ہم پروَرشِ لَوح و قلم کرتے رہیں گے| فیض احمد فیض |

ہم پروَرشِ لَوح و قلم کرتے رہیں گے| فیض احمد فیض |
ہم پروَرشِ لَوح و قلم کرتے رہیں گے| فیض احمد فیض |

  

لوح و قلم

ہم پروَرشِ لَوح و قلم کرتے رہیں گے

جو دِل پہ گُزرتی ہے رقم کرتے رہیں گے

اسبابِ غمِ عِشق بہم کرتے رہیں گے

وِیرانیِ دَوراں پہ کَرَم کرتے رہیں گے

ہاں تلخیِ ایام ابھی اور بڑھے گی

ہاں اہلِ ستم، مشقِ سِتم کرتے رہیں گے

منظور یہ تلخی، یہ سِتم ہم کو گوارا

دَم ہے تو مداوائے الم کرتے رہیں گے

مے خانہ سلامت ہے تو ہم سُرخیِ مے سے

تزئینِ دَرو بامِ حَرَم کرتے رہیں گے

باقی ہے لہُو دِل میں تو ہر اشک سے پیدا

رنگِ لب و رُخسارِ صنم کرتے رہیں گے

اِک طرزِ تغافل ہے سو وہ اُن کو مُبارک

اِک عرضِ تمنا ہے سو ہم کرتے رہیں گے

فیض احمد فیض

(مجموعۂ کلام:دستِ صبا؛سالِ اشاعت،1978 )

Laoh-o-Qalam

Ham   Parwarish-e-Lah-o-Qalam   Kartay   Rahen   Gay

Jo    Dil   Pe   Guzri   Hay   Raqam   Kartay   Rahen   Gay

Asbaab-e-Gham-e-Eshq   Baham   Kartay   Rahen   Gay

Veeraani-e-Doraan    Pe    Karam   Kartay   Rahen   Gay

Haan   Talkhi-e-Ayyaam    Abhi    Aor    Barrhay   Gi

Haan   Ehl-e-Sitam   ,   Mashk-e-Sitam   Kartay   Rahen   Gay

Dam    Hay   To   Madaawa-e-Alam   Kartay   Rahen   Gay

May    Khaana    Salaamat   Hay  To    Ham   Surkhi-e-May   Say

Tazeen -e-Dar-o-Baam-e-Haram   Kartay   Rahen   Gay

Baaqi    Hay    Lahu    Dil   Men   To   Har   Ashk   Say   Paida

Rang-e-Lab-o-Rukhsaar-e-Sanam   Kartay   Rahen   Gay

Ik    Tarz-e-Taghaaful    Hay    So    Wo   Un    Ko   Mubarak

Ik    Arz-e-Tamanna    Hay   So    Wo    Ham   Kartay   Rahen   Gay

Poet: Faiz   Ahmad   Faiz

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -