی ہے بلکہ گیس لوڈشیڈنگ اور بعض محکموں کی جانب سے صنعت کاروں کو پریشان کیا جارہاہے۔ انہوں نے وفاقی اور صوبائی حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ کو ویڈ19 اور ملکی کی سیاسی صورتحال کے پیش نظرسٹاک ایکسچینج ہزار پوائنٹ گررہاہے، کارخانے بند ہورہے ہیں اور اس حالات میں محکموں کی جانب سے صنعت کاروں کو پریشان کرنے کی بجائے ان کی سرپرستی کرکے سہولتیں دیں۔ انہوں نے کہاکہ ایف پی سی سی آئی کے صدر میاں انجم نثار وکابینہ نے کوویڈ 19کے باوجود شاندار خدمات انجام دی اور ایف پی سی سی آئی کی قیادت سنبھالتے وقت14 فیصد مارک اپ کیخلاف نہ صرف جنگ کا اعلان کیا بلکہ عملی جدوجہد شروع کی اور حکومت کو یہ باور کرایا کہ 14 فیصد شرح سود سے پاکستان کے اندر انڈسٹری کا چلنا تو درکنار ہے اور انڈسٹری کا پہیہ بھی نہیں گھوم سکتا ہمارے ارد گرد ملکوں میں شرح سود کم ہے اور اسی وجہ سے ہماری انڈسٹری نے تر قی نہیں کرسکتی جس پر ہم صدر میاں انجم نثار اور بزنس مین پینل کے لیڈرشپ کو خراج تحسین پیش کرتے ہے کہ آج مارک اپ ریٹ 14 فیصد سے کم ہوکر7 فیصد پرآگیاہے، بزنس مین پینل اور ایف پی سی سی آئی شرح سود مزید کم کرنے کی کوشش کرے گی اور مارک ریٹ میں کمی سے صنعت وتجارت ترقی کرے گا لیکن اس کے لئے چیمبرز اور ایسوسی ایشنز کا تعاون ضروری ہے، ماضی میں جو لوگ ایف پی سی سی آئی کے فنڈ ز سے کروڑ روپے ہوٹلنگ اور یبرون ملکوں کے دوروں پر خرچ کرتے تھے، اسی سال ایف پی سی سی آئی کے صدر وکابینہ نے تاریخ رقم کی اورمیاں انجم نثار و کابینہ نے ایک روپیہ بھی ایف پی سی سی آئی کے فنڈزسے خرچ نہیں کی، ایف پی سی سی آئی نے کوویڈ 19 میں بھی حصہ ڈالا اورپاکستان بھر کے چیمبرز اور ایسویسی ایشنز کے سالانہ فیسوں میں 20 فیصد کمی کی اور انشائاللہ اگلے سال مزیدکمی کرینگے۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -