تمہاری یاد کے جب زخم بھرنے لگتے ہیں| فیض احمد فیض |

تمہاری یاد کے جب زخم بھرنے لگتے ہیں| فیض احمد فیض |
تمہاری یاد کے جب زخم بھرنے لگتے ہیں| فیض احمد فیض |

  

تمہاری یاد کے جب زخم بھرنے لگتے ہیں

کسی بہانے تمہیں یاد کرنے لگتے ہیں

حدیثِ یار کے عنواں نکھرنے لگتے ہیں

تو ہر حریم میں گیسو سنورنے لگتے ہیں

ہر اجنبی ہمیں محرم دکھائی دیتا ہے

جو اب بھی تیری گلی سے گزرنے لگتے ہیں

صبا سے کرتے ہیں غربت نصیب ذکرِ وطن

تو چشمِ صبح میں آنسو اُبھرنے لگتے ہیں

وہ جب بھی کرتے ہیں اس نطق و لب کی بخیہ گری

فضا میں اور بھی نغمے بکھرنے لگتے ہیں

درِ قفس پہ اندھیرے کی مہر لگتی ہے

تو فیض دل میں ستارے اترنے لگتے ہیں

شاعر: فیض احمد ٖفیض

(مجموعۂ کلام:دستِ صبا؛سالِ اشاعت،1978 )

Tumhaari   Yaad    K   Jab    Zakhm   Bharnay    Lagtay   Hen

Kisi   Bahaanay   Tumhen   Yaad   Karnay    Lagtay   Hen

Hadees-e-Yaar    K   Unwaan   Nikharnay    Lagtay   Hen

To   Har    Hareem   Men   Gaisu    Sanwarnay    Lagtay   Hen

Har    Ajnabi    Hamen    Mahram    Dikhaai   Deta  Hay

Jo   Ab    Bhi   Teri    Gali   Say    Guznay    Lagtay   Hen

Sabaa    Say    Kartay    Hen    Ghurbat    Naseeb   Zikr-e-Watan

To     Chash-e-Subh    Men    Aansu   Ubharnay    Lagtay   Hen

Wo    Jab     Bhi    Kartay    Hen    Iss   Natq -o-Lab    Ki    Bakhiya   Gari

Faza    Men    Aor   Bhi    Naghmay    Bikharnay    Lagtay   Hen

Dar-e-Qafass    Pe    Andhairay    Ki    Mohr    Lagti   Hay

To    FAIZ    Dil   Men   Sitaaray Utarnay    Lagtay   Hen

Poet: Faiz   Ahmad   Faiz

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -