پریشاں رات ساری ہے، ستارو تم تو سو جاؤ| قتیل شفائی |

پریشاں رات ساری ہے، ستارو تم تو سو جاؤ| قتیل شفائی |
پریشاں رات ساری ہے، ستارو تم تو سو جاؤ| قتیل شفائی |

  

پریشاں رات ساری ہے، ستارو تم تو سو جاؤ

سکوتِ مرگ طاری ہے، ستارو تم تو سو جاؤ

ہنسو اور ہنستے ہنستے ڈوبتے جاؤ خلاؤں میں

ہمیں پر رات بھاری ہے، ستارو تم تو سو جاؤ

ہمیں تو آج کی شب پو پھٹے تک جاگنا ہوگا

یہی قسمت ہماری ہے، ستارو تم تو سو جاؤ

تمہیں کیا! آج بھی کوئی اگر ملنے نہیں آیا

یہ بازی ہم نے ہاری ہے، ستارو تم تو سو جاؤ

کہے جاتے ہو رو رو کر ہمارا حال دنیا سے

یہ کیسی رازداری ہے، ستارو تم تو سو جاؤ

ہمیں بھی نیند آجائے گی ہم بھی سو ہی جائیں گے

ابھی کچھ بے قراری ہے، ستارو تم تو سو جاؤ 

شاعر:قتیل شفائی

 (مجموعۂ کلام:گجر؛سالِ اشاعت،1949 )

Pareshaan    Raat   Saari    Hay,   Sitaaro    Tum   To   So   Jaao

Sukoot-e-Marg   Taari    Hay,   Sitaaro    Tum   To   So   Jaao

Hanso   Aor    Hanstay  Hanstay   Doobtay    Jaao   Khalaaon    Men

Ham    Hi    Par   Raat   Bhaari   Hay,   Sitaaro    Tum   To   So   Jaao

Hamen   To    Aaj   Ki    Shab   Pao    Phutnay   Tak    Jaagna   Ho   Ga

Yahi    Qismat    Hamaari   Hay,   Sitaaro    Tum   To   So   Jaao

Tumhen    Kaya   Aaj    Bhi   Koi    Agar    Milnay   Nahen   Aaya

Yeh    Baazi    Ham   Nay    Haari   Hay,   Sitaaro    Tum   To   So   Jaao

Kahay    Jaatay   Ho    Ro   Ro   Kar   Hamaara   Haal   Dunya   Say

Yeh    Kaisi    Raazdaari   Hay,   Sitaaro    Tum   To   So   Jaao

Hamen    Bhi    Neend    Aa    Jaaey   Gi    Ham    Bhi    So   Hi   Jaaen   Gay

Abhi    Kuchh    Be   Qaraari   Hay,   Sitaaro    Tum   To   So   Jaao

Poet:Qateel   Shifai

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -