یہ کس کے آنسوؤں نے اس نقش کو مٹایا| فہمیدہ ریاض |

یہ کس کے آنسوؤں نے اس نقش کو مٹایا| فہمیدہ ریاض |
یہ کس کے آنسوؤں نے اس نقش کو مٹایا| فہمیدہ ریاض |

  

یہ کس کے آنسوؤں نے اس نقش کو مٹایا

جو میرے لوحِ دل پر تو نے کبھی بنایا

تھا دل جب اُس پہ مائل تھا شوق سخت مشکل

ترغیب نے اُسے بھی آسان کر دکھایا

اک گردِ باد میں تو اوجھل ہوا نظر سے

اِس دشتِ بے ثمر سے جز خاک کچھ نہ پایا

اے چوبِ خشکِ صحرا وہ بادِ شوق کیا تھی

میری طرح برہنہ جس نے تجھے بنایا

پھر ہم ہیں ، نیم شب ہے، اندیشٔۂ عبث ہے

وہ واہمہ کہ جس سے تیرا یقین آیا

شاعرہ: فہمیدہ ریاض

Yeh   Kiss   K   Aansuon   Nay   Iss   Naqsh   Ko   Mitaaya

Jo    Meray   Laoh-e-Dil   Par   Tu   Nay    Kabhi   Banaaya

Tha   Dil    Jab    Uss    Pe    Maayal    Tha    Shoq    Sakht   Mushkil

Targheeb   Nay    Usay    Bhi    Aasaan    Kar   Dikhaaya

Ik    Gard-e-Baad    Men    Tu     Ojhal    Hua     Nazar   Say

Iss    Dasht-e-Be    Samar    Say   Juzz    Khaak    Kuch   Na   Paaya

Ay    Chob-e-Khushk     Sehra    Wo    Baad -e-Shoq    Kaya   Thi

Meri   Tarah    Barehna    Jiss   Nay   Tujhay   Banaaya

Phir   Ham   Hen   ,   Neem   Shab    Hay  ,   Andeshaa-e-Ajab   Hay

Wo    Waahima    Keh    Jiss    Say    Tera    Yaqeen    Aaya

Poetess: Fahmida   Riaz

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -