مستوں کے جو اصول ہیں اُن کو نبھا کے پی| فیاض ہاشمی |

 مستوں کے جو اصول ہیں اُن کو نبھا کے پی| فیاض ہاشمی |

  

 مستوں کے جو اصول ہیں اُن کو نبھا کے پی

اک بوند بھی نہ کل کے لیے تو   بچا کے پی

کیوں کر رہا ہے کالی گھٹاؤں کے انتظار

ان کی سیاہ زُلف پہ نظریں جما کے پی

چوری خدا سے جب نہیں بندوں سے کس لیے

چھپنے میں کچھ مزا نہیں سب کو دکھا کے پی

فیاضؔ تو نیا ہے نہ پی بات مان لے

کڑوی بہت شراب ہے پانی ملا کے پی

شاعر:فیاض ہاشمی

Maston   K    Jo    Usool    Hen    Un    Ko   Nibhaa   K   Pi

Ik   Boond   Bhi   Na    Kall   K   Liay   Tu   Bachaa   K   Pi

 Kiun    Kar    Raha    Hay    KalI   Ghataaon    K    Intazaar

Un   Ki    Siyaah    Zulfon    Pe    Nazren    Jamaa   K   Pi

 Chori    Khuda   Say   Jab   Nahen    Bandon    Say    Kiss   Liay

Chhupnay   Men   Kuchh    Nahen   Sab   Ko   Dikhaa   K   Pi

 FAYYAZ   Tu    Naya   Hay   Na    Pi   Baat   Maan

Karrvi    Bahut    Sharaab    Hay    Paani   Milaa   K   Pi

 Poet: Fayyaz     Hashmi

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -