یہ داغ داغ اُجالا یہ شب گزیدہ سحر | فیض احمد فیض |

یہ داغ داغ اُجالا یہ شب گزیدہ سحر | فیض احمد فیض |
یہ داغ داغ اُجالا یہ شب گزیدہ سحر | فیض احمد فیض |

  

صبحِ آزادی

یہ داغ داغ اُجالا یہ شب گزیدہ سحر

وہ انتظار تھا جس کا یہ وہ سحر تو نہیں

یہ وہ سحر تو نہیں جس کی آرزو لے کر

چلے تھے یار کہ مل جائے گی کہیں نہ کہیں

فلک کے دشت میں تاروں کی آخری منزل

کہیں تو ہوگا شبِ سست موج کا ساحل

کہیں تو جاکے رکے گا سفینہِ غمِِ دل

جواں لہو کی پر اسرار شاہراہوں سے

چلے جو یار تو دامن پہ کتنے ہاتھ پڑے

دیارِ حسن کی بے صبر خواب گاہوں سے

پکارتی رہیں بانہیں بدن بلاتے ہیں

بہت عزیز تھی لیکن رخِ سحر کی لگن

بہت قریں تھا حسینانِ نور کا دامن

سبک سبک تھی تمنا دبی دبی تھی تھکن

سنا ہے ہو بھی چکا ہے فراقِ ظلمت و نور

سنا ہے ہو بھی چکا ہے وصالِ منزل و گام

بدل چکا ہے بہت اہلِ درد کا دستور

نشاطِ وصل حلال و عذابِ ہجر حرام

جگر کی آگ نظر کی امنگ دل کی جلن

کسی پہ چارۂ ہجراں کا کچھ اثر ہی نہیں

کہاں سے آئی نگارِ صبا کدھر کو گئی

ابھی چراغِ سرِ رہ کو کچھ خبر ہی نہیں

ابھی گرانیٔ شب میں کمی نہیں آئی

نجاتِ دیدہ و دل کی گھڑی نہیں آئی

چلے چلو کہ وہ منزل ابھی نہیں آئی

شاعر: فیض احمدفیض

(مجموعۂ کلام:دستِ صبا؛سالِ اشاعت،1978 )

Subh-e-Aazaadi

Yeh   Daagh   Daagh   Ujaala   Yeh   Shab    Gazeeda   Sahar

Wo   Intzaar   Tha   Jiss   Ka  Yeh   Wo   Sahar   To   Nahen

Yeh   Wo   Sahar   To   Nahen   Jiss    Ki    Aarzu    Lay   Kar 

Chalay   Thay    Keh     Mill   Jaaey   Gi    Kahen   Na    Kahen

Falak   K   Dasht   Men   Taaron   Ki   Aakhri  Manzill 

Kahen   To   Ho   Ga   Shab-e-Sust   Maoj   Ka   Saahil

Kahen   To   Ja   K   Rukay   Ga   Safeena-e-Gham-e-Dil

Jawaan    Lahu    Ki    Purasraar    Shaahraahon   Say

Chalay    Jo   Yaar    To    Daaman    Bhi    Kitnay    Haath   Parray

Dayaar -e-Husn    Ki    Be    Sabr   Khaab   Gaahon  Say

Pukaarti   Rahen    Baahen  ,   Badan    Bulaatay   Rahay

Bahut    Azeez    Thi    Lekin    Rukh-e-Sahar    Ki   Lagan

Bahut    Qareen    Tha    Haseenaan-e-Noor    Ka   Daaman

Subuk    Subuk   Thi   Tamanna    Dabi    Dabi   Thi   Thakan

Suna    Hay   Ho    Bhi   Chuka   Hay   Firaaq-e-Zulmat-o-Noor

Suna    Hay    Ho   Bhi    Chuka    Hay   Visaal-e-Manzill -o-Gaam

Badal    Chuka    Hay   Bahut    Ehl-e-Dard    Ka   Dastoor

Nishaat-e-Wasl    Halaal-o-Azaab-e-Hijr   Haraam

Jigar    Ki    Aag   ,   Nazar    Ki   Umang   ,   Dil    Ki    Jalan

Kisi    Pe    Chaara-e-Hijraan    Ka    Kuchh    Asar    Hi   Nahen

Kahan    Say    Aai    Nigaar-e-Sabaa    Kidhar    Ko   Gai

Abhi    Charaagh-e-Sar-e-Reh    Ko    Kuchh    Khabar   Nahen

Abhi    Giraani-e-Shab    Men    Kami    Nahen   Aai

Nijaat-e-Deeda-o-Dil    Ki    Gharri    Nahen    Aai

Chalay    Chalo    Keh    Wo    Manzill    Abhi    Nahen    Aai

Poet: Faiz    Ahmad    Faiz

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -