نہ تم میرے نہ دل میرا نہ جانِ ناتواں میری| فیاض ہاشمی |

نہ تم میرے نہ دل میرا نہ جانِ ناتواں میری| فیاض ہاشمی |
نہ تم میرے نہ دل میرا نہ جانِ ناتواں میری| فیاض ہاشمی |

  

نہ تم میرے نہ دل میرا نہ جانِ ناتواں میری

تصور میں بھی آ سکتیں نہیں مجبوریاں میری

نہ تم آئے نہ چین آیا نہ موت آئی شب وعدہ

دلِ مضطر تھا میں تھا اور تھیں بے تابیاں میری

عبث نادانیوں پر آپ اپنی ناز کرتے ہیں

ابھی دیکھی کہاں ہیں آپ نے نادانیاں میری

یہ منزل یہ حسیں منزل جوانی نام ہے جس کا

یہاں سے اور آگے بڑھنا یہ عمرِ رواں میری

شاعر: فیاض ہاشمی

Na    Tum    Meray    Na    Dil    Mera   Na    Jaan-e-Na   Tawaan    Meri

Tasawwar   Men    Bhi    Aa   Sakti   Nahen   Majbooriyaan    Meri

 Na   Tum   Aaey   Na    Chain   Aaya   Na   Maot    Aai   Shab-e-Waada

Dil-e-Muztar   Tha   ,   Main   Tha    Aor    Theen    Betaabiyaan    Meri

 Abas    Nadaaniyon     Par    Aap    Apni    Naaz    Kartay   Hen

Abhi    Dekhi     Kahan    Hen    Aap    Nay    Nadaaniyaan   Hamaari

Yeh    Manzill    Yeh    Haseen    Manzill    Jawaani    Naam    Hay    Jiss   Ka

Yahaan    Say    Aor    Aagay    Barhhna    Yeh   Umr-e-Rawaan   Meri

 

Poet:Fayyaz    Hashmi 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -